Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

لينن - خدا کے حضور ميں

 

اے انفس و آفاق ميں پيدا ترے آيات
حق يہ ہے کہ ہے زندہ و پائندہ تری ذات
ميں کيسے سمجھتا کہ تو ہے يا کہ نہيں ہے
ہر دم متغير تھے خرد کے نظريات
محرم نہيں فطرت کے سرود ازلی سے
بينائے کواکب ہو کہ دانائے نباتات
آج آنکھ نے ديکھا تو وہ عالم ہوا ثابت
ميں جس کو سمجھتا تھا کليسا کے خرافات
ہم بند شب و روز ميں جکڑے ہوئے بندے
تو خالق اعصار و نگارندہ آنات
اک بات اگر مجھ کو اجازت ہو تو پوچھوں
حل کر نہ سکے جس کو حکيموں کے مقالات
جب تک ميں جيا خيمہ افلاک کے نيچے
کانٹے کی طرح دل ميں کھٹکتی رہی يہ بات
گفتار کے اسلوب پہ قابو نہيں رہتا
جب روح کے اندر متلاطم ہوں خيالات
وہ کون سا آدم ہے کہ تو جس کا ہے معبود
وہ آدم خاکی کہ جو ہے زير سماوات؟
مشرق کے خداوند سفيدان فرنگی
مغرب کے خداوند درخشندہ فلزات
يورپ ميں بہت روشنی علم و ہنر ہے
حق يہ ہے کہ بے چشمہ حيواں ہے يہ ظلمات
رعنائی تعمير ميں ، رونق ميں ، صفا ميں
گرجوں سے کہيں بڑھ کے ہيں بنکوں کی عمارات
ظاہر ميں تجارت ہے ، حقيقت ميں جوا ہے
سود ايک کا لاکھوں کے ليے مرگ مفاجات
يہ علم ، يہ حکمت ، يہ تدبر ، يہ حکومت
پيتے ہيں لہو ، ديتے ہيں تعليم مساوات
بے کاری و عريانی و مے خواری و افلاس
کيا کم ہيں فرنگی مدنيت کے فتوحات
وہ قوم کہ فيضان سماوی سے ہو محروم
حد اس کے کمالات کی ہے برق و بخارات
ہے دل کے ليے موت مشينوں کی حکومت
احساس مروت کو کچل ديتے ہيں آلات
آثار تو کچھ کچھ نظر آتے ہيں کہ آخر
تدبير کو تقدير کے شاطر نے کيا مات
ميخانے کی بنياد ميں آيا ہے تزلزل
بيٹھے ہيں اسی فکر ميں پيران خرابات
چہروں پہ جو سرخی نظر آتی ہے سر شام
يا غازہ ہے يا ساغر و مينا کی کرامات
تو قادر و عادل ہے مگر تيرے جہاں ميں
ہيں تلخ بہت بندہ مزدور کے اوقات
کب ڈوبے گا سرمايہ پرستی کا سفينہ؟
دنيا ہے تری منتظر روز مکافات

---------------------------

Translitration

Ae Anfus-o-Afaq Mein Paida Tere Ayaat
Haq Ye Hai Ke Hai Zinda-o-Paenda Teri Zaat

Main Kaise Samajhta Ke Tu Hai Ya Ke Nahin Hai
Har Dam Mutaghyyar The Khird Ke Nazariyat

Mehram Nahin Fitrat Ke Sarood-e-Azali Se
Beenaye Kawakib Ho Ke Dana’ay Nabataat

Aj Ankh Ne Dekha To Woh Alam Huwa Sabit
Main Jis Ko Samajhta Tha Kalisa Ke Khurafat

Ek Baat Agar Mujh Ko Ijazat Ho To Puchun
Hal Kar Na Sake Jis Ko Hakeemon Ke Maqalat

Jab Tak Mein Jiya Khaima-e-Aflak Ke Neeche
Kante Ki Tarah Dil Mein Khatakti Rahi Ye Baat

Guftar Ke Asloob Pe Qaboo Nahin Rehta
Jab Rooh Ke Andar Mutaltum Hon Khayalat

Woh Kon Sa Adam Hai Ke Tu Jis Ka Maabood
Woh Adam-e-Khaki Ke Jo Hai Zair-e-Samawat?

Mashriq Ke Khudawand Saifedan-e-Farangi
Maghrib Ke Khudawand Darakhshandah Filzaat

Yourap Mein Bohat Roshani-e-Ilm-o-Hunar Hai
Haq Ye Hai Ke Be-Chashma’ay Haiwan Hai Ye Zulmat

Raanayi-e-Tameer Mein, Ronaq Mein, Safa Mein
Girjon Se Kahin Barh Ke Hain Bankon Ki Amarat

Zahir Mein Tajarat Hai, Haqiqat Mein Juwa Hai
Sood Aik Ka Lakhon Ke Liye Marg-e-Mafajat

Ye Ilm, Ye Hikmat, Ye Tadabur, Ye Hukumat
Peete Hain Lahoo, Dete Hain Taleem-e-Masawat

Bekari-o-Uryani-o-Maikhawari-o-Iflaas
Kya Kaam Hain Farangi Madniyat Ke Fatuhaat

Woh Qoum Ke Faizan-e-Samawi Se Ho Mehroom
Had Uss Ke Kamalaat Ki Hai Barq-o-Bukharaat

Hai Dil Ke Liye Mout Machinon Ki Hukumat
Ehsas-e-Marawwat Ko Kuchal Dete Hain Aalaat

Asaar To Kuch Kuch Nazar Ate Hain Ke Akhir
Tadbeer Ko Taqdeer Ke Shatar Ne Kiya Maat

Maikhane Ki Bunyad Mein Aya Hai Tazalzul
Baithe Hain Issi Fikar Mein Peeran-e-Kharabat

Chehron Pe Jo Surkhi Nazar Ati Hai Sar-e-Shaam
Ya Ghazah Hai Ya Saghir-o-Meena Ki Karamat

Tu Qadir-o-Adil Hai Magar Tere Jahan Mein
Hain Talakh Bohat Banda’ay Mazdoor Ke Auqat

Kab Doobe Ga Sarmaya Prasti Ka Safina?
Dunya Hai Teri Muntazir-e-Roz-e-Makafat !

--------------------------

 

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP