Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

سر گزشتِ آدم

سنے کوئی مری غربت کی داستاں مجھ سے
بھلايا قصہ پيمان اوليں ميں نے
لگی نہ ميری طبيعت رياض جنت ميں
پيا شعور کا جب جام آتشيں ميں نے
رہی حقيقت عالم کی جستجو مجھ کو
دکھايا اوج خيال فلک نشيں ميں نے
ملا مزاج تغير پسند کچھ ايسا
کيا قرار نہ زير فلک کہيں ميں نے
نکالا کعبے سے پتھر کی مورتوں کو کبھی
کبھی بتوں کو بنايا حرم نشيں ميں نے
کبھی ميں ذوق تکلم ميں طور پر پہنچا
چھپايا نور ازل زير آستيں ميں نے
کبھی صليب پہ اپنوں نے مجھ کو لٹکايا
کيا فلک کو سفر، چھوڑ کر زميں ميں نے
کبھی ميں غار حرا ميں چھپا رہا برسوں
ديا جہاں کو کبھی جام آخريں ميں نے
سنايا ہند ميں آ کر سرود ربانی
پسند کی کبھی يوناں کی سر زميں ميں نے
ديار ہند نے جس دم مری صدا نہ سنی
بسايا خطۂ جاپان و ملک چيں ميں نے
بنايا ذروں کی ترکيب سے کبھی عالم
خلاف معنی تعليم اہل ديں ميں نے
لہو سے لال کيا سينکڑوں زمينوں کو
جہاں ميں چھيڑ کے پيکار عقل و ديں ميں نے
سمجھ ميں آئی حقيقت نہ جب ستاروں کی
اسی خيال ميں راتيں گزار ديں ميں نے
ڈرا سکيں نہ کليسا کی مجھ کو تلواريں
سکھايا مسئلہ گردش زميں ميں نے
کشش کا راز ہويدا کيا زمانے پر
لگا کے آئنہ عقل دور بيں ميں نے
کيا اسير شعاعوں کو ، برق مضطر کو
بنادی غيرت جنت يہ سر زميں ميں نے
مگر خبر نہ ملی آہ! راز ہستی کی
کيا خرد سے جہاں کو تہ نگيں ميں نے

ہوئی جو چشم مظاہر پرست وا آخر
تو پايا خانۂ دل ميں اسے مکيں ميں نے

 

--------------

 

Transliteration

 

Sargazisht-e-Adam

Sune Koi Meri Ghurbat Ki Dastan Mujh Se
Bhulaya Qissa-e-Peman-e-Awaleen Main Ne


Lagi Na Meri Tabiat Riyaz-e-Jannat Mein
Piya Shaur Ka Jab Jaam-e-Aatisheen Main Ne


Rahi Haqiqat-e-Alam Ki Justujoo Mujh Ko
Dikhaya Auj-e-Khiyal-e-Falak Nasheeen Main Ne


Mila Mazaj Tagiyur Pasand Kuch Aesa
Kiya Qarar Na Zair-e-Falak Kahin Main Ne


Nikala Kaabe Se Pathar Ki Mooraton Ko Kabhi
Kabhi Buton Ko Banaya Haram Nasheen Main Ne


Kabhi Main Zauq-e-Takalum Mein Toor Par Pohancha
Chupaya Noor-e-Azal Zair-e-Asteen Main Ne

 

Kabhi Saleeb Pe Apnon Ne Mujh Ko Latkaya
Kiya Falak Ko Safar, Chor Kar Zameen Main Ne

Kabhi Mein Ghaar-e-Hira Mein Chupa Raha Barson
Diya Jahan Ko Kabhi Jaam-e-Akhreen Main Ne


Sunaya Hind Mein Aa Kar Surood-e-Rabbani
Pasand Ki Kabhi Yunan Ki Sar Zameen Main Ne


Diyar-e-Hind Ne Jis Dam Meri Sada Na Suni
Basaya Khitta-e-Japan-o-Mulk-e-Cheen Main Ne


Banaya Zarron Ki Tarkeeb Se Kabhi Alam
Khilaf-e-Ma’ani-e-Taleem-e-Ahl-e-Deen Main Ne

I saw the world composed of atoms,
Contrary to what the men of faith taught.

Lahoo Se Laal Kiya Saikron Zameenon Ko
Jahan Mein Chair Ke Pikaar-e-Aqal-o-Deen Main Ne


Samajh Mein Ayi Haqiqat Na Jab Sitaron Ki
Issi Khiyal Mein Raatain Guzar Deen Main Ne

 

Dra Sakeen Na Kalisa Ki Mujh Ko Talwarain
Sikhaya Masla-e-Gardish-e-Zameen Main Ne

Kasish Ka Raaz Haweda Kiya Zamane Par
Laga Ke Aaeena-e-Aqal-e-Doorbeen Main Ne


Kiya Aseer Shuaon Ko, Barq-e-Muztir Ko
Bana Di Ghairat-e-Jannat Ye Sarzameen Main Ne

 

Magar Khabar Na Milli Ah! Raaz-e-Hasti Ki
Kiya Khird Se Jahan Ko Teh-e-Nageen Main Ne




Huwi Jo Chashm-e-Muzahir Parast Wa Akhir
To Paya Khana-e-Dil Mein Isse Makeen Main Ne

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP