Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

اذان

 

اک رات ستاروں سے کہا نجم سحر نے
آدم کو بھي ديکھا ہے کسي نے کبھي بيدار؟
کہنے لگا مريخ ، ادا فہم ہے تقدير
ہے نيند ہي اس چھوٹے سے فتنے کو سزاوار
زہرہ نے کہا ، اور کوئي بات نہيں کيا؟
اس کرمک شب کور سے کيا ہم کو سروکار
بولا مہ کامل کہ وہ کوکب ہے زميني
تم شب کو نمودار ہو ، وہ دن کو نمودار
واقف ہو اگر لذت بيداري شب سے
اونچي ہے ثريا سے بھي يہ خاک پر اسرار
آغوش ميں اس کي وہ تجلي ہے کہ جس ميں
کھو جائيں گے افلاک کے سب ثابت و سيار

ناگاہ فضا بانگ اذاں سے ہوئي لبريز
وہ نعرہ کہ ہل جاتا ہے جس سے دل کہسار

------------------------

Translitration

Ek Raat Sitaron Se Kaha Najam-e-Sehar Ne
Adam Ko Bhi Dekha Hai Kisi Ne Kabhi Baidar?

Kehne Laga Mareekh, Ada Feham Hai Taqdeer
Hai Nind Hi Iss Chotte Se Fitne Ko Sazawar

Zahra Ne Kaha, Aur Koi Baat Nahin Kya?
Iss Karmak-e-Shab-e-Kaur Se Kya Hum Ko Sarokar!

Bola Meh-e-Kamil Ke Woh Koukab Hai Zameeni
Tum Shab Ko Namoodar Ho, Woh Din Ko Namoodar

Waqif Ho Agar Lazzat-e-Baidari Shab Se
Unchi Hai Surayya Se Bhi Ye Khak-e-Pur-Asrar

Aghosh Mein Iss Ki Woh Tajali Hai Ke Jis Mein
Kho Jaen Ge Aflak Ke Sub Sabit-o-Sayyar

Na-Gah Faza Bang-e-Azan Se Huwi Lab-Raiz
Woh Naara Ke Hil Jata Hai Jis Se Dil-e-Kuhsar!

-----------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP