Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

و صال

 

جستجو جس گل کی تڑپاتی تھی اے بلبل مجھے
خوبی قسمت سے آخر مل گيا وہ گل مجھے
خود تڑپتا تھا ، چمن والوں کو تڑپاتا تھا ميں
تجھ کو جب رنگيں نوا پاتا تھا ، شرماتا تھا ميں
ميرے پہلو ميں دل مضطر نہ تھا ، سيماب تھا
ارتکاب جرم الفت کے ليے بے تاب تھا
نامرادی محفل گل ميں مری مشہور تھی
صبح ميری آئنہ دار شب ديجور تھی
از نفس در سينۂ خوں گشتہ نشتر داشتم
زير خاموشی نہاں غوغائے محشر داشتم
اب تاثر کے جہاں ميں وہ پريشانی نہيں
اہل گلشن پر گراں ميری غزل خوانی نہيں
عشق کی گرمی سے شعلے بن گئے چھالے مرے
کھليتے ہيں بجليوں کے ساتھ اب نالے مرے
غازۂ الفت سے يہ خاک سيہ آئينہ ہے
اور آئينے ميں عکس ہمدم ديرينہ ہے
قيد ميں آيا تو حاصل مجھ کو آزادی ہوئی
دل کے لٹ جانے سے ميرے گھر کی آبادی ہوئی
ضو سے اس خورشيد کی اختر مرا تابندہ ہے
چاندنی جس کے غبار راہ سے شرمندہ ہے
يک نظر کر دی و آداب فنا آموختی
اے خنک روزے کہ خاشاک مراد وا سوختی

 

-----------------

 

Transliteration

 

Wisal

Justujoo Jis Gul Ki Tarpati Thi Ae Bulbul Mujhe
Khoobi-e-Qismat Se Akhir Mil Gya Woh Gul Mujhe


Khud Tarapta Tha, Chaman Ko Tarpata Tha Mein
Tujh Ko Jab Rangeen Nawa Pata Tha, Sharmata Tha Mein


Mere Pehlu Mein Dil-e-Mutar Na Tha, Seemab Tha
Irtaqab-e-Jurm-e-Ulfat Ke Liye Be-Taab Tha


Na-Muradi Mehfil-e-Gul Mein Meri Mashoor Thi
Subah Meri Aaeena Dar-e-Shab-e-Dejoor Thi

 

Az Nafas Dar Seena-e-Khoon Gashta Nashtar Dashtam
Zair-e-Khamoshi Nahan Ghoghaye Mehshar Dashtam




Ab Taasar Ke Jahan Mein Woh Preshani Nahin
Ahl-e-Gulshan Par Garan Meri Ghazal Khawani Nahin


Ishq Ki Garmi Se Shoale Ban Gye Chale Mere
Khailte Hain Bijlion Ke Sath Ab Nale Mere

 

Ghazah-e-Ulfat Se Ye Khak-e-Seh Aaeena Hai
Aur Aaeene Mein Aks-e-Humdam-e-Dairina Hai


Qaid Mein Aya To Hasil Mujh Ko Azadi Huwi
Dil Ke Lut Jane Se Mere Ghar Ki Abadi Huwi


Zou Se Iss Khursheed Ki Akhtar Mera Tabinda Hai
Chandni Jis Ke Ghubar-e-Rah Se Sharminda Hai


Yak Nazar Kardi-o-Adaab-e-Fana Amokhti
Ae Khunak Roze Ke Khashak-e-MerWa Soukhti

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP