Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

چاند اور تارے

 

ڈرتے ڈرتے دم سحر سے
تارے کہنے لگے قمر سے
نظارے رہے وہی فلک پر
ہم تھک بھی گئے چمک چمک کر
کام اپنا ہے صبح و شام چلنا
چلنا چلنا ، مدام چلنا
بے تاب ہے اس جہاں کی ہر شے
کہتے ہيں جسے سکوں، نہيں ہے
رہتے ہيں ستم کش سفر سب
تارے، انساں، شجر، حجر سب
ہوگا کبھی ختم يہ سفر کيا
منزل کبھی آئے گی نظر کيا
کہنے لگا چاند ، ہم نشينو
اے مزرع شب کے خوشہ چينو!
جنبش سے ہے زندگی جہاں کی
يہ رسم قديم ہے يہاں کی
ہے دوڑتا اشہب زمانہ
کھا کھا کے طلب کا تازيانہ
اس رہ ميں مقام بے محل ہے
پوشيدہ قرار ميں اجل ہے
چلنے والے نکل گئے ہيں
جو ٹھہرے ذرا، کچل گئے ہيں
انجام ہے اس خرام کا حسن
آغاز ہے عشق، انتہا حسن

 

---------------

 

Transliteration

 

Chand Aur Tare

Darte Darte Dam-e-Sehar Se
Tare Kehne Lage Qamar Se


Nazare Rahe Wohi Falak Par
Hum Thak Bhi Gaye Chamak Chamak Kar


Kaam Apna Hai Subah-o-Shaam Chalna
Chalna, Chalna, Madaam Chalna


Betaab Hai Iss Jahan Ki Har Shay
Kehte Hain Jise Sukoon, Nahin Hain


Rehte Hain Sitam Kash-e-Safar Sub
Tare, Insan, Shajar, Hajar Sub


Ho Ga Kabhi Khatam Ye Safar Kya
Manzil Kabhi Aye Gi Nazar Kya


Kehne Laga Chand, Hum Nasheeno
Ae Mazra-e-Shab Ke Khausha Cheeno!


Junbish Se Hai Zindagi Jahan Ki
Ye Rasm Qadeem Hai Yahan Ki


Hai Dorta Ashab-e-Zamana
Kha Kha Ke Talab Ka Taziyana

 

Iss Reh Mein Maqam Be-Mehel Hai
Poshida Qarar Mein Ajal Hai

 

Chalne Wale Nikl Gye Hain
Jo Thehre Zra, Kuchal Gye Hain


Anjaam Hai Iss Kharaam Ka Husn
Aghaz Hai Ishq, Intihaa Husn

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP