Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

داغ

 


عظمت غالب ہے اک مدت سے پيوند زميں
مہدی مجروح ہے شہر خموشاں کا مکيں
توڑ ڈالی موت نے غربت ميں مينائے امير
چشم محفل ميں ہے اب تک کيف صہبائے امير
آج ليکن ہمنوا! سارا چمن ماتم ميں ہے
شمع روشن بجھ گئی، بزم سخن ماتم ميں ہے
بلبل دلی نے باندھا اس چمن ميں آشياں
ہم نوا ہيں سب عنادل باغ ہستی کے جہاں

چل بسا داغ آہ! ميت اس کی زيب دوش ہے
آخری شاعر جہان آباد کا خاموش ہے

اب کہاں وہ بانکپن، وہ شوخی طرز بياں
آگ تھی کافور پيری ميں جوانی کی نہاں
تھی زبان داغ پر جو آرزو ہر دل ميں ہے
ليلی معنی وہاں بے پردہ، ياں محمل ميں ہے
اب صبا سے کون پوچھے گا سکوت گل کا راز
کون سمجھے گا چمن ميں نالہ بلبل کا راز

تھی حقيقت سے نہ غفلت فکر کی پرواز ميں
آنکھ طائر کی نشيمن پر رہی پرواز ميں

اور دکھلائيں گے مضموں کی ہميں باريکياں
اپنے فکر نکتہ آرا کی فلک پيمائياں
تلخی دوراں کے نقشے کھينچ کر رلوائيں گے
يا تخيل کی نئی دنيا ہميں دکھلائيں گے
اس چمن ميں ہوں گے پيدا بلبل شيراز بھی
سينکڑوں ساحر بھی ہوں گے، صاحب اعجاز بھی
اٹھيں گے آزر ہزاروں شعر کے بت خانے سے
مے پلائيں گے نئے ساقی نئے پيمانے سے
لکھی جائيں گی کتاب دل کی تفسيريں بہت
ہوں گی اے خواب جوانی! تيری تعبيريں بہت

ہوبہو کھينچے گا ليکن عشق کی تصوير کون ؟
اٹھ گيا ناوک فگن، مارے گا دل پر تير کون ؟

اشک کے دانے زمين شعر ميں بوتا ہوں ميں
تو بھی رو اے خاک دلی! داغ کو روتا ہوں ميں
اے جہان آباد، اے سرمايہ بزم سخن
ہوگيا پھر آج پامال خزاں تيرا چمن
وہ گل رنگيں ترا رخصت مثال بو ہوا
آہ! خالی داغ سے کاشانہ و اردو ہوا
تھی نہ شايد کچھ کشش ايسی وطن کی خاک ميں
وہ مہ کامل ہوا پنہاں دکن کی خاک ميں

اٹھ گئے ساقی جو تھے، ميخانہ خالی رہ گيا
يادگار بزم دہلی ايک حالی رہ گيا

آرزو کو خون رلواتی ہے بيداد اجل
مارتا ہے تير تاريکی ميں صياد اجل
کھل نہيں سکتی شکايت کے ليے ليکن زباں
ہے خزاں کا رنگ بھی وجہ قيام گلستاں

ايک ہی قانون عالم گير کے ہيں سب اثر
بوے گل کا باغ سے، گلچيں کا دنيا سے سفر

 

-------------

 

Transliteration

 

Dagh

Azmat-e-Ghalib Hai Ek Muddat Se Pewand-e-Zameen
Mehdi-e-Majrooh Hai Sheher-e-Khamoshan Ka Makeen


Tor Dali Mout Ne Ghurbat Mein Meenaye Ameer
Chashme-e-Mehfil Mein Hai Ab Tak Kaif-e-Sehbaye Ameer


Aaj Lekin Hum-Nawa! Sara Chaman Matam Mein Hai
Shama-e-Roshan Bujh Gyi, Bazm-e-Sukhan Matam Mein Hai


Bulbul-e-Dilli Ne Bandha Iss Chaman Mein Ashiyan 
Hum Nawa Hain Sub Anadil Bagh-e-Hasti Ke Jahan


Chal Basa Dagh! Aah! Mayyat Iss Ki Zaib-e-Dosh Hai
Akhri Shayar Jahan Abad Ka Khamosh Hai


Ab Kahan Woh Bankpan, Woh Soukhi-e-Tarz-e-Byaban
Aag Thi Kafoor-e-Peeri Mein Jawani Ki Nihan


Thi Zuban-e-Dagh Par Jo Aarzu Har Dil Mein Hai
Laila-e-Maani Wahan Be Parda, Yaan Mehmil Mein Hai


Ab Saba Se Kon Puche Ga Sukoot-e-Gul Ka Raaz
Kon Samjhe Ga Chaman Mein Nala-e-Bulbul Ka Raaz


Thi Haqiqat Se Na Ghaflat Fikar Ki Parwaz Mein
Aankh Taeer Ki Nasheman Par Rahi Parwaz Mein


Aur Dikhlayen Ge Mazmoon Ki Humain Bareekian
Apne Fikr-e-Nukta Aara Ki Falak Pemaeeyan


Talakhi-e-Doran Ke Naqhe Khainch Kar Rulwayen Ge
Ya Takhiyul Ki Nayi Dunya Humain Dikhlayen Ge


Iss Chaman Mein Hon Ge Paida Bulbul-e-Sheeraz Bhi
Saikron Sahir Bhi Hon Ge, Sahib-e-Ijaz Bhi


Uthain Ge Azar Hazaron Shair Ke Butkhane Se
Mai Pilayen Gen Aye Saqi Naye Pemane Se


Likhi Jaen Gi Kitab-e-Dil Ki Tafseerain Bohat
Hon Gi Ae Khawab-e-Jawani! Teri Taabeerain Bohat


Hu Bahu Khainche Ga Lekin Ishq Ki Tasveer Kon?
Uth Gya Nawak Fagan, Mare Ga Dil Par Teer Kon?


Ashak Ke Dane Zameen-e-Shair Mein Bota Hun Main
Tu Bhi Ro Ae Khak-e-Dilli! Dagh Ko Rota Hun Main


Ae Jahan Abad, Ae Sarmaya-e-Bazm-e-Sukhan!
Ho Gya Phir Aaj Pamal-e-Khazan Tera Chaman


Woh Gul-e-Rangeen Tera Rukhsat Misal-e-Bu Huwa
Ah! Khali Dagh Se Kashana-e-Urdu Huwa


Thi Na Shaid Kuch Kashish Aesi Watan Ki Khak Mein
Woh Mah-e-Kamil Huwa Pinhan Dakkan Ki Khak Mein


Uth Gye Saqi Jo The, Mai-Khana Khali Reh Gya
Yadgar-e-Bazm-e-Dehli Aik Hali Reh Gya


Arzoo Ko Khoon Rulati Hai Baidad-e-Ajal
Maarta Hai Teer Tareeki Mein Sayyad-e-Ajal


Khul Nahin Sakti Shakayat Ke Liye Lekin Zuban
Hai Khazan Ka Rang Bhi Wajah-e-Qayam-e-Gulistan

 

Aik Hi Qanoon-e-Alamgeer Ke Hain Sub Asar
Bu-e-Gul Ka Bagh Se, Gulcheen Ka Dunya Se Safar

 

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP