Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

حقيقتِ حسن

خدا سے حسن نے اک روز يہ سوال کيا
جہاں ميں کيوں نہ مجھے تو نے لازوال کيا


ملا جواب کہ تصوير خانہ ہے دنيا
شب دراز عدم کا فسانہ ہے دنيا


ہوئی ہے رنگ تغير سے جب نمود اس کی
وہی حسيں ہے حقيقت زوال ہے جس کی


کہيں قريب تھا ، يہ گفتگو قمر نے سنی
فلک پہ عام ہوئی ، اختر سحر نے سنی


سحر نے تارے سے سن کر سنائی شبنم کو
فلک کی بات بتا دی زميں کے محرم کو


بھر آئے پھول کے آنسو پيام شبنم سے
کلی کا ننھا سا دل خون ہو گيا غم سے


چمن سے روتا ہوا موسم بہار گيا
شباب سير کو آيا تھا ، سوگوار گيا

 

--------------

 

Transliteration

 

Haqiqat-e-Husn

Khuda Se Husn Ne Ek Roz Ye Sawal Kiya
Jahan Mein Kyun Na Mujhe Tu Ne La-Zawal Kiya

 

Mila Jawab Ke Tasveer-e-Khana Hai Dunya
Shab-e-Daraz-e-Aadam Ka Fasana Hai Dunya


Huwi Hai Rang-e-Taghiyar Se Jab Namood Uss Ki
Wohi Haseen Hai Haqiqat Zawal Hai Jis Ki

 

Kahin Qareeb Tha, Ye Gutugu Qamar Ne Suni
Falak Pe Aam Huwi, Akhtar-e-Sehar Ne Suni


Sehar Ne Tare Se Sun Kar Sunayi Shabnam Ko
Falak Ki Baat Bata Di Zameen Ke Mehram Ko


Bhar Aye Phool Ke Ansu Payam-e-Shabnam Se
Kali Ka Nanha Sa Dil Khoon Ho Gya Gham Se

 

Chaman Se Rota Huwa Mousam-e-Bahar Gya
Shabab Sair Ko Aya Tha, Sogawar Gya

 

IIS Logo

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP