Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

پنچاب کےپيرزادوں سے

 

حاضر ہوا ميں شيخ مجدد کي لحد پر
وہ خاک کہ ہے زير فلک مطلع انوار
اس خاک کے ذروں سے ہيں شرمندہ ستارے
اس خاک ميں پوشيدہ ہے وہ صاحب اسرار
گردن نہ جھکي جس کي جہانگير کے آگے
جس کے نفس گرم سے ہے گرمي احرار
وہ ہند ميں سرمايہء ملت کا نگہباں
اللہ نے بر وقت کيا جس کو خبردار
کي عرض يہ ميں نے کہ عطا فقر ہو مجھ کو
آنکھيں مري بينا ہيں ، و ليکن نہيں بيدار
آئي يہ صدا سلسلہء فقر ہوا بند
ہيں اہل نظر کشور پنجاب سے بيزار
عارف کا ٹھکانا نہيں وہ خطہ کہ جس ميں
پيدا کلہ فقر سے ہو طرئہ دستار

باقي کلہ فقر سے تھا ولولہء حق
طروں نے چڑھايا نشہء 'خدمت سرکار

----------------------


Translitration

Hazir Huwa Main Sheikh-e-Mujadid (R.A.) Ki Lehad Par
Woh Khak Ke Hai Zair-e-Falak Matla-e-Anwar

Iss Khak Ke Zarron Se Hain Sharminda Sitare
Iss Khak Main Poshida Hai Woh Sahib-e-Asrar

Gardan Na Jhuki Jis Ki Jhangeer Ke Agay
Jis Ke Nafs-e-Garam Se Hai Garmi-e-Arhar

Woh Hind Mein Sarmaya-e-Millat Ka Negheban
Allah Ne Barwaqt Kiya Jis Ko Khabardar

Ki Arz Ye Main Ne Ke Atta Faqr Ho Mujh Ko
Ankhain Meri Beena Hain, Walekin Nahi Baidar!

Ayi Ye Sada Silsila-e-Faqr Huwa Band
Hain Ahl-e-Nazar Kishwar-e-Punjab Se Bezar

Arif Ka Thikana Nahin Woh Khitta Ke Jis Mein
Paida Kulah-e-Faqr Se Ho Turra-e-Dastar

Baqi Kula-e-Faqr Se Tha Walwala-e-Haq
Turron  Ne Charhaya Nasha-e-‘Khidmat-e-Sarkar’!

--------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP