Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

فرشتے آدم کو جنت سے رخصت کرتے ہيں

 

عطا ہوئی ہے تجھے روزوشب کی بيتابی
خبر نہيں کہ تو خاکی ہے يا کہ سيمابی
سنا ہے ، خاک سے تيری نمود ہے ، ليکن
تری سرشت ميں ہے کوکبی و مہ تابی
جمال اپنا اگر خواب ميں بھی تو ديکھے
ہزار ہوش سے خوشتر تری شکر خوابی
گراں بہا ہے ترا گريۂ سحر گاہی
اسی سے ہے ترے نخل کہن کی شادابی
تری نوا سے ہے بے پردہ زندگی کا ضمير
کہ تيرے ساز کی فطرت نے کی ہے مضرابی

---------------------------

Translitration

Atta Huwi Hai Tujhe Roz-o-Shab Ki Betabi
Khabar Nahin Ke Tu Khaki Hai Ye Ke Seemabi

Suna Hai, Khak Se Teri Namood Hai, Lekin
Teri Sarisht Mein Hai Kokabi-o-Mehtabi

Jamal Apna Agar Khawab Mein Bhi Tu Dekhe
Hazar Hosh Se Khushtar Teri Shukar Khawabi

Garan Baha Hai Tera Girya-e-Sehargahi
Issi Se Hai Tere Nakhl-e-Kuhan Ki Shadabi

Teri Nawa Se Hai Be-Parda Zindagi Ka Zameer
Ke Tere Saaz Ki Fitrat Ne Ki Hai Mizrabi

--------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP