Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

پاني ترے چشموں کا تڑپتا ہوا سيماب

پاني ترے چشموں کا تڑپتا ہوا سيماب
مرغان سحر تيري فضاؤں ميں ہيں بيتاب

اے وادي لولاب

گر صاحب ہنگامہ نہ ہو منبر و محراب
ديں بندئہ مومن کے ليے موت ہے يا خواب

اے وادي لولاب

ہيں ساز پہ موقوف نوا ہائے جگر سوز
ڈھيلے ہوں اگر تار تو بے کار ہے مضراب

اے وادي لولاب

ملا کي نظر نور فراست سے ہے خالي
بے سوز ہے ميخانہء صوفي کي مے ناب

اے وادي لولاب

بيدار ہوں دل جس کي فغان سحري سے
اس قوم ميں مدت سے وہ درويش ہے ناياب

اے وادي لولاب

IIS Logo

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP