Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

کلی

 

جب دکھاتی ہے سحر عارض رنگيں اپنا
کھول ديتی ہے کلی سينۂ زريں اپنا
جلوہ آشام ہے صبح کے مے خانے ميں
زندگی اس کی ہے خورشيد کے پيمانے ميں
سامنے مہر کے دل چير کے رکھ ديتی ہے
کس قدر سينہ شگافی کے مزے ليتی ہے
مرے خورشيد! کبھی تو بھی اٹھا اپنی نقاب
بہر نظارہ تڑپتی ہے نگاہ بے تاب
تيرے جلوے کا نشيمن ہو مرے سينے ميں
عکس آباد ہو تيرا مرے آئينے ميں
زندگی ہو ترا نظارہ مرے دل کے ليے
روشنی ہو تری گہوارہ مرے دل کے ليے
ذرہ ذرہ ہو مرا پھر طرب اندوز حيات
ہو عياں جوہر انديشہ ميں پھر سوز حيات
اپنے خورشيد کا نظارہ کروں دور سے ميں
صفت غنچہ ہم آغوش رہوں نور سے ميں
جان مضطر کی حقيقت کو نماياں کر دوں
دل کے پوشيدہ خيالوں کو بھی عرياں کر دوں

 

---------------

 

Transliteration

 

 

Kali

 

Jab Dikhati Hai Sehar Ariz-e-Rangeen Apna

 

Khol Deti Hai Kali Seena-e-Zarren Apna

 

 

 

 

 

Jalwa Ashaam Haiye Subah Ke Mai Khane Mein

 

Zindagi Iss Ki Hai Khursheed Ke Pemane Mein

 

 

 

 

 

Samne Mehr Ke Dil Cheer Ke Rakh Deti Hai

 

Kis Qadar Seena Shagafi Ke Maze Leti Hai

 

 

 

 

 

Mere Khusheed! Kabhi Tu Bhi Utha Apni Naqab

 

Beher-e-Nazara Tarapti Hai Nigah-e-Betaab

 

 

 

 

 

Tere Jalwe Ka Nasheman Ho Mere Seene Mein

 

Aks Abad Ho Tera Mere Aaeene Mein

 

 

 

 

 

Zindagi Ho Tera Nazara Mere Dil Ke Liye

 

Roshni Ho Teri Gehwara Mere Dil Ke Liye

 

 

 

 

 

Zarra Zarra Ho Mera Phir Tarb Andoz-e-Hayat

 

Ho Ayan Johar-e-Andesha Mein Phir Souz-e-Hayat

 

 

 

 

 

Apne Khursheed Ka Nazara Karun Door Se Mein

 

Sifat-e-Guncha Hum Agosh Rahun Noor Se Mein

 

 

 

 

 

Jaan-e-Muztar Ki Haqiqat Ko Namayan Kar Doon

 

Dil Ke Poshida Khiyalon Ko Bhi Uryan Kar Doon

 

 

 

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP