Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

ابر

 


اٹھی پھر آج وہ پورب سے کالی کالی گھٹا
سياہ پوش ہوا پھر پہاڑ سربن کا
نہاں ہوا جو رخ مہر زير دامن ابر
ہوائے سرد بھی آئی سوار توسن ابر
گرج کا شور نہيں ہے ، خموش ہے يہ گھٹا
عجيب مے کدئہ بے خروش ہے يہ گھٹا
چمن ميں حکم نشاط مدام لائی ہے
قبائے گل ميں گہر ٹانکنے کو آئی ہے
جو پھول مہر کی گرمی سے سو چلے تھے ، اٹھے
زميں کی گود ميں جو پڑ کے سو رہے تھے ، اٹھے
ہوا کے زور سے ابھرا، بڑھا، اڑا بادل
اٹھی وہ اور گھٹا، لو! برس پڑا بادل

عجيب خيمہ ہے کہسار کے نہالوں کا
يہيں قيام ہو وادی ميں پھرنے والوں کا

----------

Transliteration

 

Abar

 

 

Uthi Phir Aaj Woh Poorab Se Kali Kali Ghata
Siyah Posh Huwa Phir Pahar Sar Ban Ka


Nihan Huwa Jo Rukh-e-Mehr Zair-e-Daman-e-Abar
Hawaye Sard Bhi Ayi Sawar-e-Tousan-e-Abar


Garaj Ka Shor Nahin Hai, Khamosh Hai Ye Ghata
Ajeeb Mai Kuda-e-Be Kharosh Hai Ye Ghata


Chaman Mein Hukm-e-Nishat-e-Madam Layi Hai
Qabaye Gul Mein Guhr Tankne Ko Ayi Hai

 

Jo Phool Mehr Ki Garmi Se Sou Chale The, Uthe
Zameen Ki Gode Mein Jo Par Ke So Rahe The, Uthe


Hawa Ke Zor Se Ubhra, Barha, Urha Badal
Uthi Woh Aur Ghata, Lo! Baras Para Badal


Ajeeb Khema Hai Kuhsar Ke Nihalon Ka
Yaheen Qayam Ho Wadi Mein Phirne Walon Ka

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP