Menu

A+ A A-

ہر اک مقام سے آگے گزر گيا مہ نو


ہر اک مقام سے آگے گزر گيا مہ نو
کمال کس کو ميسر ہوا ہے بے تگ و دٔو!
نفس کے زور سے وہ غنچہ وا ہوا بھی تو کيا
جسے نصيب نہيں آفتاب کا پرتو
نگاہ پاک ہے تيری تو پاک ہے دل بھی
کہ دل کو حق نے کيا ہے نگاہ کا پيرو
پنپ سکا نہ خياباں ميں لالہ دل سوز
کہ ساز گار نہيں يہ جہان گندم و جو
رہے نہ ايبک و غوری کے معرکے باقی
ہميشہ تازہ و شيريں ہے نغمہ خسرو

IIS Logo

Dervish Designs Online

IQBAL DEMYSTIFIED - Andriod and iOS 

          Image may contain: 2 people, text