Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

 

 

انوکھی وضع ہے ، سارے زمانے سے نرالے ہيں
يہ عاشق کون سی بستی کے يا رب رہنے والے ہيں
علاج درد ميں بھی درد کی لذت پہ مرتا ہوں
جو تھے چھالوں ميں کانٹے ، نوک سوزن سے نکالے ہيں
پھلا پھولا رہے يا رب! چمن ميری اميدوں کا
جگر کا خون دے دے کر يہ بوٹے ميں نے پالے ہيں
رلاتی ہے مجھے راتوں کو خاموشی ستاروں کی
نرالا عشق ہے ميرا ، نرالے ميرے نالے ہيں
نہ پوچھو مجھ سے لذت خانماں برباد رہنے کی
نشيمن سينکڑوں ميں نے بنا کر پھونک ڈالے ہيں
نہيں بيگانگی اچھی رفيق راہ منزل سے
ٹھہر جا اے شرر ، ہم بھی تو آخر مٹنے والے ہيں
اميد حور نے سب کچھ سکھا رکھا ہے واعظ کو
يہ حضرت ديکھنے ميں سيدھے سادے ، بھولے بھالے ہيں
مرے اشعار اے اقبال کيوں پيارے نہ ہوں مجھ کو
مرے ٹوٹے ہوئے دل کے يہ درد انگيز نالے ہيں
 
----------------
 
 
Transliteration
 
Anokhi Waza Hai, Sare Zamane Se Nirale Hain
Ye Ashiq Kon Si Basti Ke Ya-Rab Rehne Wale Hain


Ilaj-e-Dard Mein Bhi Dard Ki Lazzat Pe Merta Hun
Jo The Chhalon Mein Kante, Nok-e-Souzan Se Nikale Hain


Phala Phula Rahe Ya Rab ! Chaman Meri Umeedon Ka
Jigar Ka Khoon De De Kar Ye Boote Main Ne Pale Hain


Rulati Hai Mujhe Raton Ko Khamoshi Sitaron Ki
Nirala Ishq Hai Mera, Nirale Mere Nale Hain

Na Pucho Mujh Se Lazzat Khanaman Barbad Rehne
Nasheman Sekron Main Ne Bana Kar Phoonk Dale Hain


Nahin Begangi  Achi Rafiq-e-Rah Manzil Se
Theher Ja Ae Sharar,  Hum Bhi To Akhir Mitne Wale Hain


Umeed-e-Hoor Ne Sub Kuch Sikha Rakha Hai Waaiz Ko
Ye Hazrat Dekhne Mein Seedhe Sadhe, Bhole Bhale Hain


Mere Ashaar Ae Iqbal! Kyun Pyare Na Hon Mujh Ko
Mere Toote Huwe Dil Ke Ye Dard Angaiz Nale Hain

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP