Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

جہاد

 

فتویِِ' ہے شيخ کا يہ زمانہ قلم کا ہے
دنيا ميں اب رہی نہيں تلوار کارگر

ليکن جناب شيخ کو معلوم کيا نہيں؟
مسجد ميں اب يہ وعظ ہے بے سود و بے اثر

تيغ و تفنگ دست مسلماں ميں ہے کہاں
ہو بھی، تو دل ہيں موت کی لذت سے بے خبر

کافر کی موت سے بھی لرزتا ہو جس کا دل
کہتا ہے کون اسے کہ مسلماں کی موت مر

تعليم اس کو چاہيے ترک جہاد کی
دنيا کو جس کے پنجہ خونيں سے ہو خطر

باطل کی فال و فر کی حفاظت کے واسطے
يورپ زدہ ميں ڈوب گيا دوش تا کمر

ہم پوچھتے ہيں شيخ کليسا نواز سے
مشرق ميں جنگ شر ہے تو مغرب ميں بھی ہے شر

حق سے اگر غرض ہے تو زيبا ہے کيا يہ بات
اسلام کا محاسبہ، يورپ سے درگزر

---------------

Transliteration

Jihad 

  

Fatwa Hai Sheikh Ka Ye Zamana Qalam Ka
HaiDunya Mein Ab Rahi Nahin Talwar Kargar
 
Lekin Janab-e-Sheikh Ko Maloom Kya Nahin?
Masjid Mein Ab Ye Waaz Hai Besood-o-Be-Asar
 
 
Taeg-o-Tufnag Dast-e-Musalman Mein Hai Kahan
Ho Bhi, To Dil Hain Mout Ki Lazzat Se Be-Khabar
 
Kafir Kimout Se Bhi Larazta Ho Jis Ka Dil
Kehta Hai Kon Usse Ke Musalman Ki Mout Mer
 
 
Taleem Uss Ko Chahye Tark-e-Jahad Ki
Dunya Ko Jis Ke Panja-e-Khoonain Se Ho Khatar
 
 
Batil Ke Faal-o-Far Ki Hafazat Ke Waste
Yourap Zira Mein Doob Gya Dosh Ta Kamar
 
Hum Poochte Hain Sheikh-e-Kalisa Nawaz Se
Mashriq Mein Jang Shar Hai To Maghrib Mein Bhi Hai Shar
 
 
Haq Se Agar Gharz Hai To Zaiba Hai Kya Ye Baat
Islam Ka Muhasiba, Yourap Se Darguzar!

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP