Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

مسجد قرطبہ

 

ہسپانيہ کی سرزمين ، بالخصوص قرطبہ ميں لکھی گئی


سلسلہ روز و شب ، نقش گر حادثات
سلسلہ روز و شب ، اصل حيات و ممات
سلسلہ روز و شب ، تار حرير دو رنگ
جس سے بناتی ہے ذات اپنی قبائے صفات

سلسلہ روز و شب ، ساز ازل کی فغاں
جس سے دکھاتی ہے ذات زيروبم ممکنات
تجھ کو پرکھتا ہے يہ ، مجھ کو پرکھتا ہے يہ
سلسلہ روز و شب ، صيرفی کائنات

تو ہو اگر کم عيار ، ميں ہوں اگر کم عيار
موت ہے تيری برات ، موت ہے ميری برات
تيرے شب وروز کی اور حقيقت ہے کيا
ايک زمانے کی رو جس ميں نہ دن ہے نہ رات

آنی و فانی تمام معجزہ ہائے ہنر
کار جہاں بے ثبات ، کار جہاں بے ثبات
اول و آخر فنا ، باطن و ظاہر فنا
نقش کہن ہو کہ نو ، منزل آخر فنا

ہے مگر اس نقش ميں رنگ ثبات دوام
جس کو کيا ہو کسی مرد خدا نے تمام
مرد خدا کا عمل عشق سے صاحب فروغ
عشق ہے اصل حيات ، موت ہے اس پر حرام

تند و سبک سير ہے گرچہ زمانے کی رو
عشق خود اک سيل ہے ، سيل کو ليتاہے تھام
عشق کی تقويم ميں عصررواں کے سوا
اور زمانے بھی ہيں جن کا نہيں کوئی نام

عشق دم جبرئيل ، عشق دل مصطفی
عشق خدا کا رسول ، عشق خدا کا کلام
عشق کی مستی سے ہے پيکر گل تابناک
عشق ہے صہبائے خام ، عشق ہے کاس الکرام

عشق فقيہ حرم ، عشق امير جنود
عشق ہے ابن السبيل ، اس کے ہزاروں مقام
عشق کے مضراب سے نغمہ تار حيات
عشق سے نور حيات ، عشق سے نار حيات

اے حرم قرطبہ! عشق سے تيرا وجود
عشق سراپا دوام ، جس ميں نہيں رفت و بود
رنگ ہو يا خشت و سنگ ، چنگ ہو يا حرف و صوت
معجزہ فن کی ہے خون جگر سے نمود

قطرہ خون جگر ، سل کو بناتا ہے دل
خون جگر سے صدا سوز و سرور و سرود
تيری فضا دل فروز ، ميری نوا سينہ سوز
تجھ سے دلوں کا حضور ، مجھ سے دلوں کی کشود

عرش معلی سے کم سينہ آدم نہيں
گرچہ کف خاک کی حد ہے سپہر کبود
پيکر نوری کو ہے سجدہ ميسر تو کيا
اس کو ميسر نہيں سوز و گداز سجود

کافر ہندی ہوں ميں ، ديکھ مرا ذوق و شوق
دل ميں صلوہ و درود ، لب پہ صلوہ و درود
شوق مری لے ميں ہے ، شوق مری نے ميں ہے
نغمہ 'اللہ ھو' ميرے رگ و پے ميں ہے

تيرا جلال و جمال ، مرد خدا کی دليل
وہ بھی جليل و جميل ، تو بھی جليل و جميل
تيری بنا پائدار ، تيرے ستوں بے شمار
شام کے صحرا ميں ہو جيسے ہجوم نخيل

تيرے در و بام پر وادی ايمن کا نور
تيرا منار بلند جلوہ گہ جبرئيل
مٹ نہيں سکتا کبھی مرد مسلماں کہ ہے
اس کی اذانوں سے فاش سر کليم و خليل

اس کی زميں بے حدود ، اس کا افق بے ثغور
اس کے سمندر کی موج ، دجلہ و دنيوب و نيل
اس کے زمانے عجيب ، اس کے فسانے غريب
عہد کہن کو ديا اس نے پيام رحيل

ساقی ارباب ذوق ، فارس ميدان شوق
بادہ ہے اس کا رحيق ، تيغ ہے اس کی اصيل
مرد سپاہی ہے وہ اس کی زرہ 'لا الہ'
سايہ شمشير ميں اس کہ پنہ 'لا الہ'

تجھ سے ہوا آشکار بندہ مومن کا راز
اس کے دنوں کی تپش ، اس کی شبوں کا گداز
اس کا مقام بلند ، اس کا خيال عظيم
اس کا سرور اس کا شوق ، اس کا نياز اس کا ناز

ہاتھ ہے اللہ کا بندۂ مومن کا ہاتھ
غالب و کار آفريں ، کارکشا ، کارساز
خاکی و نوری نہاد ، بندہ مولا صفات
ہر دو جہاں سے غنی اس کا دل بے نياز

اس کی اميديں قليل ، اس کے مقاصد جليل
اس کی ادا دل فريب ، اس کی نگہ دل نواز
نرم دم گفتگو ، گرم دم جستجو
رزم ہو يا بزم ہو ، پاک دل و پاک باز

نقطہ پرکار حق ، مرد خدا کا يقيں
اور يہ عالم تمام وہم و طلسم و مجاز
عقل کی منزل ہے وہ ، عشق کا حاصل ہے وہ
حلقہ آفاق ميں گرمی محفل ہے وہ

کعبہ ارباب فن! سطوت دين مبيں
تجھ سے حرم مرتبت اندلسيوں کی زميں
ہے تہ گردوں اگر حسن ميں تيری نظير
قلب مسلماں ميں ہے ، اور نہيں ہے کہيں

آہ وہ مردان حق! وہ عربی شہسوار
حامل ' خلق عظيم' ، صاحب صدق و يقيں
جن کی حکومت سے ہے فاش يہ رمز غريب
سلطنت اہل دل فقر ہے ، شاہی نہيں

جن کی نگاہوں نے کی تربيت شرق و غرب
ظلمت يورپ ميں تھی جن کی خرد راہ بيں
جن کے لہو کے طفيل آج بھی ہيں اندلسی
خوش دل و گرم اختلاط ، سادہ و روشن جبيں

آج بھی اس ديس ميں عام ہے چشم غزال
اور نگاہوں کے تير آج بھی ہيں دل نشيں
بوئے يمن آج بھی اس کی ہواؤں ميں ہے
رنگ حجاز آج بھی اس کی نواؤں ميں ہے

ديدہ انجم ميں ہے تيری زميں ، آسماں
آہ کہ صديوں سے ہے تيری فضا بے اذاں
کون سی وادی ميں ہے ، کون سی منزل ميں ہے
عشق بلا خيز کا قافلہ سخت جاں

ديکھ چکا المنی ، شورش اصلاح ديں
جس نے نہ چھوڑے کہيں نقش کہن کے نشاں
حرف غلط بن گئی عصمت پير کنشت
اور ہوئی فکر کی کشتی نازک رواں

چشم فرانسيس بھی ديکھ چکی انقلاب
جس سے دگرگوں ہوا مغربيوں کا جہاں
ملت رومی نژاد کہنہ پرستی سے پير
لذت تجديد سے وہ بھی ہوئی پھر جواں

روح مسلماں ميں ہے آج وہی اضطراب
راز خدائی ہے يہ ، کہہ نہيں سکتی زباں
ديکھيے اس بحر کی تہ سے اچھلتا ہے کيا
گنبد نيلو فری رنگ بدلتا ہے کيا

وادی کہسار ميں غرق شفق ہے سحاب
لعل بدخشاں کے ڈھير چھوڑ گيا آفتاب
سادہ و پرسوز ہے دختر دہقاں کا گيت
کشتی دل کے ليے سيل ہے عہد شباب

آب روان کبير! تيرے کنارے کوئی
ديکھ رہا ہے کسی اور زمانے کا خواب
عالم نو ہے ابھی پردہ تقدير ميں
ميری نگاہوں ميں ہے اس کی سحر بے حجاب

وادا لکبير، قرطبہ کا مشہور دريا جس کے قريب ہی مسجد قرطبہ واقع ہے

پردہ اٹھا دوں اگر چہرۂ افکار سے
لا نہ سکے گا فرنگ ميری نواؤں کی تاب
جس ميں نہ ہو انقلاب ، موت ہے وہ زندگی
روح امم کی حيات کشمکش انقلاب

صورت شمشير ہے دست قضا ميں وہ قوم
کرتی ہے جو ہر زماں اپنے عمل کا حساب
نقش ہيں سب ناتمام خون جگر کے بغير
نغمہ ہے سودائے خام خون جگر کے بغير

-------------------------

Translitration

Silsalah-E-Roz-O-Shab, Naqsh Gar-E-Hadsaat
Silsalah-E-Roz-O-Shab, Asal-E-Hayat-O-Mamaat

Silsalah-E-Roz-O-Shab, Taar-E-Hareer-E-Do Rang
Jis Se Banati Hai Zaat Apni Qaba’ay Sifat

Silsalah-E-Roz-O-Shab, Saaz-E-Azal Ki Faghan
Jis Se Dikhati Hai Zaat Zair-O-Bam-E-Mumkinaat

Tujh Ko Parakhta Hai Ye, Mujh Ko Parakhta Hai Ye
Silsalah-E-Roz-O-Shab, Sayr Fee Kainat

Tu Ho Agar Kam Ayaar, Main Hun Agar Kam Ayaar
Mout Hai Teri Baraat, Mout Hai Meri Baraat

Tere Shab-O-Roz Ki Aur Haqiqat Hai Kya
Aik Zamane Ki Ro Jis Mein Na Din Hai Na Raat

Aani –O-Fani Tamam Mojazaat  Haye Gunar
Kaar-E-Jahan Be-Sabaat, Kaar-E-Jahan Be-Sabaat!

Awwal-O-Akhir Fana, Batin-O-Zahir Fana
Naqsh-E-Kuhan Ho Ke Nau, Manzil-E-Akhir Fana

Hai Magar Iss Naqsh Mein Rang-E-Sabaat-E-Dawam
Jis Ko Kiya Ho Kisi Mard-E-Khuda Ne Tamam

Mard-E-Khuda Ka Amal Ishq Se Sahib Firogh
Ishq Hai Asal-E-Hayat, Mout Hai Iss Par Haraam

Tund-O-Subak Sair Hai Gharcha Zamane Ki Ro
Ishq Khud Ek Sayl Hai, Sayl Ko Leta Hai Thaam

Ishq Ki Taqweem Mein Asar-E-Rawan Ke Sawa
Aur Zamane Bhi Hain Jin Ka Nahin Koi Naam

Ishq Dam-E-Jibreel, Ishq Dam-E-Mustafa (S.A.W.).
Ishq Khuda Ka Rasool, Ishq Khuda Ka Kalaam

Ishq Ki Masti Se Hai Paikar-E-Gil Taabnaak
Ishq Hai  Sehba’ay Khaam, Ishq Hai Kaas-Ul-Kiraam

Ishq Faqeeh-E-Haram, Ishq Ameer Junood
Ishq Hai Ibn-Ul-Sabeel, Iss Ke Hazaron Maqam

Ishq Ke Mizraab Se Naghma’ay Taar-E-Hayat
Ishq Se Noor-E-Hayat, Ishq Se Naar-E-Hayat

Ae Haram-E-Qurtuba! Ishq Se Tera Wujood
Ishq Sarapa Dawam, Jis Mein Nahin Raft-o-Bood

Rang Ho Ya Khisht-o-Sang, Chang Ho Ya Harf-o-Soot
Moajaza-E-Fan Ki Hai Khoon-E-Jigar Se Namood

Katra-E-Khoon-E-Jigar Sil Ko Banata Hai Dil
Khoon-E-Jigar Se Sada Souz-o-Suroor-o-Surood

Teri Fiza Dil Faroz , Meri Nawa Sina Soz
Tujh Se Dilon Ka Huzoor, Mujh Se Dilon Ki Kushood

Arsh-E-Muala Se Kam Sina’ay Adam Nahin
Garche Kaf-Ekhak Ki Had Hai Sipihr-E-Kubood

Pekar-E-Noori Ko Hai Sajda Meyasir To Kya
Iss Ko Meyasir Nahin Soz-O-Gudaaz-E-Sujood

Kafir-E-Hindi Hun Main, Dekh Mera Zauq-O-Shauq
Dil Mein Salat-O-Durood, Lab Pe Salat-O-Durood

Shauq Meri Le Main Hai, Shauq Meri Ne Mein Hai
Naghma’ay ‘ALLAH HOO’ Mere Rag-E-Pe Mein Hai

Tera Jalal-O-Jamal, Mard-E-Khuda Ki Daleel
Woh Bhi Jaleel-O-Jameel, Tu Bhi Jaleel-O-Jameel

Teri Bina Paidar, Tere Sutoon Be-Shumar
Sham Ke Sehra Mein Ho Jaise Hujoom-E-Nakheel

Tere Dar-O-Baam Par Wadi-E-Ayman Ka Noor
Tera Minaar-E-Buland Jalwagah-E-Jibreel

Mit Nahin Sakta Kabhi Mard-E-Musalman Ke Hai
Iss Ki Azanon Se Fash Sir-E-Kaleem(A.S.)-O-Khalil(A.S.)

Iss Ki Zameen Behadood, Is Ka Ufaq Be Sooghoor
Iss Ke Samundar Ki Mouj, Dajla-O-Danyob-O-Neel

Iss Ke Zamane Ajeeb, Iss Ke Fasane Ghareeb
Ehad-E-Kuhan Ko Diya Iss Ne Payam-E-Raheel

Saqi Arbab-E-Zauq, Faris-E-Maidan-E-Shauq
Badah Hai Iss Ka Raheeq, Taeg Hai Iss Ki Aseel

Mard-E-Sipahi Hai Woh, Iski Zirah ‘LA ILAHA’
Saya-E-Shamsheer Mein Is Ski Panah ‘LA ILAHA’

Tujh Se Huwa Ashkara Banda-E-Momin Ka Raaz
Iss Ke Dino Ki Tapish, Is Ke Shabon Ka Gudaaz

Iss Ka Maqam Buland, Iss Ka Khayal Azeem
Iss Ka Suroor Iss Ka Shauq, Iss Ka Niaz Iss Ka Naaz

Hath Hai ALLAH Ka Banda-E-Momin Ka Hath
Ghalib-O-Kaar Afreen, Kaar Kusha, Kaar Saaz

Khaki-O-Noori Nihad, Banda-E-Mola Sifat
Har Do Jahan Se Ghani Iss Ka Dil-E-Beniaz

Uss Ki Umeedain Qaleel, Uss Ke Maqasid Jaleel
Uss Ki Ada Dil Faraib, Iss Ki Nigah Dil Nawaz

Naram Dam-E-Guftugoo, Garam Dam-E-Justujoo
Razm Ho Ya Bazm Ho, Pak Dil-O-Pak Baz

Nukta’ay Parkar-E-Haq, Mard-E-Khuda Ka Yaqeen
Aur Ye Alam Tamam Weham-O-Tilism-O-Majaz

Aqal Ki Manzil Hai Woh, Ishq Ka Hasil Hai Woh
Halqa’ay Afaq Mein Garmi-E-Mehfil Hai Woh

Kaaba Arbab-E-Fan! Sitwat-E-Deen-E-Mubeen
Tujh Se Haram Martabat Andlusiyon Ki Zameen

Hai Teh-E-Gardoon Agar Husn Mein Teri Nazeer
Qalb-E-Musalman Mein Hai, Aur Nahin Hai Kahin

Aah Woh Mardan-E-Haq! Woh Arabi Shehsawar
Hamil-E-Khulq-E-Azeem, Sahib-E-Sidq-O-Yaqeen

Jin Ki Hukumat Se Hai Fash Ye Ramz-E-Ghareeb
Saltanat Ahl-E-Dil Faqar Hai, Shahi Nahin

Jin Ki Nigahon Ne Ki Tarbiat-E-Sharq-O-Gharb
Zulmat-E-Yorap Mein Thi Jin Khird Rah Been

Jin Ke Lahoo Ki Tafail Aaj Bhi Hain Andlasi
Khush Dil-O-Garam Ikhtalaat, Sada-O-Roshan Jabeen

Aaj Bhi Iss Dais Mein Aam Hai Chasm-E-Ghazaal
Aur Nigahon Ke Teer Aaj Bhi Hain Dil Nasheen

Boo’ay Yaman Aaj Bhi Is Ski Hawaon Mein Hai
Rang-E-Hijaz Aaj Bhi Iss Ki Nawaon Mein Hai

Didah-E-Anjum Mein Hai Teri Zameen, Asman
Aah Ke Sadiyon Se Hai Teri Faza Be-Azan

Kon Se Wadi Mein Hai, Kon Si Manzil Mein Hai
Ishq-E-Bala Khaiz Ka Kafla’ay Sakht Jaan!

Dekh Chuka Almani, Shorish-E-Islah-E-Deen
Jis Ne Na Chore Kahin Naqsh-E-Kuhan Ke Nishan

Harf-E-Galat Ban Gyi Ismat-E-Peer-E-Kunisht
Aur Huwi  Fikar Ki Kashti-E-Nazuk Rawan

Chashme-E-Francis Bhi Dekh Chuki Inqilab
Jis Se Digargoon Huwa Magribiyon Ka Jahan

Millat-E-Roomi Nazad Kuhna Prasti Se Peer
Lazzat-E-Tajdeed Se Woh Bhi Huwi Phir Jawan

Rooh-E-Musalman Mein Hai Aaj Wohi Iztarab
Raaz-E-Khudai Hai Ye, Keh Nahin Sakti Zuban

Dekhiye Iss Behar Ki Teh Se Uchalta Hai Kya
Gunbad-E-Nilofari Rang Badalta Hai Kya!

Wadi-E-Kuhsaar Mein Garaq-E-Shafaq Hai Sahab
La’al-E-Badkhashan Ke Dhair Chor Gya Aftab

Sada-O-Pursoz Hai Dukhtar-E-Dehqan Ka Geet
Kashti-E-Dil Ke Liye Sayl Hai Ehad-E-Shaba

Aab-E-Rawan-E-Kabeer ! Tere Kinare Koi
Dekh Raha Hai Kisi Aur Zamane Ka Khawab

Alam-E-Nau Hai Abhi Parda’ay Taqdeer Mein
Meri Nigahon Mein Hai Iss Ki Sehar Behijab

Parda Utha Doon Agar Chehra’ay Afkar Se
La Na Sake Ga Farang Meri Nawa’on Ki Taab

Jis Mein Na Ho Inqilab, Mout Hai Woh Zindagi
Rooh-E-Ummam Ki Hayat Kashmakash-E-Inqilab

Soorat-E-Shamsheer Hai Dast-E-Qaza Mein Woh Qaum
Karti Hai Jo Har Zaman Apne Amal Ka Hisaab

Naqsh Hain Sub Na-Tamam Khoon-E-Jigar Ke Begair
Naghma Hai Soda’ay Kham Khoon-E-Jigar Ke Begair

--------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP