Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

کنار راوی

 


سکوت شام ميں محو سرود ہے راوی
نہ پوچھ مجھ سے جو ہے کيفيت مرے دل کی
پيام سجدے کا يہ زير و بم ہوا مجھ کو
جہاں تمام سواد حرم ہوا مجھ کو

سر کنارہ آب رواں کھڑا ہوں ميں
خبر نہيں مجھے ليکن کہاں کھڑا ہوں ميں

شراب سرخ سے رنگيں ہوا ہے دامن شام
ليے ہے پير فلک دست رعشہ دار ميں جام
عدم کو قافلہ روز تيز گام چلا
شفق نہيں ہے ، يہ سورج کے پھول ہيں گويا
کھڑے ہيں دور وہ عظمت فزائے تنہائی
منار خواب گہ شہسوار چغتائی
فسانۂ ستم انقلاب ہے يہ محل
کوئی زمان سلف کی کتاب ہے يہ محل

مقام کيا ہے سرود خموش ہے گويا
شجر ، يہ انجمن بے خروش ہے گويا

رواں ہے سينۂ دريا پہ اک سفينہ تيز
ہوا ہے موج سے ملاح جس کا گرم ستيز
سبک روی ميں ہے مثل نگاہ يہ کشتی
نکل کے حلقہ حد نظر سے دور گئی
جہاز زندگی آدمی رواں ہے يونہی
ابد کے بحر ميں پيدا يونہی ، نہاں ہے يونہی

شکست سے يہ کبھی آشنا نہيں ہوتا
نظر سے چھپتا ہے ليکن فنا نہيں ہوتا

 

-------------

 

Transliteration

 

Kinar-e-Ravi

Sukoot-e-Shaam Mein Mehv-e-Surood Hai Ravi
Na Puch Mujh Se Jo Kaifiat Mere Dil Ki


Payam Sajde Ka Ye Zair-o-Bam Huwa Kujh Ko
Jahan Tamam Sawad-e-Haram Huwa Mujh Ko


Sir-e-Kinara-e-Aab-e-Rawan Khara Hun Main
Khabar Nahin Mujhe Lekin Kahan Khara Hun Main

 

Sharab-e-Surkh Se Rangeen Huwa Hai Daman-e-Shaam
Liye Hai Peer-e-Falak Dast-e-Raishadar Mein Jaam

 

Adam Ko Qafila-e-Roz Taizgaam Chala

Shafaq Nahin Hai, Ye Suraj Ke Phool Hain Goya


Khare Hain Door Woh Azmat Fazaye Tanhai
Manar-e-Khawabgah-e-Shahsawar-e-Chughtai


Fasana-e-Sitam-e-Inqilab Hai Ye Mehal
Koi Zaman-e-Salaf Ki Kitab Hai Ye Mehal


Maqam Kya Hai, Surood-e-Khamosh Hai Goya
Shajar,Ye Anjuman-e-Be-Kharosh Hai Goya


Rawan Hai Seena-e-Darya Pe Ek Safina-e-Taiz
Huwa Hai Mouj Se Mallah Jis Ka Garm-e-Sataiz


Subak Rawi Mein Hai Misl-e-Nigah Ye Kashti
Nikal Ke Halqa-e-Hadd-e-Nazar Se Door Gyi


Jahaz-e-Zindagi-e-Admi Rawan Hai Yunhi
Abad Ke Behar Mein Paida Yunhi, Nihan Hai Yunhi


Shikast Se Ye Kabhi Ashna Nahin Hota
Nazar Se Chupta Hai Lekin Fana Nahin Hota

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP