Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

چمک تيري عياں بجلي ميں ، آتش ميں ، شرارے ميں

 

چمک تيري عياں بجلي ميں ، آتش ميں ، شرارے ميں
جھلک تيري ہويدا چاند ميں ،سورج ميں ، تارے ميں
بلندي آسمانوں ميں ، زمينوں ميں تري پستي
رواني بحر ميں ، افتادگي تيري کنارے ميں
شريعت کيوں گريباں گير ہو ذوق تکلم کي
چھپا جاتا ہوں اپنے دل کا مطلب استعارے ميں
جو ہے بيدار انساں ميں وہ گہري نيند سوتا ہے
شجر ميں ، پھول ميں ، حيواں ميں ، پتھر ميں ، ستارے ميں
مجھے پھونکا ہے سوز قطرہء اشک محبت نے
غضب کي آگ تھي پاني کے چھوٹے سے شرارے ميں
نہيں جنس ثواب آخرت کي آرزو مجھ کو
وہ سوداگر ہوں ، ميں نے نفع ديکھا ہے خسارے ميں
سکوں نا آشنا رہنا اسے سامان ہستي ہے
تڑپ کس دل کي يا رب چھپ کے آ بيٹھي ہے پارے ميں
صدائے لن تراني سن کے اے اقبال ميں چپ ہوں
تقاضوں کي کہاں طاقت ہے مجھ فرقت کے مارے ميں
 
---------------
 
Transliteration
 
Chamak Teri Ayan Bijli Mein, Atish Mein, Sharare Mein
Jhalak Teri Haweda Chand Mein, Suraj Mein, Tare Mein


Bulandi Aasmanon Mein, Zameeon Mein Teri Pasti
Rawani Behr Mein, Uftadgi Teri Kinare Mein


Shariat Kyun Gireban-Geer Ho Zauq-e-Takallam Ki
Chupa Jata Hun Apne Dil Ka Matlab Istaare Mein


Jo Hai Baidar Insan Mein Woh Gehri Neend Sota Hai
Shajar Mein, Phool Mein, Haiwan Mein, Pathar Mein, Sitare Mein

Mujhe Phoonka Hai Souz-e-Qatra-e-Ashak-e-Mohabbat Ne
Ghazab Ki Aag Thi Pani Ke Chote Se Sharare Mein


Nahin Jinse-e-Sawab-e-Akhrat Ki Arzoo Mujh Ko
Woh Soudagar Hun, Main Ne Nafa Dekha Hai Khasare Mein


Sukoon Na-Ashna Rehna Isse Saman-e-Hasti Hai
Tarap Kis Dil Ki Ya Rab Chup Ke Aa Baithi Hai Pare Mein


Sadaye Lan Tarani Sun Ke Ae Iqbal Mein Chup Hun
Taqazon Ki Kahan Taqat Hai Mujh Furqat Ke Mare Main

IIS Logo

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP