Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

ساقی نامہ

 

ہوا خيمہ زن کاروان بہار
ارم بن گيا دامن کوہسار
گل و نرگس و سوسن و نسترن
شہيد ازل لالہ خونيں کفن
جہاں چھپ گيا پردۂ رنگ ميں
لہو کی ہے گردش رگ سنگ ميں
فضا نيلی نيلی ، ہوا ميں سرور
ٹھہرتے نہيں آشياں ميں طيور
وہ جوئے کہستاں اچکتی ہوئی
اٹکتی ، لچکتی ، سرکتی ہوئی
اچھلتی ، پھسلتی ، سنبھلتی ہوئی
بڑے پيچ کھا کر نکلتی ہوئی
رکے جب تو سل چير ديتی ہے يہ
پہاڑوں کے دل چير ديتی ہے يہ
ذرا ديکھ اے ساقی لالہ فام
سناتی ہے يہ زندگی کا پيام
پلا دے مجھے وہ مئے پردہ سوز
کہ آتی نہيں فصل گل روز روز
وہ مے جس سے روشن ضمير حيات
وہ مے جس سے ہے مستی کائنات
وہ مے جس ميں ہے سوزوساز ازل
وہ مے جس سے کھلتا ہے راز ازل

اٹھا ساقيا پردہ اس راز سے
لڑا دے ممولے کو شہباز سے

زمانے کے انداز بدلے گئے
نيا راگ ہے ، ساز بدلے گئے
ہوا اس طرح فاش راز فرنگ
کہ حيرت ميں ہے شيشہ باز فرنگ
پرانی سياست گری خوار ہے
زميں مير و سلطاں سے بيزار ہے
گيا دور سرمايہ داری گيا
تماشا دکھا کر مداری گيا
گراں خواب چينی سنبھلنے لگے
ہمالہ کے چشمے ابلنے لگے
دل طور سينا و فاراں دو نيم
تجلی کا پھر منتظر ہے کليم
مسلماں ہے توحيد ميں گرم جوش
مگر دل ابھی تک ہے زنار پوش
تمدن، تصوف، شريعت، کلام
بتان عجم کے پجاری تمام
حقيقت خرافات ميں کھو گئی
يہ امت روايات ميں کھو گئی
لبھاتا ہے دل کو کلام خطيب
مگر لذت شوق سے بے نصيب
بياں اس کا منطق سے سلجھا ہوا
لغت کے بکھيڑوں ميں الجھا ہوا
وہ صوفی کہ تھا خدمت حق ميں مرد
محبت ميں يکتا ، حميت ميں فرد
عجم کے خيالات ميں کھو گيا
يہ سالک مقامات ميں کھو گيا

بجھی عشق کی آگ ، اندھير ہے
مسلماں نہيں ، راکھ کا ڈھير ہے

شراب کہن پھر پلا ساقيا
وہی جام گردش ميں لا ساقيا!
مجھے عشق کے پر لگا کر اڑا
مری خاک جگنو بنا کر اڑا
خرد کو غلامی سے آزاد کر
جوانوں کو پيروں کا استاد کر
ہری شاخ ملت ترے نم سے ہے
نفس اس بدن ميں ترے دم سے ہے
تڑپنے پھٹرکنے کی توفيق دے
دل مرتضی ، سوز صديق دے
جگر سے وہی تير پھر پار کر
تمنا کو سينوں ميں بيدار کر
ترے آسمانوں کے تاروں کی خير
زمينوں کے شب زندہ داروں کی خير
جوانوں کو سوز جگر بخش دے
مرا عشق ، ميری نظر بخش دے
مری ناؤ گرداب سے پار کر
يہ ثابت ہے تو اس کو سيار کر
بتا مجھ کو اسرار مرگ و حيات
کہ تيری نگاہوں ميں ہے کائنات
مرے ديدۂ تر کی بے خوابياں
مرے دل کی پوشيدہ بے تابياں
مرے نالۂ نيم شب کا نياز
مری خلوت و انجمن کا گداز
امنگيں مری ، آرزوئيں مری
اميديں مری ، جستجوئيں مری
مری فطرت آئينۂ روزگار
غزالان افکار کا مرغزار
مرا دل ، مری رزم گاہ حيات
گمانوں کے لشکر ، يقيں کا ثبات
يہی کچھ ہے ساقی متاع فقير
اسی سے فقيری ميں ہوں ميں امير

مرے قافلے ميں لٹا دے اسے
لٹا دے ، ٹھکانے لگا دے اسے

دما دم رواں ہے يم زندگی
ہر اک شے سے پيدا رم زندگی
اسی سے ہوئی ہے بدن کی نمود
کہ شعلے ميں پوشيدہ ہے موج دود
گراں گرچہ ہے صحبت آب و گل
خوش آئی اسے محنت آب و گل
يہ ثابت بھی ہے اور سيار بھی
عناصر کے پھندوں سے بيزار بھی
يہ وحدت ہے کثرت ميں ہر دم اسير
مگر ہر کہيں بے چگوں ، بے نظير
يہ عالم ، يہ بت خانۂ شش جہات
اسی نے تراشا ہے يہ سومنات
پسند اس کو تکرار کی خو نہيں
کہ تو ميں نہيں ، اور ميں تو نہيں
من و تو سے ہے انجمن آفرين
مگر عين محفل ميں خلوت نشيں
چمک اس کی بجلی ميں تارے ميں ہے
يہ چاندی ميں ، سونے ميں ، پارے ميں ہے
اسی کے بياباں ، اسی کے ببول
اسی کے ہيں کانٹے ، اسی کے ہيں پھول
کہيں اس کی طاقت سے کہسار چور
کہيں اس کے پھندے ميں جبريل و حور
کہيں جرہ شاہين سيماب رنگ
لہو سے چکوروں کے آلودہ چنگ

کبوتر کہيں آشيانے سے دور
پھڑکتا ہوا جال ميں ناصبور

فريب نظر ہے سکون و ثبات
تڑپتا ہے ہر ذرئہ کائنات
ٹھہرتا نہيں کاروان وجود
کہ ہر لحظہ ہے تازہ شان وجود
سمجھتا ہے تو راز ہے زندگی
فقط ذوق پرواز ہے زندگی
بہت اس نے ديکھے ہيں پست و بلند
سفر اس کو منزل سے بڑھ کر پسند
سفر زندگی کے ليے برگ و ساز
سفر ہے حقيقت ، حضر ہے مجاز
الجھ کر سلجھنے ميں لذت اسے
تڑپنے پھٹرکنے ميں راحت اسے
ہوا جب اسے سامنا موت کا
کٹھن تھا بڑا تھامنا موت کا
اتر کر جہان مکافات ميں
رہی زندگی موت کی گھات ميں
مذاق دوئی سے بنی زوج زوج
اٹھی دشت و کہسار سے فوج فوج
گل اس شاخ سے ٹوٹتے بھی رہے
اسی شاخ سے پھوٹتے بھی رہے
سمجھتے ہيں ناداں اسے بے ثبات
ابھرتا ہے مٹ مٹ کے نقش حيات
بڑی تيز جولاں ، بڑی زورد رس
ازل سے ابد تک رم يک نفس

زمانہ کہ زنجير ايام ہے
دموں کے الٹ پھير کا نام ہے

يہ موج نفس کيا ہے تلوار ہے
خودی کيا ہے ، تلوار کی دھار ہے
خودی کيا ہے ، راز درون حيات
خودی کيا ہے ، بيداری کائنات
خودی جلوہ بدمست و خلوت پسند
سمندر ہے اک بوند پانی ميں بند
اندھيرے اجالے ميں ہے تابناک
من و تو ميں پيدا ، من و تو سے پاک
ازل اس کے پيچھے ، ابد سامنے
نہ حد اس کے پيچھے ، نہ حد سامنے
زمانے کے دريا ميں بہتی ہوئی
ستم اس کی موجوں کے سہتی ہوئی
تجسس کی راہيں بدلتی ہوئی
وما دم نگاہيں بدلتی ہوئی
سبک اس کے ہاتھوں ميں سنگ گراں
پہاڑ اس کی ضربوں سے ريگ رواں
سفر اس کا انجام و آغاز ہے
يہی اس کی تقويم کا راز ہے
کرن چاند ميں ہے ، شرر سنگ ميں
يہ بے رنگ ہے ڈوب کر رنگ ميں
اسے واسطہ کيا کم و بيش سے
نشب و فراز وپس و پيش سے
ازل سے ہے يہ کشمکش ميں اسير
ہوئی خاک آدم ميں صورت پذير

خودی کا نشيمن ترے دل ميں ہے
فلک جس طرح آنکھ کے تل ميں ہے

خودی کے نگہباں کو ہے زہر ناب
وہ ناں جس سے جاتی رہے اس کی آب
وہی ناں ہے اس کے ليے ارجمند
رہے جس سے دنيا ميں گردن بلند
فرو فال محمود سے درگزر
خودی کو نگہ رکھ ، ايازی نہ کر
وہی سجدہ ہے لائق اہتمام
کہ ہو جس سے ہر سجدہ تجھ پر حرام
يہ عالم ، يہ ہنگامۂ رنگ و صوت
يہ عالم کہ ہے زير فرمان موت
يہ عالم ، يہ بت خانۂ چشم و گوش
جہاں زندگی ہے فقط خورد و نوش
خودی کی يہ ہے منزل اوليں
مسافر! يہ تيرا نشيمن نہيں
تری آگ اس خاک داں سے نہيں
جہاں تجھ سے ہے ، تو جہاں سے نہيں
بڑھے جا يہ کوہ گراں توڑ کر
طلسم زمان و مکاں توڑ کر
خودی شير مولا ، جہاں اس کا صيد
زميں اس کی صيد ، آسماں اس کا صيد
جہاں اور بھی ہيں ابھی بے نمود
کہ خالی نہيں ہے ضمير وجود
ہر اک منتظر تيری يلغار کا
تری شوخی فکر و کردار کا
يہ ہے مقصد گردش روزگار
کہ تيری خودی تجھ پہ ہو آشکار
تو ہے فاتح عالم خوب و زشت
تجھے کيا بتاؤں تری سرنوشت
حقيقت پہ ہے جامۂ حرف تنگ
حقيقت ہے آئينہ ، گفتار زنگ
فروزاں ہے سينے ميں شمع نفس
مگر تاب گفتار کہتی ہے ، بس

اگر يک سر موے برتر پرم
فروغ تجلی بسوزد
پرم

----------------------

Translitration


Huwa Khaimazan Karwan-E-Bahar
Iram Ban Gya Daman-E-Kohsar

Gul-O-Nargis-O-Sosan-O-Nastran
Shaheed-E-Azal Lalah Khooni Kafan

Jahan Chup Gya Parda’ay Rang Mein
Lahoo Ki Hai Gardish Rag-E-Sang Mein

Faza Neeli Neeli, Hawa Mein Suroor
Thehar Nahin Aashiyan Mein Tayoor

Woh Jooay Kohstan Uchakti Huwi
Atakti, Lachakti, Sirakti Huwi

Uchalti, Phisalti, Sanbhalti Huwi
Bare Paich Kha Kar Niklti Huwi

Ruke Jab To Sil Cheer Deti Hai Ye
Paharon Ke Dil Cheer De

Zara Dekh Ae Saqi-E-Lalah Faam!
Sunati Hai Ye Zindagi Ka Payam

Pila De Mujhe Woh Mai-E-Parda Soz
Ke Ati Nahin Fasal-E-Gul Roz Roz

Woh Mai Jis Se Roshan Zameer-E-Hayat
Woh Mai Jis Se Hai Masti-E-Kainat

Woh Mai Jis Mein Hai Soz-O-Saaz-E-Azal
Woh Mai Jis Se Khulta Hai Raaz-E-Azal

Utha Saqiya Parda Iss Raaz Se
Lara De Mamoole Ko Shahbaz Se

Zamane Ke Andaz Badle Gye
Naya Raag Hai, Saaz Badle Gye

Huwa Iss Tarah Fash Raaz-E-Farang
Ke Hairat Mein Hai Sheesha Baaz-E-Farang

Purani Siasat Gari Khwaar
Zameen Mir-E-Sultan Se Baizar Hai

Gya Dour-E-Sarmaya Dari, Gya
Tamasha Dikha Kar Madari Gya

Garan Khawab Cheeni Sanbhalne Lage
Hamala Ke Chashme Ubalne Lage

Dil-E-Toor-E-Seena-O-Faran Do Neem
Tajalli Ka Phir Muntazir Hai Kaleem

Musalman Hai Touheed Mein Garam Josh
Magar Dil Abhi Taak Hai Zunnar Posh

Tamadan, Tasawwuf, Shariat, Kalam
Butan-E-Ajam Ke Poojari Tamam!

Haqiqat Khurafat Mein Kho Gyi
Ye Ummat Rawayat Mein Kho Gyi

Lubhata Hai Dil Ko Kalam-E-Khateeb
Magar Lazzat-E-Shauq Se Be-Naseeb!
.

Byan Iss Ka Mantaq Se Suljha Huwa
Lughat Ke Bakheron Mein Uljha Huwa

Woh Sufi K Tha Khidmat-E-Haq Mein Mard
Mohabbat Mein Yakta, Hamiyyat Mein Fard

Ajam Ke Khayalat Mein Kho Gya
Ye Salik Maqamat Mein Kho Gya

Bujhi Ishq Ki Aag, Andhair Hai
Musalman Nahin, Raakh Ka Dhair Hai

Sharab-E-Kuhan Phir Pila Saqiya
Wohi Jaam Gardish Mein La Saqiya!

Muhe Ishq Ke Par Laga Kar Ura
Meri Khaak Jugnu Bana Kar Ura

Khirad Ko Ghulami Se Azad Kar
Jawanon Ko Peeron Ka Ustad Kar

Har Shakh-E-Millat Tere Nam Se Hai
Nafs Iss Badan Mein Tere Dam Se Hai

Tarapne Pharakne Ki Toufeeq De
Dil-E-Murtaza(R.A.), Souz-E-Siddique(R.A.) De

Jigar Se Wohi Teer Phir Paar Kar
Tammana Ko Seenon Mein Baidar Kar

Tere Asmanon Ke Taron Ki Khair
Zameenon Ke Shab Zinda Daron Ki Khair

Jawanon Ko Soz-E-Jigar Bakhs De
Mera Ishq, Meri Nazar Bakhs De

Meri Nao Girdaab Se Paar Kar
Ye Sabat Hai Tu Iss Ko Syyar Kar

Bata Mujh Ko Asrar-E-Marg-O-Hayat
K Teri Nigahon Mein Hai Kainat

Mere Didah-E-Tar Ki Be-Khawabiyan
Mere Dil Ki Poshida Be-Tabiyan

Mere Nala-E-Neem Shab Ka Niaz
Meri Khalwat-O-Anjuman Ka Gudaz

Umangain Meri, Arzoo’ain Meri
Umeedain Meri, Justujoo’ain Meri

Meri Fitrat Aayna-E-Rozgaar
Gazaalan-E-Afkaar Ka Marghzaar

Mera Dil, Meri Razm Gah-E-Hayat
Gamanon Ke Lashkar, Yaqeen Ka Sabaat

Yehi Kuch Hai Saqi Mataa-E-Faqeer
Issi Se Faqeeri Mein Hun Main Ameer

Mere Kafle Mein Luta De Isse
Luta De, Thikane Laga De Isse!

Damadam Rawan Hai Yam-E-Zindagi
Har Ek Shay Se Paida Ram-E-Zindagi

Issi Se Huwi Hai Badan Ki Namood
K Shaole Mein Poshida Hai Mouj-E-Dood

Garan Gharche Hai Sohbat Aab-O-Gil
Khush Ayi Isse Mehnat Aab-O-Gil

Ye Sabit Bhi Hai Aur Sayyar Bhi
Anasir Ke Phandon Se Baizar Bhi

Ye Wahdat Hai Kasrat Mein Har Dam Aseer
Magar Har Kahin Be Chugun, Benazir

Ye Alam, Ye Butkhana-E-Shas Jihaat
Issi Ne Tarasha Hai Ye Somnaat

Pasand Iss Ko Takrar Ki Khoo Nahin
K Tu Main Nahin, Aur Main Tu Nahin

Mann-O-Tu Se Hai Anjuman Afreen
Magar Ayn-E-Mehfil Mein Khalwat Nasheen

Chamak Iss Ki Bijli Mein, Tare Mein Hai
Ye Chandi Mein, Sone Mein, Paare Mein Hai

Issi Ke Bayabaan, Issi Ke Babool
Issi Ke Hain Kante, Issi Ke Hain Phool

Kahin Iss Ki Taqat Se Kohsaar Choor
Kahin Iss Ke Phande Mein Jibreel-O-Hoor

Kahin Jurrah Shaheen-E-Seemab Rang
Lahoo Se Chakoron Ke Aluda Chang

Kabutar Kahin Ashiyane Se Door
Pharakta Huwa Jaal Mein Na-Saboor

Faraib-E-Nazar Hai Sakoon-O-Sabaat
Tarapta Hai Har Zarra-E-Kainat

Theharta Nahin Karwaan-E-Wujood
Ke Har Lehza Hai Taza Shaan-E-Wujood

Samjhta Hai Tu Raaz Hai Zindagi
Faqat Zauq-E-Parwaaz Hai Zindagi

Bohat Iss Ne Dekhe Hain Past-O-Buland
Safar Iss Ko Manzil Se Barh Kar Pasand

Safar Zindagi Ke Liye Barg-O-Saaz
Safar Hai Haqiqat, Hazar Hai Majaaz

Ulajh Kar Sulajhne Mein Lazzat Isse
Tarapne Pharakne Mein Rahat Isse

Huwa Jab Isse Samna Mout Ka
Kathan Tha Bara Thaamna Mout Ka

Uter Kar Jahan-E-Makafat Mein
Rahi Zindagi Mout Ki Ghaat Mein

Mazaq-E-Dooi Se Bani Zouj Zouj
Uthi Dast-O-Kohsaar Se Fouj Fouj

Gul Is Shakh Se Tootte Bhi Rahe
Issi Shakh Se Phootte Bhi Rahe

Samajhe Hain Nadan Issay Be-Sabaat
Ubharta Hai Mit Mit Ke Naqsh-E-Hayat

Bari Taiz Jolan, Bari Zood Ras
Azal Se Abad Tak Ram-E-Yak Nafas

Zamana Ke Zanjeer-E-Ayyam Hai
Damon Ke Ulat Phair Ka Naam Hai

Ye Mouj-E-Nafs Kya Hai Talwar Hai
Khudi Kya Hai, Talwaar Ki Dhaar Hai

Khudi Kya Hai, Raaz-E-Daroon-E-Hayat
Khudi Kya Hai, Baidari-E-Kainat

Khudi Jalwa Badmast-O-Khilwat Pasand
Samundar Hai Ek Boond Pani Mein Band

Andhere Ujale Mein Hai Taabnaak
Mann-O-Tu Mein Paida, Mann-O-Tu Se Paak

Azal Iss Ke Peeche, Abad Samne
Na Had Iss Ke Peeche. Na Had Samne

Zamane Ke Darya Mein Behti Huwi
Sitam Iss Ki Moujon Ke Sehti Huwi

Tajasus Ki Rahain Badalti Huwi
Damadam Nigahain Badalti Huwi

Subak Iss Ke Hathon Mein Sang-E-Garan
Pahar Is Ski Zarbon Se Raig-E-Rawan

Safar Iss Ka Anjaam-O-Aghaz Hai
Yehi Iss Ki Taqweem Ka Raaz Hai

Kiran Chand Mein Hai, Sharr Sang Mein
Ye Berang Hai Doob Kar Rang Mein

Isse Wasta Kya Kam-O-Baish Se
Nashaib-O-Faraz-O-Pas-O-Paish Se

Azal Se Hai Ye Kashmakash Mein Aseer
Huwi Khaak-E-Adam Mein Soorat Pazeer

Khudi Ka Nasheman Tere Dil Mein Hai
Falak Jis Tarah Aankh Ke Til Mein Hai

Khudi Ke Nigheban Ko Hai Zehr-E-Naab
Woh Naa Jis Se Jati Rahe Is Ski Aab

Wohi Naa Hai Iss Ke Liye Arjumand
Rahe Jis Se Dunya Mein Gardan Buland

Firo Faal-E-Mehmood Se Darguzar
Khudi Ko Nigah Rakh, Ayazi Na Kar

Wohi Sajda Hai Laaeq-E-Ehtamam
Ke Ho Jis Se Har Sajda Tujh Par Haraam

Ye Alam, Ye Hangama-E-Rang-O-Soot
Ye Alam Ke Hai Zair-E-Farmaan-E-Mout

Ye Alam, Ye Butkhana-E-Chasm-O-Gosh
Jahan Zindagi Hai Faqat Khurad-O-Nosh

Khudi Ki Ye Hai Manzil-E-Awaleen
Musafir ! Ye Tera Nasheman Nahin

Teri Aag Iss Khaakdaan Se Nahin
Jahan Tujh Se Hai, Tu Jahan Se Nahin

Barhe Ja Ye Koh-E-Giran Torh Kar
Tilism-E-Zaman-O-Makan Torh Kar

Khudi Sher-E-Mola, Jahan Iss Ka Sayd
Zameen Iss Ki Sayd, Asman Is Ka Sayd

Jahan Aur Bhi Hain Abhi Be-Namood
K Khali Nahin Hai Zameer-E-Wujood

Har Ek Muntazir Teri Yalghaar Ka
Teri Shoukhi-E-Fikr-O-Kirdaar Ka

Ye Hai Maqsad-E-Gardish-E-Rozgaar
K Teri Khudi Tujh Pe Ho Ashkaar

Tu Hai Faateh-E-Alam-E-Khoob-O-Zisht
Tujhe Kya Bataon Teri Sarnawisht

Haqiqat Pe Hai Jama-E-Harf Tang
Haqiqat Hai Ayna, Guftaar Zang

Farozan Hai Sine Mein Shama-E-Nafs
Magar Taab-E-Guftaar Kehti Hai, Bas !

‘Agar Yak Sir-E-Muay Bartar Param
Farogh-E-Tajali Basozd Param’

--------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP