Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

انسان

 

قدرت کا عجيب يہ ستم ہے!
انسان کو راز جو بنايا
راز اس کی نگاہ سے چھپايا
بے تاب ہے ذوق آگہی کا
کھلتا نہيں بھيد زندگی کا
حيرت آغاز و انتہا ہے
آئينے کے گھر ميں اور کيا ہے
ہے گرم خرام موج دريا
دريا سوئے سجر جادہ پيما
بادل کو ہوا اڑا رہی ہے
شانوں پہ اٹھائے لا رہی ہے
تارے مست شراب تقدير
زندان فلک ميں پا بہ زنجير
خورشيد ، وہ عابد سحر خيز
لانے والا پيام بر خيز
مغرب کی پہاڑيوں ميں چھپ کر
پيتا ہے مے شفق کا ساغر
لذت گير وجود ہر شے
سر مست مے نمود ہر شے
کوئی نہيں غم گسار انساں
کيا تلخ ہے روزگار انساں

 

----------------

 

Transliteration

 

Insan

Qudrat Ka Ajeeb Ye Sitam Hai!

Insan Ko Raaz Jo Banaya
Raaz Uss Ki Nigah Se Chupaya


Be-Taab Hai Zauq Aaghi Ka
Khulta Nahin Bhaid Zindagi Ka


Hairat Aaghaz-o-Intiha Hai
Aaeene Ke Ghar Mein Aur Kya Hai


Hai Garm-e-Kharaam Mouj-e-Darya
Darya Sooye Behr Jadah Pema


Badal Ko Hawa Urha Rahi Hai
Shanon Pe Uthaye La Rahi Hai


Taare Mast-e-Sharab-e-Taqdeer
Zindan-e-Falak Mein Pa Ba Zanjeer


Khursheed, Woh Abid-e-Sehar Khaiz
Lane Wala Pyam-e-‘Barkhaiz’


Magrib Ki Pahariyon Mein Chup Kar
Peeta Hai Mai-e-Shafaq Ka Saghar

Is hiding in the western hills,

Lazzat Geer-e-Wujood Harshay
Sarmast-e-Mai-e-Namood Har Shay


Koi Nahin Gham Gusaar-e-Insaar
Kya Talkh Hai Rozgar-e-Insan!

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP