Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

ايک شام

 

ايک شام

( دريائے نيکر 'ہائيڈل برگ ' کے کنارے پر )

خاموش ہے چاندنی قَمَر کی
شاخيں ہيں خَموش ہر شجر کی
وادی کے نوا فَروش خاموش
کُہسار کے سبز پوش  خاموش
فِطرَت بے ہوش ہو گئی ہے
آغوش ميں شب کے سو گئی ہے
کچھ ايسا سَکوت کا فُسوں ہے
نيکر کا خِرام بھی سکُوں ہے
تاروں کا خموش کارواں ہے
يہ قافلہ  بے درا  رواں ہے
خاموش ہيں کوہ  و  دشت  و  دريا
قُدرت ہے مُراقبے ميں گويا
اے دل!  تو بھی خموش ہو جا
آغوش ميں غم کو لے کے سو جا


 

دريائے نيکر: جرمنی کے ایک دریا کا نام۔  ہائيڈل برگ: جرمنی کا مشہور شہر جس کی یونیورسٹی لائبریری میں ۵ لاکھ سے زیادہ کتابیں ہیں۔  قمر: چاند۔  چاندنی: روشنی۔  شجر: درخت۔  وادی: دو پہاڑوں کے درمیان کی زمین۔ نوا فروش: مراد چہچہانے والے پرندے۔  کہسار: پہاڑ۔  سبز پوش: مراد درخت، پودے۔  بیہوش: بے سُدھ۔  شب: رات۔  فُسوں: افسوں، جادو۔  خَرام:  مراد بہنا۔  سکوں:  ٹھہراؤ، خاموشی۔  بے درا: گھنٹی کی آواز کے بغیر۔  رواں ہے:  چل رہا ہے۔  کوہ: پہاڑ۔  دشت:  جنگل۔  مراقبہ:  مراد سوچوں میں ڈوبی ہو ئی

 

--------------

 

Transliteration

 

Aik Shaam
(Darye Naikar, Haidal Barg, Ke Kinare Par)

 

Khamosh Hai Chandani Qamar Ki

Shakhain Hain Khamosh Har Shajar Ki


Wadi Ke Nawa Farosh Khamosh
Kuhsar Ke Sabz Posh Khamosh


Fitrat Be-Hosh Ho Gyi Hai
Aghosh Mein Shab Ke So Gyi Hai


Kuch Aesa Sukoot Ka Fasoon Hai
Naikar Ka Kharaam Bhi Sukoon Hai


Taron Ka Khamosh Karwan Hai
Ye Qafla Be-Dra Rawan Hai


Khamosh Hain Koh-o-Dasht-o-Darya
Qudrat Hai Muraqbe Mein Goya

 

Ae Dil! Tu Bhi Khamosh Ho Ja
Aghosh Mein Gam Ko Le Ke So Ja

 

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP