Menu

A+ A A-

سرود

 

آيا کہاں سے نالہ نے ميں سرود مے
اصل اس کي نے نواز کا دل ہے کہ چوب نے
دل کيا ہے ، اس کي مستي و قوت کہاں سے ہے
کيوں اس کي اک نگاہ الٹتي ہے تخت کے
کيوں اس کي زندگي سے ہے اقوام ميں حيات
کيوں اس کے واردات بدلتے ہيں پے بہ پے
کيا بات ہے کہ صاحب دل کي نگاہ ميں
جچتي نہيں ہے سلطنت روم و شام و رے

جس روز دل کي رمز مغني سمجھ گيا
سمجھو تمام مرحلہ ہائے ہنر ہيں طے

IIS Logo

Dervish Designs Online

IQBAL DEMYSTIFIED - Andriod and iOS 

          Image may contain: 2 people, text