Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

  

ترے عشق کی انتہا چاہتا ہوں

مری سادگی ديکھ کيا چاہتا ہوں

ستم ہو کہ ہو وعدہِ بے حِجابی

کوئی بات صبر آزما  چاہتا ہوں

يہ جنت مبارک رہے زاہدوں کو

کہ ميں آپ کا سامنا چاہتا ہوں

ذرا سا تو دل ہوں ، مگر شوخ اتنا

وہی لن ترانی سُنا چاہتا ہوں

کوئی دم کا مہماں ہوں اے اہلِ محفل

چراغِ سحر ہوں ، بُجھا چاہتا ہوں

بھری بزم ميں راز کی بات کہہ دی

بڑا بے ادب ہوں ، سزا چاہتا ہوں

 


 

ستم: ظلم _   بے حِجابی: کھل کر سامنے آنا _ صبر آزما: جس سے قوت برداشت پرکھی جائے  _  زاہدوں: عبادت گزاروں  _  لن ترانی: تو نہیں دیکھ سکتا، طور پر حضرت موسیٰ کی درخواست پر خدا کا جواب  _  کوئی دم کا مہماں: مراد فنی انسان _  اہلِ محفل: دنیا والے _ چراغِ سحر: صبح سویرے کا چراغ جسے کسی بھی وقت بجھایا جا سکتا ہو _ بھری بزم: بھری محفل _  بے ادب: گستاخ

 

 
Transliteration
 
Tere Ishq Ki Intiha Chahta Hun
Meri Sadgi Dekh Kya Chahta Hun


Sitam Ho Ke Ho Wada-e-Be-Hijabi

Koi Baat Sabr Azma Chahta Hun


Ye Jannat Mubarik Rahe Zahidon Ko

Ke Mein Ap Ka Samna Chahta Hun


Zara Sa To Dil Hun Magar Shaukh Itna

Wohi Lan-Tarani Suna Chahta Hun


Koi Dam Ka Mehman Hun Ae Ahl-e-Mehfil

Charagh-e-Sehar Hun, Bujha Chahta Hun


Bhari Bazm Mein Raaz Ki Baat Keh Di

Bara Be-Adab Hun, Saza Chahta Hun

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP