Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

ايک نوجوان کے نام

 


ترے صوفے ہيں افرنگی ، ترے قاليں ہيں ايرانی
لہو مجھ کو رلاتی ہے جوانوں کی تن آسانی
امارت کيا ، شکوہ خسروی بھی ہو تو کيا حاصل
نہ زور حيدری تجھ ميں ، نہ استغنائے سلمانی

نہ ڈھونڈ اس چيز کو تہذيب حاضر کی تجلی ميں
کہ پايا ميں نے استغنا ميں معراج مسلمانی

عقابی روح جب بيدار ہوتی ہے جوانوں ميں
نظر آتی ہے اس کو اپنی منزل آسمانوں ميں
نہ ہو نوميد ، نوميدی زوال علم و عرفاں ہے
اميد مرد مومن ہے خدا کے راز دانوں ميں

نہيں تيرا نشيمن قصر سلطانی کے گنبد پر
تو شاہيں ہے ، بسيرا کر پہاڑوں کی چٹانوں ميں

---------------------------

Translitration

Tere Sofe Hain Afarangi, Tere Qaleen Hain Irani
Lahoo Mujh Ko Rulati Hai Jawanon Ki Tan Asani

Amarat Kya, Shikoh-e-Khusrawi Bhi Ho To Kya Hasil
Na Zor-e-Haidari Tujh Mein, Na Istaghna-e-Salmani

Na Dhoond Iss Cheez Ko Tezeeb-e-Hazir Ki Tajali Mein
Ke Paya Man Ne Istaghna Mein Meeraj-e-Musalmani

Auqabi Rooh Jab Baidar Hoti Hai Jawanon Mein
Nazar Ati Hai Iss Ko Apni Manzil Asmanon Mein

Na Ho Naumeed, Naumeedi Zawal-e-Ilm-o-Irfan Hai
Umeed-e-Mard-e-Momin Hai Khuda Ke Raazdanon Mein

Nahin Tera Nasheman Qasr-e-Sultani Ke Gunbad Par
Tu Shaheen Hai, Basera Kar Paharon Ki Chatanon Mein

--------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP