Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

 

 

 
کہوں کيا آرزوئے بے دلی مجھ کو کہاں تک ہے
مرے بازار کی رونق ہی سودائے زياں تک ہے
وہ مے کش ہوں فروغ مے سے خود گلزار بن جاؤں
ہوائے گل فراق ساقی نامہرباں تک ہے
چمن افروز ہے صياد ميری خوشنوائی تک
رہی بجلی کی بے تابی ، سو ميرے آشياں تک ہے
وہ مشت خاک ہوں ، فيض پريشانی سے صحرا ہوں
نہ پوچھو ميری وسعت کی ، زميں سے آ سماں تک ہے
جرس ہوں ، نالہ خوابيدہ ہے ميرے ہر رگ و پے ميں
يہ خاموشی مری وقت رحيل کارواں تک ہے
سکون دل سے سامان کشود کار پيدا کر
کہ عقدہ خاطر گرداب کا آب رواں تک ہے
چمن زار محبت ميں خموشی موت ہے بلبل!
يہاں کی زندگی پابندی رسم فغاں تک ہے
جوانی ہے تو ذوق ديد بھی ، لطف تمنا بھی
ہمارے گھر کی آبادی قيام ميہماں تک ہے
زمانے بھر ميں رسوا ہوں مگر اے وائے نادانی
سمجھتا ہوں کہ ميرا عشق ميرے رازداں تک ہے
 
--------------
 
Transliteration
 
Kahun Kya Arzu-e-Be-Dili Mujh Ko Kahan Tak Hai
Mere Bazar Ki Ronaq Hi Soda-e-Zayan Tak Hai


Woh Mai Kash Hun Farogh-e-Mai Se Khud Gulzar Ban Jaun
Hawaye Gul Faraq-e-Saqi-e-Na-Mehrban Tak Hai


Chaman Afroz Hai Sayyad Meri Khush Nawayi Tak
Rhi Bijli Ki Be-Tabi, Sou Mere Ashiyan Tak Hai


Woh Musht-e-Khak Hun, Faiz-e-Preshani Se Sehra Hun
Na Pucho Meri Wusaat Ki, Zameen Se Asman Tak Hai


Jaras Hun, Nala Khawabida Hai Mere Har Rag-o-Pe Mein
Ye Khamoshi Meri Waqt-e-Raheel-e-Karwan Tak Hai


Sukoon-e-Dil Se Saman-e-Kashod-e-Kaar Paida Ker
Ke Uqdah Khatir-e-Gardab Ka Aab-e-Rawan Tak Hai

Chaman Zaar-e-Mohabat Mein Khamoshi Mout Hai Bulbul!
Yahan Ki Zindagi Pabandi-e-Rasm-e-Faghan Tak Hai


Jawani Hai To Zauq-e-Deed Bhi, Lutf-e-Tamanna Bhi
Humare Ghar Ki Abadi Qaam-e-Mehman Tak Hai


Zamane Bhar Men Ruswa Hun Magar Ae Waye Nadani!
Samajhta Hun K E Mera Ishq Mere Raazdan Tak Hai

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP