Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

سما سکتا نہيں پہنائے فطرت ميں مرا سودا

 

 

ا علےحضرتشہيد اميرالمومنين نادر شاہ غازی رحمتہ اللہ عليہ کے لطف و کرم سے نومبر1933ء ميںمصنف کو حکيم سنائی غزنوی رحمتہ اللہ عليہ کے مزار مقدس کی زيارت نصيب ہوئی - يہ چندافکار پريشاں جن ميں حکيم ہی کے ايک مشہور قصيدے کی پيروی کی گئی ہے ، اس روز سعيدکی يادگار ميں سپرد قلم کيے گئے-:


'ما از پے سنائی و عطار آمديم'


~~~~0~~~~

سما سکتا نہيں پہنائے فطرت ميں مرا سودا
غلط تھا اے جنوں شايد ترا اندازہ صحرا
خودی سے اس طلسم رنگ و بو کو توڑ سکتے ہيں
يہی توحيد تھی جس کو نہ تو سمجھا نہ ميں سمجھا
نگہ پيدا کر اے غافل تجلی عين فطرت ہے
کہ اپنی موج سے بيگانہ رہ سکتا نہيں دريا
رقابت علم و عرفاں ميں غلط بينی ہے منبر کی
کہ وہ حلاج کی سولی کو سمجھا ہے رقيب اپنا
خدا کے پاک بندوں کو حکومت ميں ، غلامی ميں
زرہ کوئی اگر محفوظ رکھتی ہے تو استغنا
نہ کر تقليد اے جبريل ميرے جذب و مستی کی
تن آساں عرشيوں کو ذکر و تسبيح و طواف اولی

--------------------

Translitration

Sama Sakta Nahin Pehna’ay Fitrat Mein Mera Soda
Galat Tha Ae Junoon Shaid Tera Andaza’ay Sehra

Khudi Se Iss Tilism-E-Rang-O-Boo Ko Torh Sakte Hain
Yehi Touheed Thi Jis Ko Na Tu Samjha Na Mein Samjha

Nigah Payda Kar Ae Ghafil Tajali Aen-E-Fitrat Hai
Ke Apni Mouj Se Begana Reh Sakta Nahin Darya

Raqabat Ilm-O-Irfan Mein Galat Beeni Hai Manbar Ki
Ke Woh Hallaj Ki Sooli Ko Samjha Hai Raqeeb Apna

Khuda Ke Pak Bandon Ko Hukoomat Mein, Ghulami Mein
Zirah Koi Agar Mehfooz Rakhti Hai To Istagna

Na Kar Taqleed Ae Jibraeel Mere Jazb-O-Masti Ki
Tan Asan Arshiyon Ko Zikr-O-Tasbeeh-O-Taawaf Aola

-------------------------------

~~~~0~~~~

بہت ديکھے ہيں ميں نے مشرق و مغرب کے ميخانے
يہاں ساقی نہيں پيدا ، وہاں بے ذوق ہے صہبا
نہ ايراں ميں رہے باقی ، نہ توراں ميں رہے باقی
وہ بندے فقر تھا جن کا ہلاک قيصر و کسری
يہی شيخ حرم ہے جو چرا کر بيچ کھاتا ہے
گليم بوذر و دلق اويس و چادر زہرا!
حضور حق ميں اسرافيل نے ميری شکايت کی
يہ بندہ وقت سے پہلے قيامت کر نہ دے برپا
ندا آئی کہ آشوب قيامت سے يہ کيا کم ہے
'
1گرفتہ چينياں احرام و مکی خفتہ در بطحا '
لبالب شيشہ تہذيب حاضر ہے مے 'لا' سے
مگر ساقی کے ہاتھوں ميں نہيں پيمانہ 'الا'
دبا رکھا ہے اس کو زخمہ ور کی تيز دستی نے
بہت نيچے سروں ميں ہے ابھی يورپ کا واويلا
اسی دريا سے اٹھتی ہے وہ موج تند جولاں بھی
نہنگوں کے نشيمن جس سے ہوتے ہيں تہ و بالا

---------------------

Translitration

Bohat Dekhe Hain Main Ne Mashriq-o-Maghrib Ke May Khane
Yahan Saqi Nahin Payda, Wahan Be-Zauq Hai Sehba

Na Iran Main Rahe Baqi, Na Tooran Mein Rahe Baqi
Woh Banday Faqr Tha Jin Ka Halaak-e-Qaisar-o-Kasra

Yehi Sheikh-e-Haram Hai Jo Chura Kar Baich Khata Hai
Galeem-e-Bu Zar (R.A.)-o-Dalaq-e-Awais (R.A)-o-Chadar-e-Zahra (R.A.)

Huzoor-e-Haq Mein Israfeel Ne Meri Shikayat Ki
Ye Banda Waqt Se Pehle Qayamat Kar Na De Barpa

Nida Ayi Ke Ashob-e-Qayamat Se Ye Kya Kam Hai
‘Garaftah Cheeniyan Ahram-o-Makki Khufta Dar Batha’
(Ye Misra Haheem Sanai R.A. Ka Hai)

Labalab Shisha’ay Tehzeeb-e-Hazir Hai Ma’ay ‘LA’ Se
Magar Saqi Ke Hathon Mein Nahin Paymana’ay ‘ILLAH’

Daba Rakha Hai Uss Ko Zakhmawer Ki Taiz Dasti Ne
Bohat Neeche Suron Mein Hai Abhi Yourap Ka Wavela

Issi Darya Se Uthti Hai Woh Mouj-e-Tund Joulan Bhi
Nehnangon Ke Nasheman Jis Se Hote Hain Teh-o-Bala

---------------------------------


1 يہ مصرع حکيم سنائي کا ہے

~~~~0~~~~

غلامی کيا ہے ؟ ذوق حسن و زيبائی سے محرومی
جسے زيبا کہيں آزاد بندے ، ہے وہی زيبا
بھروسا کر نہيں سکتے غلاموں کی بصيرت پر
کہ دنيا ميں فقط مردان حر کی آنکھ ہے بينا
وہی ہے صاحب امروز جس نے اپنی ہمت سے
زمانے کے سمندر سے نکالا گوہر فردا
فرنگی شيشہ گر کے فن سے پتھر ہوگئے پانی
مری اکسير نے شيشے کو بخشی سختی خارا
رہے ہيں ، اور ہيں فرعون ميری گھات ميں اب تک
مگر کيا غم کہ ميری آستيں ميں ہے يد بيضا
وہ چنگاری خس و خاشاک سے کس طرح دب جائے
جسے حق نے کيا ہو نيستاں کے واسطے پيدا
محبت خويشتن بينی ، محبت خويشتن داری
محبت آستان قيصر و کسری سے بے پروا
عجب کيا رمہ و پرويں مرے نخچير ہو جائيں

1کہ برفتراک صاحب دولتے بستم سر خود ا'

وہ دانائے سبل ، ختم الرسل ، مولائے کل جس نے
غبار راہ کو بخشا فروغ وادی سينا
نگاہ عشق و مستی ميں وہی اول ، وہی آخر
وہی قرآں ، وہی فرقاں ، وہی يسيں ، وہی طہ
سنائی کے ادب سے ميں نے غواصی نہ کی ورنہ
ابھی اس بحر ميں باقی ہيں لاکھوں لولوئے لالا

-----------------------

Translitration

Ghulami Kya Hai? Zauq-e-Husn-o-Zaibai Se Mehroomi
Jise Zaiba Kahin Azad Bande, Hai Wohi Zaiba

Bharosa Kar Nahin Sakte Ghulamon Ki Baseerat Par
Ke Dunya Mein Faqat Mardan-e-Hur Ki Ankh Hai Beena

Wohi Hai Sahib-e-Amroz Jis Ne Apni Himat Se
Zamane Ke Sumander Se Nikala Gohar-e-Farda

Farangi Shisha Gar Kar Ke Fun Se Pathar Ho Gye Pani
Meri Ikseer Ne Shishe Ko Bakhshi Sakhti-e-Khara

Rahe Hain, Aur Hain Firon Meri Ghaat Mein Ab Tak
Magar Kya Gham Ke Meri Asteen Mein Hai Yad-e-Baiza

Who Chingari Khas-o-Khashaak Se Kis Tarah Dab Jaye
Jise Haq Ne Kiya Ho Neestan Ke Wastay Paida

Mohabbat Khaweshtan Beeni, Mohabbat Khwaestan Dari
Mohabbat Astan-e-Qaisar-o-Kasra Se Beparwa

Ajab kya Gar Meh-o-Parveen Mere Nakhcheer Ho Jaen
‘Ke Bar Fatraak-e-Sahib Doulatay Bistam Sar-e-Khud Ra’

Woh Dana’ay Subul, Khatam-Ur-Rusul, Moula’ay Kul (S.A.W.) Jis Ne
Ghubar-e-Rah Ko Bakhsha Farogh-e-Wadi-e-Sina

Nigah-e-Ishq-o-Masti Mein Wohi Awal, Wohi Akhir
Wohi Quran, Wohi Furqan, Wohi Yasin, Wohi Taha

Sanayi Ke Adab Se Mein Ne Gawwasi Na Ki Warna
Abhi Iss Behar Mein Baqi Hain Lakhon Lulu’ay Lala

---------------------------------

IIS Logo

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP