Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

عبد الرحمن اول کا بويا ہوا کھجور کا پہلا درخت سرزمين اندلس ميں

 

يہ اشعار جو عبد الرحمن اول کی تصنيف سے ہيں ، 'تاريخ المقری'
ميں درج ہيں مندرجہ ذيل اردو نظم ان کا آزاد ترجمہ ہے
درخت مذکور مدينتہ الزہرا ميں بويا گيا تھا


ميری آنکھوں کا نور ہے تو
ميرے دل کا سرور ہے تو
اپنی وادی سے دور ہوں ميں
ميرے ليے نخل طور ہے تو
مغرب کی ہوا نے تجھ کو پالا
صحرائے عرب کی حور ہے تو
پرديس ميں ناصبور ہوں ميں
پرديس ميں ناصبور ہے تو
غربت کی ہوا ميں بارور ہو
ساقی تيرا نم سحر ہو
عالم کا عجيب ہے نظارہ
دامان نگہ ہے پارہ پارہ
ہمت کو شناوری مبارک!
پيدا نہيں بحر کا کنارہ
ہے سوز دروں سے زندگانی
اٹھتا نہيں خاک سے شرارہ
صبح غربت ميں اور چمکا
ٹوٹا ہوا شام کا ستارہ
مومن کے جہاں کی حد نہيں ہے
مومن کا مقام ہر کہيں ہے

-----------------------

Translitration

Meri Ankhon Ka Noor Hai Tu
Mere Dil Ka Suroor Hai Tu

Apni Wadi Se Door Hun Main
Mere Liye Nakhl-e-Toor Hai Tu

Maghrib Ki Hawa Ne Tujh Ko Pala
Sehra-e-Arab Ki Hoor Hai Tu

Pardais Mein Na-Saboor Hun Main
Pardais Mein Na-Saboor Hai Tu

Ghurbat Ki Hawa Mein Bar-War Ho
Saqi Tera Nam-e-Sehar Ho

Alam Ka Ajeeb Hai Nazara
Damaan-e-Nigah Hai Para Para

Himmat Ko Shanawari Mubarik!
Paida Nahin Behar Ka Kinara

Hai Souz-e-Daroon Se Zindagaani
Uthta Nahin Khaak Se Sharara

Subah-e-Ghurbat Mein Aur Chamka
Toota Huwa Shaam Ka Sitara

Momin Ke Jahan Ki Had Nahin Hai
Momin Ka Maqam Har Kahin Hai

--------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP