Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

(فرمان خدا - (فرشتوں سے



اٹھو ! مری دنيا کے غريبوں کو جگا دو
کاخ امرا کے در و ديوار ہلا دو
گرماؤ غلاموں کا لہو سوز يقيں سے
کنجشک فرومايہ کو شاہيں سے لڑا دو
سلطانی جمہور کا آتا ہے زمانہ
جو نقش کہن تم کو نظر آئے ، مٹا دو
جس کھيت سے دہقاں کو ميسر نہيں روزی
اس کھيت کے ہر خوشہ گندم کو جلا دو
کيوں خالق و مخلوق ميں حائل رہيں پردے
پيران کليسا کو کليسا سے اٹھا دو
حق را بسجودے ، صنماں را بطوافے
بہتر ہے چراغ حرم و دير بجھا دو
ميں ناخوش و بيزار ہوں مرمر کی سلوں سے
ميرے ليے مٹی کا حرم اور بنا دو
تہذيب نوی کارگہ شيشہ گراں ہے
آداب جنوں شاعر مشرق کو سکھا دو

 


Translitration


Farman-e-Khuda

(Farishton Se)

Utho! Meri Dunya Ke Ghareebo Ko Jaga Do
Kakh-e-Umra Ke Dar-o-Diwar Hila Do
Garmao Ghulamon Ka Lahoo Souz-e-Yaqeen Se
Kunjishik-e-Firomaya Ko Shaheen Se Lara Do
Sultani Jamhoor Ka Ata Hai Zamana
Jo Naqsh-e-Kuhan Tum Ko Nazar Aye, Mita Do
Jis Khait Se Dehqan Ko Mayassar Nahin Rozi
Uss Khait Ke Har Khausha-e-Gandum Ko Jala Do
Kyun Khaliq-o-Makhlooq  Mein Hayal Rahain Parde
Peeran-e-Kalisa Ko Kalisa Se Utha Do
Haq Ra Ba-Sujoode, Sanamaan Ra Ba-Tawafe
Behter Hai Charagh-e-Haram-o-Dair Bujha Do
Main Na Khush-o-Bezar Hun Mar Mar Ki Silon Se
Mere Liye Mitti Ka Haram Aur Bana Do
Tehzeeb-e-Nawi Kargah-e-Shisha Garan Hai
Adaab-e-Junoon Shayar-e-Mashriq Ko Sikha Do!




IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP