Menu

A+ A A-

کيا چرخ کج رو ، کيا مہر ، کيا ماہ

 

کيا چرخ کج رو ، کيا مہر ، کيا ماہ
سب راہرو ہيں واماندہ راہ
کڑکا سکندر بجلي کي مانند
تجھ کو خبر ہے اے مرگ ناگاہ
نادر نے لوٹي دلي کي دولت
اک ضرب شمشير ، افسانہ کوتاہ
افغان باقي ، کہسار باقي
الحکم للہ ! الملک للہ
حاجت سے مجبور مردان آزاد
کرتي ہے حاجت شيروں کو روباہ
محرم خودي سے جس دم ہوا فقر
تو بھي شہنشاہ ، ميں بھي شہنشاہ

قوموں کي تقدير وہ مرد درويش
جس نے نہ ڈھونڈي سلطاں کي درگاہ

IIS Logo

Dervish Designs Online

IQBAL DEMYSTIFIED - Andriod and iOS 

          Image may contain: 2 people, text