Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

اختر صبح

 

ستارہ صبح کا روتا تھا اور يہ کہتا تھا
ملی نگاہ مگر فرصت نظر نہ ملی
ہوئی ہے زندہ دم آفتاب سے ہر شے
اماں مجھی کو تہِ دامن سحر نہ ملی
بساط کيا ہے بھلا صبح کے ستارے کی
نفس حباب کا ، تابندگی شرارے کی
کہا يہ ميں نے کہ اے زيور جبين سحر!
غم فنا ہے تجھے! گنبد فلک سے اتر
ٹپک بلندئ گردوں سے ہمرہ شبنم
مرے رياض سخن کی فضا ہے جاں پرور
ميں باغباں ہوں ، محبت بہار ہے اس کی
بنا مثال ابد پائدار ہے اس کی

 

-------------

 

Transliteratiion

 

Akhtar-e-Subah

Sitara Subah Ka Rota Tha Aur Ye Kehta Tha
Mili Nigah Magar Fursat-e-Nazar Na Mili


Huwi Hai Zinda Dam-e-Aftab Se Har Shay
Aman Mujhi Ko Teh-e-Daman-e-Sehar Na Mili


Bisat Kya Hai Bhala Subah Ke Sitare Ki
Nafas Habab Ka, Tabindagi Sharare Ki


Kaha Ye Main Ne Ke Ae Zaiwar-e-Jabeen-e-Sehar !
Gham-e-Fana Hai Tujhe ! Gunbad-e-Falak Se Uter



Tapak Bulandi-e-Gardoon Se Hum-Rah-e-Shabnam
Mere Riyaz-e-Sukhan Ki Faza Hai Jaan Parwar

 

Main Baghban Hun, Mohabbat Bahar Hai Iss Ki
Bina Misal-e-Abad Paidar Hai Iss Ki

 

IIS Logo

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP