Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

طارق کی دعا اندلس کے ميدان جنگ ميں

 

يہ غازی ، يہ تيرے پر اسرار بندے
جنھيں تو نے بخشا ہے ذوق خدائی
دو نيم ان کی ٹھوکر سے صحرا و دريا
سمٹ کر پہاڑ ان کی ہيبت سے رائی
دو عالم سے کرتی ہے بيگانہ دل کو
عجب چيز ہے لذت آشنائی
شہادت ہے مطلوب و مقصود مومن
نہ مال غنيمت نہ کشور کشائی
خياباں ميں ہے منتظر لالہ کب سے
قبا چاہيے اس کو خون عرب سے
کيا تو نے صحرا نشينوں کو يکتا
خبر ميں ، نظر ميں ، اذان سحر ميں
طلب جس کی صديوں سے تھی زندگی کو
وہ سوز اس نے پايا انھی کے جگر ميں
کشاد در دل سمجھتے ہيں اس کو
ہلاکت نہيں موت ان کی نظر ميں
دل مرد مومن ميں پھر زندہ کر دے
وہ بجلی کہ تھی نعرہ لاتذر ، ميں
عزائم کو سينوں ميں بيدار کردے
نگاہ مسلماں کو تلوار کردے

-----------------------
Translitration

Ye Ghazi, Ye Tere Purisrar Bande
Jinhain Tu Ne Bakhsha Hai Zuaq-e-Khudai

Do-Neem In Ki Thoukar Se Sehra-o-Darya
Simat Kar Pahar In Ki Haibat Se Rayi

Do Alam Se Karti Hai Baigana Dil Ko
Ajab Cheez Hai Lazzat-e-Ashnayi  

Shahadat Hai Matloob-o-Maqsood-e-Momin
Na Maal-e-Ghanimat Na Kishwar Kushayi

Khayaban Mein Hai Muntazir Lala Kab Se
Qaba Chahye Iss Ko Khoon-e-Arab Se

Kiya Tu Ne Sehra Nasheenon Ko Yakta
Khabar Mein, Nazar Mein, Azan-e-Sehar Mein

Talab Jis Ki Sadiyon Se Thi Zindagi Ko
Woh Souz Iss Ne Paya Inhi Ke Jigar Mein

Kushad-e-Dar-e-Dil Samajhte Hain Iss Ko
Halakat Nahin Mout In Ki Nazar Mein

Dil-e-Mard-e-Momin Mein Phir Zinda Kar De
Woh Bijli Ke Thi Na’ara-e-‘LA TAZAR’ Mein

Aza’im Ko Seenon Mein Baidar-e-Kar De
Nigah-e-Musalman Ko Talwar Kar De!

--------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP