Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

ذوق و شوق

 

ان اشعار ميں سے اکثر فلسطين ميں لکھے گئے


دريغ آمدم زاں ہمہ بوستاں    تہی دست رفتن سوئے دوستاں


قلب و نظر کی زندگی دشت ميں صبح کا سماں
چشمہ آفتاب سے نور کی ندياں رواں
حسن ازل کی ہے نمود ، چاک ہے پردۂ وجود
دل کے ليے ہزار سود ايک نگاہ کا زياں
سرخ و کبود بدلياں چھوڑ گيا سحاب شب
کوہ اضم کو دے گيا رنگ برنگ طيلساں
گرد سے پاک ہے ہوا ، برگ نخيل دھل گئے
ريگ نواح کاظمہ نرم ہے مثل پرنياں
آگ بجھی ہوئی ادھر ، ٹوٹی ہوئی طناب ادھر
کيا خبر اس مقام سے گزرے ہيں کتنے کارواں

آئی صدائے جبرئيل ، تيرا مقام ہے يہی
اہل فراق کے ليے عيش دوام ہے يہی

کس سے کہوں کہ زہر ہے ميرے ليے مے حيات
کہنہ ہے بزم کائنات ، تازہ ہيں ميرے واردات
کيا نہيں اور غزنوی کارگہ حيات ميں
بيٹھے ہيں کب سے منتظر اہل حرم کے سومنات
ذکر عرب کے سوز ميں ، فکر عجم کے ساز ميں
نے عربی مشاہدات ، نے عجمی تخيلات
قافلۂ حجاز ميں ايک حسين بھی نہيں
گرچہ ہے تاب دار ابھی گيسوئے دجلہ و فرات
عقل و دل و نگاہ کا مرشد اوليں ہے عشق
عشق نہ ہو تو شرع و ديں بت کدۂ تصورات

صدق خليل بھی ہے عشق ، صبر حسين بھی ہے عشق
معرکۂ وجود ميں بدر و حنين بھی ہے عشق

آيۂ کائنات کا معنی دير ياب تو
نکلے تری تلاش ميں قافلہ ہائے رنگ و بو
جلوتيان مدرسہ کور نگاہ و مردہ ذوق
خلوتيان مے کدہ کم طلب و تہی کدو
ميں کہ مری غزل ميں ہے آتش رفتہ کا سراغ
ميری تمام سرگزشت کھوئے ہوؤں کی جستجو
باد صبا کی موج سے نشوونمائے خار و خس
ميرے نفس کی موج سے نشوونمائے آرزو
خون دل و جگر سے ہے ميری نوا کی پرورش
ہے رگ ساز ميں رواں صاحب ساز کا لہو

فرصت کشمکش مدہ ايں دل بے قرار را
يک دو شکن زيادہ کن گيسوے تابدار را

لوح بھی تو ، قلم بھی تو ، تيرا وجود الکتاب
گنبد آبگينہ رنگ تيرے محيط ميں حباب
عالم آب و خاک ميں تيرے ظہور سے فروغ
ذرہ ريگ کو ديا تو نے طلوع آفتاب
شوکت سنجر و سليم تيرے جلال کی نمود
فقر جنيد و بايزيد تيرا جمال بے نقاب
شوق ترا اگر نہ ہو ميری نماز کا امام
ميرا قيام بھی حجاب ، ميرا سجود بھی حجاب
تيری نگاہ ناز سے دونوں مراد پا گئے
عقل غياب و جستجو ، عشق حضور و اضطراب

تيرہ و تار ہے جہاں گردش آفتاب سے
طبع زمانہ تازہ کر جلوئہ بے حجاب سے

تيری نظر ميں ہيں تمام ميرے گزشتہ روز و شب
مجھ کو خبر نہ تھی کہ ہے علم نخيل بے رطب
تازہ مرے ضمير ميں معرکۂ کہن ہوا
عشق تمام مصطفی ، عقل تمام بولہب
گاہ بحيلہ می برد ، گاہ بزور می کشد
عشق کی ابتدا عجب ، عشق کی انتہا عجب
عالم سوز و ساز ميں وصل سے بڑھ کے ہے فراق
وصل ميں مرگ آرزو ، ہجر ميں لذت طلب
عين وصال ميں مجھے حوصلۂ نظر نہ تھا
گرچہ بہانہ جو رہی ميری نگاہ بے ادب

گرمی آرزو فراق ، شورش ہاے و ہو فراق
موج کی جستجو فراق ، قطرے کی آبرو فراق

-----------------------

Translitration

'Daraig Amdam Zaan Hama Bostan
Tahi Dast Raftan Suay Dostan

(2)
Qalb-o-Nazar Ki Zindagi Dast Mein Subah Ka Saman
Chasma'ay Aftab Se Noor Ki Nadiyan Rawan

(3)
Husn-e-Azal Ki Hai Namood, Chaak Hai Parda'ay Wajood
Dil Ke Liye Hazar Sood, Aik Nigah Ka Ziyan

(4)
Surkh-o-Kabood Badaliyan Chor (Chodh) Gaya Sihab-e-Shab
Koh-e-Idm Ko De Gaya Rand Barang Teelsiyan

(5)
Gard Se Pak Hai Hawa, Barg-e-Nakheel Dhul Gaye
Raig-e-Nawah-e-Kazimah Naram Hai Misl-e-Parniyan

(6)
Aag Bujhi Hui Idhar, Tooti Hui Tanab Udhar
Kya Khabar Iss Maqam Se Guzaray Hain Kitne Karwan

(7)
Ayi Sada'ay Jibreel, Tera Maqam Hai Yehi
Ahl-e-Faraak Ke Liye Ayesh-e-Dawam Hai Yehi

(8)
Kis Se Kahon Ke Zehar Hai Mere Liye May'ay Hiyat
Kuhna HAi Bazm-e-Kainat, Taza Hain Mere Wardaat

(9)
Kiya Nahin Aur Ghaznavi Kargah-e-Hiyat Mein
Baithe Hain Kab Se Muntazir Ahl-e-Harm Ke Soumanaat

(10)
Zikr-e-Arab Ke Souz Mein, Fikr-e-Ajam Ke Saaz Mein
Nay Arabi Mushahidaat, Nay Arbi Takhayyulaat

(11)
Kafla'ay Hijaz Mein Aik Hussain(R.A.) Bhi Nahin
Garcha Hai Tabdaar Abhi Gaisu'ay Dajla-o-Firat

(12)
Aqal-o-Dil-o-Nigah Ka Murshid-e-Awaleen Hai Ishq
Ishq Na Ho Tou Sharaa-o-Deen, Bott Khudda'ay Tasawwarat

(13)
Sidq-e-Khalil(A.S.) Bhi Hai Ishq, Sabr-e-Hussain(R.A.) Bhi Hai Ishq
Maarka'ay Wajood Mein Badar-o-Hunain Bhi Hai Ishq

(14)
Aaya'ay Kainat Ka Ma'ani-e-Deeryaab tu
Nikle Teri Talash Mein Kafla Ha'ay Rang-o-Bu

(15)
Jalwatiyan-e-Madrasah Kour Nigah-o-Murda Zauq
Khalwatiyan May Kuda Kam Talab-o-Tahi Kadu

(16)
Main Ke Meri Ghazal Mein Hain Aatish-e-Rafta Ka Suragh
Meri Tamam Sarguzhast, Khuay Huwon Ki Justajoo

(17)
Baad-e-Saba Ki Mouj Se Nashonuma'ay Khar-o-Khs
Mere Nafs Ki Mouj Se Nashonuma'ay Arzoo

(18)
Khoon-e-Dil-o-Jigar Se Hai Meri Nawa Ki Parwarish
Hai Rag-e-Saaz Mein Rawan Sahib-e-Saaz Ka Lahoo

(19)
'Fursat-e-Kashmakash Madah Ayen Dil-e-Beqarar Ra
Yak Do Shikan Ziada Kun Ghaisu'ay Tabdaar Ra'

(21)
Alim-e-Aab-o-Khak Mein Tere Zahoor Se Faroug
Zarra'ay Raig Ko Diya Tu Ne Tulu-e-Aftab

(22)
Shoukat-e-Sanjar-o-Saleem Tere Jalal Ki Namood
Faqr-e-Junaid(R.A.)-o-Bayazeed(R.A.), Tera Jamal-e-Be-Naqab

(23)
Shauq Tera Agar Na Ho Meri Namaz Ka Imam
Mera Qiyam Bhi Hijab, Mera Sajood Bhi Hijab

(24)
Teri Nigah-e-Naaz Se Dono Murad Pa Gaye
Aqal Ghiyab-o-Justajoo, Ishq Huzoor-o-Iztarab

(25)
Teerah-o-Taar Hai Jahan Gardish-e-Aftab Se
Taba-e-Zamana Taza Kar Jalwa'ay Behijab Se

(26)
Teri Nazar Mein Hain Tamam Mere Guzishta Roz-o-Shab
Mujh Ko Khabar Na Thi Ke Hai Ilm-e-Nakheel-e-Be-Rutab

(27)
Taza Mere Zameer Mein Ma'arka'ay Kuhan Huwa
Ishq Tamam Mustafavi(S.A.W.), Aqal Tamam Bu-Lahab

(28)
Gah Bahila Mee Burad, Gah Bazor Mee Kusah
Ishq Ki Ibtada Ajab, Ishq Ki Intaha Ajab

(29)
Alim-e-Souz-o-Saaz Mein Wasal Se Barh Ke Hai Firaaq
Wasal Mein Marg-e-Arzoo, Hijar Mein Lazzat-e-Talab

(30)
Ayen-e-Wisal Mein Mujhay Hosla'ay Nazar Na Tha
Gharcha Bahana Joo Rahi Meri Nigah-e-BeAdab

(31)
Garmi-e-Arzoo Firaaq, Shorish-e-Ha'ay-o-Hu Firaaq
Mouj Ki Justajoo Firaaq, Qatre Ki Abroo Firaaq !

--------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP