Menu

A+ A A-

صبح چمن

 

پھول

شايد تو سمجھتي تھي وطن دور ہے ميرا
اے قاصد افلاک! نہيں ، دور نہيں ہے


شبنم

ہوتا ہے مگر محنت پرواز سے روشن
يہ نکتہ کہ گردوں سے زميں دور نہيں ہے


صبح

مانند سحر صحن گلستاں ميں قدم رکھ
آئے تہ پا گوہر شبنم تو نہ ٹوٹے
ہو کوہ و بياباں سے ہم آغوش ، و ليکن
ہاتھوں سے ترے دامن افلاک نہ چھوٹے

IIS Logo

Dervish Designs Online

IQBAL DEMYSTIFIED - Andriod and iOS 

          Image may contain: 2 people, text