Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

ابوالعلامعری

 

کہتے ہيں کبھي گوشت نہ کھاتا تھا معري
پھل پھول پہ کرتا تھا ہميشہ گزر اوقات
اک دوست نے بھونا ہوا تيتر اسے بھيجا
شايد کہ وہ شاطر اسي ترکيب سے ہو مات
يہ خوان تر و تازہ معري نے جو ديکھا
کہنے لگا وہ صاحب غفران و لزومات
اے مرغک بيچارہ! ذرا يہ تو بتا تو
تيرا وہ گنہ کيا تھا يہ ہے جس کي مکافات؟
افسوس ، صد افسوس کہ شاہيں نہ بنا تو
ديکھے نہ تري آنکھ نے فطرت کے اشارات

تقدير کے قاضي کا يہ فتوي ہے ازل سے
ہے جرم ضعيفي کي سزا مرگ مفاجات

--------------------------------



Translitration

Kehte Hain Kabhi Ghosht Na Khata Tha Ma’arri
Phal Phool Pe Karta Tha Hamsha Guzar Auqat

Ek Dost Ne Bhoona Huwa Teetar Usse Bheja
Shaid Ke Who Shatir Issi Tarkeeb Se Ho Maat

Ye Khawan-e-Tar-o-Taza Maarri Ne Jo Dekha
Kehne Laga Woh Sahib-e-Ghafran-o-Lazomaat

Ae Murghak-e-Bechara! Zara Ye To Bata Tu
Tera Woh Gunah Kya Tha Ye Hai Jis Ki Makafat?

Afsos, Sad Afsos Ke Shaheen Na Bana Tu
Dekhe Na Teri Ankh Ne Fitrat Ke Isharat

Taqdeer Ke Qazi Ka Ye Fatwa Hai Azal Se
Hai Jurm-e-Zaeefi Ki Saza Marg-e-Mafajat!

--------------------------

، عفران- رسالتہ الغفرانمعري کي ايک مشہور کتاب کا نام ہے
- لزوماتاس کے قصائد کا مجموعہ ہے

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP