Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

ايک پرندہ اور جگنو

 


سر شام ايک مرغ نغمہ پيرا
کسی ٹہنی پہ بيٹھا گا رہا تھا
چمکتی چيز اک ديکھی زميں پر
اڑا طائر اسے جگنو سمجھ کر
کہا جگنو نے او مرغ نواريز!
نہ کر بے کس پہ منقار ہوس تيز
تجھے جس نے چہک ، گل کو مہک دی
اسی اللہ نے مجھ کو چمک دی
لباس نور ميں مستور ہوں ميں
پتنگوں کے جہاں کا طور ہوں ميں
چہک تيری بہشت گوش اگر ہے
چمک ميری بھی فردوس نظر ہے
پروں کو ميرے قدرت نے ضيا دی
تجھے اس نے صدائے دل ربا دی
تری منقار کو گانا سکھايا
مجھے گلزار کی مشعل بنايا
چمک بخشی مجھے، آواز تجھ کو
ديا ہے سوز مجھ کو، ساز تجھ کو
مخالف ساز کا ہوتا نہيں سوز
جہاں ميں ساز کا ہے ہم نشيں سوز
قيام بزم ہستی ہے انھی سے
ظہور اوج و پستی ہے انھی سے

ہم آہنگی سے ہے محفل جہاں کی
اسی سے ہے بہار اس بوستاں کی

 

-----------------

 

Transliteration

 

Aik Parinda Aur Jugnoo

Sar-e-Shaam Aik Murhg-e-Naghma Paira
Kisi Tehni Pe Baitha Ga Raha Tha


Chamakti Cheez Ek Dekhi Zameen Par
Urha Taeer Usse Jugnu Samajh Kar


Kaha Jugnu Ne O Murgh-e-Nawa Raiz!
Na Kar Bekas Pe Manqar-e-Hawas Taiz


Tujhe Jis Ne Chehak, Gul Ko Mehak Di
Ussi Allah Ne Mujh Ko Chamak Di


Libas-e-Noor Mein Mastoor Hun Main
Patangon Ke Jahan Ka Toor Hun Main


Chehak Teri Behisht-e-Gosh Agar Hai
Chamak Meri Bhi Firdous-e-Nazar Hai


Paron Ko Meri Qudat Ne Zia Di
Tujhe Uss Ne Sadaye Dil Ruba Di


Teri Manqar Kogana Sikhaya
Mujhe Gulzar Ki Mashal Banaya


Chamak Bakhsi Mujhe, Awaz Tujh Ko
Diya Hai Souz Mujh Ko, Saaz Tujh Ko


Mukhalif Saaz Ka Hota Nahin Souz
Jahan Mein Saaz Ka Hai Hum Nasheen Souz


Qayam-e-Bazm-e-Hasti Hai Inhi Se
Zahoor-e-Auj-o-Pasti Hai Inhi Se


Hum Aahangi Se Hai Mehfil Jahan Ki
Iss Se Hai Bahar Iss Bostan Ki

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP