Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

پيا م

 

عشق نے کردیا تجھے ذوقِ تپش سے آشنا

بزم کو مثلِ شمعِ بزم حاصلِ سوز و ساز دے

شانِ کرم پہ ہے مدار عشقِ گرہ کشائے کا

دیر و حرم کی قید کیا ! جس کو وہ بے نیاز دے

صورتِ شمع نور کی ملتی نہیں قبا اسے

جس کو خدا نہ دہر میں گریۂ جانگداز دے

تارے میں وہ ، قمر میں وہ ، جلوہ گہِ سحر میں وہ

چشمِ نظّارہ میں نہ تو سرمۂ امتیاز دے

عشق بلند بال ہے رسم و رہِ نیاز سے

حسن ہے مستِ ناز اگر تو بھی جوابِ ناز دے

پیرِ مغاں فرنگ کی مے کا نشاط ہے اثر

اس میں وہ کیفِ غم نہیں، مجھ کو تو خانہ ساز دے

تجھ کو خبر نہیں ہے کیا ؟ بزمِ کہن بدل گئی

اب نہ خدا کے واسطے ان کو مٔے مجاز دے

 

--------------

 

Transliteration

 

Payam

Ishq Ne Kar Diya Tujhe Zauq-e-Tapish Se Ashna
Bazm Ko Misl-e-Shama-e-Bazm Hasil-e-Souz-o-Saaz


Shan-e-Karam Pe Hai Madar Ishq-e-Girah Kushaye Ka
Dair-o-Haram Ki Qaid Kya! Jis Ko Woh Be-Niaz De

 

Soorat-e-Shama Noor Ki Milti Nahin Qaba Use
Jis Ko Khuda Na Dehr Mein Girya-e-Jaan Gudaz De


Tare Mein Woh, Qamar Mein Woh, Jalwagah-e-Sehar Mein Woh
Chashm-e-Nazara Mein Na Tu Surma-e-Imtiaz De


Ishq Buland Baal Hai Rasm-o-Reh-e-Niaz Se
Husn Hai Mast-e-Naz Agar Tu Bhi Jawab-e-Naaz De


Peer-e-Mughan! Farang Ki Mai Ka Nishat Hai Asar
Iss Mein Woh Kaif-e-Gham Nahin, Mujh Ko To Khana Saaz De


Tujh Ko Khabar Nahin Hai Kya! Bazm-e-Kuhan Badal Gyi
Ab Na Khuda Ke Waste In Ko Mai-e-Majaz De

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP