Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

تصوير درد

 



نہيں منت کش تاب شنيدن داستاں ميری
خموشی گفتگو ہے بے زبانی ہے زباں ميری
يہ دستور زباں بندی ہے کيسا تيری محفل ميں
يہاں تو بات کرنے کو ترستی ہے زباں ميری
اٹھائے کچھ ورق لالے نے ، کچھ نرگس نے ، کچھ گل نے
چمن ميں ہر طرف بکھری ہوئی ہے داستاں ميری
اڑالی قمريوں نے ، طوطيوں نے ، عندلبوں نے
چمن والوں نے مل کر لوٹ لی طرز فغاں ميری
ٹپک اے شمع آنسو بن کے پروانے کی آنکھوں سے
سراپا درد ہوں حسرت بھری ہے داستاں ميری
الہی! پھر مزا کيا ہے يہاں دنيا ميں رہنے کا
حيات جاوداں ميری ، نہ مرگ ناگہاں ميری
مرا رونا نہيں ، رونا ہے يہ سارے گلستاں کا
وہ گل ہوں ميں ، خزاں ہر گل کی ہے گويا خزاں ميری
''دريں حسرت سرا عمريست افسون جرس دارم
ز فيض دل تپيدنہا خروش بے نفس دارم''
رياض دہر ميں نا آشنائے بزم عشرت ہوں
خوشی روتی ہے جس کو ، ميں وہ محروم مسرت ہوں
مری بگڑی ہوئی تقدير کو روتی ہے گويائی
ميں حرف زير لب ، شرمندۂ گوش سماعت ہوں
پريشاں ہوں ميں مشت خاک ، ليکن کچھ نہيں کھلتا
سکندر ہوں کہ آئينہ ہوں يا گرد کدورت ہوں
يہ سب کچھ ہے مگر ہستی مری مقصد ہے قدرت کا
سراپا نور ہو جس کی حقيقت ، ميں وہ ظلمت ہوں
خزينہ ہوں ، چھپايا مجھ کو مشت خاک صحرا نے
کسی کيا خبر ہے ميں کہاں ہوں کس کی دولت ہوں
نظر ميری نہيں ممنون سير عرصۂ ہستی
ميں وہ چھوٹی سی دنيا ہوں کہ آپ اپنی ولايت ہوں
نہ صہبا ہوں نہ ساقی ہوں نہ مستی ہوں نہ پيمانہ
ميں اس ميخا نۂ ہستی ميں ہر شے کی حقيقت ہوں
مجھے راز دو عالم دل کا آئينہ دکھاتا ہے
وہی کہتا ہوں جو کچھ سامنے آنکھوں کے آتا ہے
عطا ايسا بياں مجھ کو ہوا رنگيں بيانوں ميں
کہ بام عرش کے طائر ہيں ميرے ہم زبانوں ميں
اثر يہ بھی ہے اک ميرے جنون فتنہ ساماں کا
مرا آ ئينہ دل ہے قضا کے راز دانوں ميں
رلاتا ہے ترا نظارہ اے ہندوستاں! مجھ کو
کہ عبرت خيز ہے تيرا فسانہ سب فسانوں ميں
ديا رونا مجھے ايسا کہ سب کچھ دے ديا گويا
لکھا کلک ازل نے مجھ کو تيرے نوحہ خوانوں ميں
نشان برگ گل تک بھی نہ چھوڑ اس باغ ميں گلچيں
تري قسمت سے رزم آرائياں ہيں باغبانوں ميں
چھپاکر آستيں ميں بجلياں رکھی ہيں گردوں نے
عنادل باغ کے غافل نہ بيٹھيں آشيانوں ميں
سن اے غافل صدا ميری، يہ ايسی چيز ہے جس کو
وظيفہ جان کر پڑھتے ہيں طائر بوستانوں ميں
وطن کی فکر کر ناداں مصيبت آنے والی ہے
تری برباديوں کے مشورے ہيں آسمانوں ميں
ذرا ديکھ اس کو جو کچھ ہو رہا ہے، ہونے والا ہے
دھرا کيا ہے بھلا عہد کہن کی داستانوں ميں
يہ خاموشی کہاں تک؟ لذت فرياد پيدا کر
زميں پر تو ہو اور تيری صدا ہو آسمانوں ميں
نہ سمجھو گے تو مٹ جائو گے اے ہندوستاں والو
تمھاری داستاں تک بھی نہ ہو گی داستانوں ميں
يہی آئين قدرت ہے، يہی اسلوب فطرت ہے
جو ہے راہ عمل ميں گام زن، محبوب فطرت ہے
ہويدا آج اپنے زخم پنہاں کر کے چھوڑوں گا
لہو رو رو کے محفل کو گلستاں کر کے چھوڑوں گا
جلانا ہے مجھے ہر شمع دل کو سوز پنہاں سے
تری تاريک راتوں ميں چراغاں کر کے چھوڑں گا
مگر غنچوں کی صورت ہوں دل درد آشنا پيدا
چمن ميں مشت خاک اپنی پريشاں کر کے چھوڑں گا
پرونا ايک ہی تسبيح ميں ان بکھرے دانوں کو
جو مشکل ہے، تو اس مشکل کو آساں کر کے چھوڑوں گا
مجھے اے ہم نشيں رہنے دے شغل سينہ کاوی ميں
کہ ميں داغ محبت کو نماياں کر کے چھوڑوں گا
دکھا دوں گا جہاں کو جو مر ی آنکھوں نے ديکھا ہے
تجھے بھی صورت آئينہ حيراں کر کے چھوڑوں گا
جو ہے پردوں ميں پنہاں، چشم بينا ديکھ ليتی ہے
زمانے کی طبيعت کا تقاضا ديکھ ليتی ہے
کيا رفعت کی لذت سے نہ دل کو آشنا تو نے
گزاری عمر پستی ميں مثال نقش پا تو نے
رہا دل بستۂ محفل، مگر اپنی نگاہوں کو
کيا بيرون محفل سے نہ حيرت آشنا تو نے
فدا کرتا رہا دل کو حسنيوں کی ادائوں پر
مگر ديکھی نہ اس آئينے ميں اپنی ادا تو نے
تعصب چھوڑ ناداں! دہر کے آئينہ خانے ميں
يہ تصويريں ہيں تيری جن کو سمجھا ہے برا تو نے
سراپا نالہ بيداد سوز زندگی ہو جا
سپند آسا گرہ ميں باندھ رکھی ہے صدا تو نے
صفائے دل کو کيا آرائش رنگ تعلق سے
کف آئينہ پر باندھی ہے او ناداں حنا تو نے
زميں کيا آسماں بھی تيری کج بينی پہ روتا ہے
غضب ہے سطر قرآں کو چليپا کر ديا تو نے
زباں سے گر کيا توحيد کا دعوی تو کيا حاصل
بنايا ہے بت پندار کو اپنا خدا تو نے
کنويں ميں تو نے يوسف کو جو ديکھا بھی تو کيا ديکھا
ارے غافل! جو مطلق تھا مقيد کر ديا تو نے
ہوس بالائے منبر ہے تجھے رنگيں بيانی کی
نصيحت بھی تری صورت ہے اک افسانہ خوانی کی
دکھا وہ حسن عالم سوز اپنی چشم پرنم کو
جو تڑپاتا ہے پروانے کو، رلواتا ہے شبنم کو
نرا نظارہ ہی اے بوالہوس مقصد نہيں اس کا
بنايا ہے کسی نے کچھ سمجھ کر چشم آدم کو
اگر ديکھا بھی اس نے سارے عالم کو تو کيا ديکھا
نظر آئی نہ کچھ اپنی حقيقت جام سے جم کو
شجر ہے فرقہ آرائی، تعصب ہے ثمر اس کا
يہ وہ پھل ہے کہ جنت سے نکلواتا ہے آدم کو
نہ اٹھا جذبۂ خورشيد سے اک بر گ گل تک بھی
يہ رفعت کی تمنا ہے کہ لے اڑتی ہے شبنم کو
پھرا کرتے نہيں مجروح الفت فکر درماں ميں
يہ زخمی آپ کر ليتے ہيں پيدا اپنے مرہم کو
محبت کے شرر سے دل سراپا نور ہوتا ہے
ذرا سے بيج سے پيدا رياض طور ہوتا ہے
دوا ہر دکھ کيی ہے مجروح تيغ آرزو رہنا
علاج زخم ہے آزاد احسان رفو رہنا
شراب بے خودی سے تا فلک پرواز ہے ميری
شکت رنگ سے سيکھا ہے ميں نے بن کے بو رہنا
تھمے کيا ديدئہ گرياں وطن کی نوحہ خوانی ميں
عبادت چشم شاعر کی ہے ہر دم با وضو رہنا
بنائيں کيا سمجھ کر شاخ گل پر آشياں اپنا
چمن ميں آہ! کيا رہنا جو ہو بے آبرو رہنا
جو تو سمجھے تو آزادی ہے پوشيدہ محبت ميں
غلامی ہے اسير امتياز ماو تو رہنا
يہ استغنا ہے ، پانی ميں نگوں رکھتا ہے ساغر کو
تجھے بھی چاہيے مثل حباب آبجو رہنا
نہ رہ اپنوں سے بے پروا ، اسی ميں خير ہے تيری
اگر منظور ہے دنيا ميں او بيگانہ خو رہنا
شراب روح پرور ہے محبت نوع انساں کی
سکھايا اس نے مجھ کو مست بے جام و سبو رہنا
محبت ہی سے پائی ہے شفا بيمار قوموں نے
کيا ہے اپنے بخت خفتہ کو بيدار قوموں نے
بيابان محبت دشت غربت بھی ، وطن بھی ہے
يہ ويرانہ قفس بھی، آشيانہ بھی ، چمن بھی ہے
محبت ہی وہ منزل ہے کہ منزل بھی ہے ، صحرا بھی
جرس بھی، کارواں بھی، راہبر بھی، راہزن بھی ہے
مرض کہتے ہيں سب اس کو، يہ ہے ليکن مرض ايسا
چھپا جس ميں علاج گردش چرخ کہن بھی ہے
جلانا دل کا ہے گويا سراپا نور ہو جانا
يہ پروانہ جو سوزاں ہو تو شمع انجمن بھی ہے
وہی اک حسن ہے، ليکن نظر آتا ہے ہر شے ميں
يہ شيريں بھی ہے گويا بيستوں بھی ، کوہکن بھی ہے
اجاڑا ہے تميز ملت و آئيں نے قوموں کو
مرے اہل وطن کے دل ميں کچھ فکر وطن بھی ہے؟
سکوت آموز طول داستان درد ہے ورنہ
زباں بھی ہے ہمارے منہ ميں اور تاب سخن بھی ہے

نميگرديد کوتہ رشتۂ معنی رہا کر دم
حکايت بود بے پاياں، بخاموشی ادا کر دم

 

-------------

 

Transliteration

 

Tasveer-e-Dard

Nahin Minnatkash-e-Taab-e-Shaneedan Dastan Meri
Khamoshi Guftugu Hai, Be-Zubani Hai Zuban Meri


Ye Dastoor-e-Zuban Bandi Hai Kaisa Teri Mehfil Mein
Yahan To Baat Karne Ko Tarasti Hai Zuban Meri


Uthaye Kuch Waraq Lale Ne, Kuch Nargis Ne, Kuch Gul Ne
Chaman Mein Har Taraf Bikhri Huwi Hai Dastan Meri


Urha Li Qumriyon Ne, Tootiyon Ne, Andleebon Ne
Chaman Walon Ne Mil Kar Loot Li Tarz-e-Faghan Meri


Tapak Ae Shama Ansu Ban Ke Parwane Ki Ankhon Se
Sarapa Darun Hun, Hasrat Bhari Hai Dastan Meri


Elahi ! Phir Maza Kiya Hai Yahan Dunya Mein Rehne Ka
Hayat-e-Javidan Meri! Na Marg-e-Naghaan Meri !


Mera Rona Nahi, Rona Hai Ye Sare Gulistan Ka
Woh Gul Hon Main, Khazan Har Gul Ki Hai Goya Khazan Meri


“Dareen Hasrat Sra Umarist Afsoon-e-Jaras Daram
Za-Faiz-e-Dil Tapeedan Ha Kharosh-e-Be Nafas Daram”

Riyadh-e-Dehr Mein Na-Ashnaye Bazm-e-Ishrat Hon
Khushi Roti Hai Jis Ko, Main Woh Mehroom-e-Mussarat Hun


Meri Bigri Huwi Taqdeer Ko Roti Hai Goyai
Main Harf-e-Zair-e-Lab, Sharminda’ay Gosh-e-Sama’at Hun


Preshan Hun Main Musht-e-Khaak, Lekin Kuch Nahin Khulta
Sikandar Hun Ke Aaeena Hun Ya Gard-e-Kadoorat Hun


Ye Sub Kuch Hai Magar Hasti Meri Maqsad Hai Qudrat Ka
Sarapa Noor Ho Jis Ki Haqiqat, Main Woh Zulmat Hun


Khazeena Hun, Chupaya Mujh Ko Musht-e-Khak-e-Sehra Ne
Kisi Ko Kya Khabar Hai Main Kahan Hun Kis Ki Doulat Hun!


Nazar Meri Nahin Mamnoon-e-Sair-e-Arsa-e-Hasti
Main Woh Chotti Si Dunya Hon Ke Ap Apni Walayat Hon


Na Sehba Hun Na Saqi Hon, Na Masti Hon Na Pemana
Main Iss Mai Khana-e-Hasti Mein Har Shay Ki Haqiqat Hun


Mujhe Raaz-e-Do Alam Dil Ka Aaeena Dikhata Hai
Wohi Kehta Hun Jo Kuch Samne Aankhon Ke Ata Hai


Atta Aesa Byan Mujh Ko Huwa Rangeen Byabanon Mein 
Ke Baam-e-Arsh Ke Taa’ir Hain Mere Hum Zubanon Mein

Asar Ye Bhi Hai Ek Mere Junoon-e-Fitna Saman Ka
Mera Aeena’ay Dil Hai Qaza Ke Raaz Danon Mein


Rulata Hai Tera Nazara Ae Hinduston! Mujh Ko
Ke Ibrat Khaiz Hai Tera Fasana Sub Fasanon Mein


Diya Rona Mujhe Aesa Ke Sub Kuch De Diya Goya
Likha Kalk-e-Azal Ne Mujh Ko Tere Noha Khawanon Mein


Nishan-e-Barg-e-Gul Tak Bhi Na Chorh Iss Bagh Mein Gul-Cheen !
Teri Qismat Se Razm Arayan Hain Baghbanon Mein


Chupa Kar Asteen Mein Bijliyan Rakhi Hain Gardoon Ne
Anadil Bagh Ke Ghafil Na Baithen Ashiyon Mein


Sun Ae Ghafil Sada Meri, Ye Aesi Cheez Hai Jis Ko
Wazifa Jaan Kar Perhte Hain Taair Bostanon Mein


Watan Ki Fikar Kar Nadan! Musibat Ane Wali Hai
Teri Barbadiyon Ke Mashware Hain Asmanon Mein


Zara Dekh Uss Ko Jo Kuch Ho Raha Hai, Hone Wala Hai
Dhara Kya Hai Bhala Ehd-e-Kuhan Ki Dastnon Mein


Ye Khamoshi Kahan Tak? Lazzat-e-Faryad Paida Kar
Zameen Par Tu Ho Aur Teri Sada Ho Asmanon Mein


Na Samjho Ge To Mit Jao Ge Ae Hindustanon Walo !
Tumhari Dastan Tak Bhi Na Ho Gi Daston Mein


Ye Aaeen-e-Qudrat Hai, Yehi Asloob-e-Fitrat Hai
Jo Hai Rah-e-Amal Mein Gaamzan, Mehboob-e-Fitrat Hai


Hawaida  Aaj Apne Zakhm-e-Pinhan Kar Ke Chorun Ga
Lahoo Ro Ro Ke Mehfil Ko Gulistan Kar Ke Chorun Ga


Jalana Hai Mujhe Har Shama-e-Dil Ko Souz-e-Pinhan Se
Teri Tareek Raaton Mein Charaghan Kar Ke Chorun Ga


Magar Ghunchon Ki Soorat Hon Dil-e-Dard Ashna Paida
Chaman Mein Musht-e-Khak Apni Preshan Kar Ke Chorun Ga


Parona Aik Hi Tasbeeh Mein In Bikhare Danon Ko
Jo Muskhil Hai, To Iss Mushkil Ki Asan Kar Ke Chorun Ga


Mujhe Ae Hum Nasheen Rehne De Shughal-e-Seena Kawi Mein
Ke Main Dagh-e-Mohabbat Ko Numayan Kar Ke Chorun Ga


Dikha Doon Ga Jahan Ko Jo Meri Ankhon Ne Dekha Hai
Tujhe Bhi Soorat-e-Aaeena Hairan Kar Ke Chorun Ga


Jo Hai Pardon Mein Pinhan, Chashm-e-Beena Dekh Leti Hai
Zamane Ki Tabiyat Ka Taqaza Dekh Leti Hai


Kiya Riffat Ki Lazzat Se Na Dil Ko Ashna Tu Ne
Guzri Umer Pasti Mein Misal-e-Naqsh-e-Pa Tu Ne


Raha Dil Basta-e-Mehfil, Magar Apni Nigahon Ko
Kiya Bairoon-e-Mehfil Se Na Hairat Ashna Tu Ne


Fida Karta Raha Dil Ko Haseenon Ki Ada’on Par
Magar Dekhi Na Iss Aaeene Mein Apni Ada Tu Ne


Taassub Chorh Nadan! Dehr Ke Aaeena Khane Mein
Ye Tasveerain Hain Teri Jin Ko Samjha Hai Bura Tu Ne


Sarapa Nala-e-Baidad-e-Souz-e-Zindagi Ho Ja
Sapand Aasa Girah Mein Bandh Rakhi Hai Sada Tu Ne


Safa’ay Dil Ko Kiya Araish-e-Rang-e-Taaluq Se 
Kaf-e-Aaeena Par Baandhi Hai O Nadan Hina Tu Ne


Zameen Kya, Asman Bhi Teri Kaj Beeni Pe Rota Hai
Ghazab Hai Satar-e-Quran Ko Chalipa Kar Diya Tu Ne !


Zuban Se Gar Kiya Touheed Ka Dawa To Kya Hasil !
Banya Hai Butt-e-Pindar Ko Apna Khuda Tu Ne


Kunwain Mein Tu Ne Yousaf Ko Jo Dekha Bhi To Kya Dejha
Are Ghafil! Jo Mutliq Tha Muqayyad Kar Diya Tu Ne


Hawas Bala’ay Manbar Hai Tujhe Rangeen Byani Ki
Nasihat  Bhi Teri Soorat Hai, Ek Afsana Khawani Ki


Dikha Woh Husn-e-Alam Souz Apni Chashme-Purnam Ko
Jo Tarpata Hai Parwane Ko, Rulata Hai Shabnam Ko


Nira Nazara Hi Ae Bu-Al-Hos Maqsad Nahin Iss Ka 
Banaya Hai Kissi Ne Kuch Samajh Kar Chashme-e-Adam Ko


Agar Dekha Bhi Uss Ne Sare Alam Ko To Kya Dekha
Nazar Ayi Na Kuch Apni Haqiqat Jaam Se Jam Ko


Shajar Hai Firqa Arayi, Taassuf Hai Samar Iss Ka
Ye Woh Phal Hai Ke Jannat Se Nikalwata Hai Adam Ko


Na Utha Jazba-e-Khursheed Se Ek Barg-e-Gul Tak Bhi
Ye Riffat Ki Tamana Hai Ke Le Urti Hai Shabnam Ko


Phira Karte Nahi Majrooh-e-Ulfat Fikar-e-Darman Mein
Ye Zakhami Aap Kar Lete Hain Paida Apne Marham Ko


Mohabbat Ke Sharar Se Dil Sarapa Noor Hota Hai
Zara Se Beej Se Paida Riyaaz-e-Toor Hota Hai


Dawa Har Dukh Ki Hai Majrooh-e-Taegh-e-Arzoo Rehna
Elaj-e-Zakham Hai Azad-e-Ehsaan-e-Rafoo Rehna


Sharab-e-Bekhudi Se Ta Falak Parwaz Ha Meri
Shikast-e-Rang Se Sikha Hai Main Ne Ban Ke Boo Rehna


Thame Kya Dida’ay Giryan Watan Ki Noha Khawani Mein
Ibadat Chashm-e-Shayar Ki Hai Har Dam Ba-Wazoo Rehna


Banayen Kya Samajh Kar Shakh-e-Gul Par Ashiyan Apna
Chaman Mein Aah! Kya Rehna Jo Ho Be Abroo Rehna


Jo Tu Samjhe To Azadi Hai Poshida Mohabat Mein
Ghulami Hai Aseer-e-Imtiaz-e-Mawatu Rehna


Ye Astagna Hai, Pani Mein Nigun Rakhta Hai Saghar Ko
Tujhe Bhi Chahye Misl-e-Habab-e-Aabju Rehna


Na Reh Apnon Se Beparwa, Issi Mein Khair Hai Teri
Agar Manzoor Hai Dunya Mein Ao Begana Khor! Rehna


Sharab-e-Rooh Parwar Hai Mohabbat Nu-e-Insan Ki
Shikaya Iss Ne Mujh Ko Mast Bejaam-o-Saboo Rehna


Mohabbat Hi Se Payi Hai Shafa Bimaar Qoumon Ne 
Kiya Hai Apne Bakht-e-Khufta Ko Baidar Qoumon Ne


Byaban-e-Mohabbat Dasht-e-Ghurbat Bhi, Watan Bhi Hai
Ye Wairana Qafas Bhi, Ashiyana Bhi, Chaman Bhi Hai


Mohabbat Hi Woh Manzil Hai Ke Manzil Bhi Hai, Sehra Bhi
Jaras Bhi, Karwan Bhi, Rahbar Bhi, Rahzan Bhi Hai


Marz Kehte Hain Sub Iss Ko, Ye Hai Lekin Marz Aesa
Chupa Jis Mein Ilaj-e-Gardish-e-Charakh-e-Kuhan Bhi Hai


Jalana Dil Ka Hai Goya Sarapa Noor Ho Jana
Ye Parwana Jo Souzan Ho To Shama-e-Anjuman Bhi Hai


Wohi Ek Husn Hai, Lekin Nazar Ata Hai Har Shay Mein
Ye Sheerin Bhi Hai Goya, Bestoon Bhi, Kohkan Bhi Hai


Ujaarha Hai Tameez-e-Millat-o-Aaeen Ne Qoumon Ko
Mere Ahl-e-Watan Ke Dil Mein Kuch Fikar-e-Watan Bhi Hai?

Sakoot Aamoz Tool-e-Dastan-e-Dard Hai Warna
Zuban Bhi Hai Humare Munh Mein Aur Taab-e-Sukhan Bhi Hai


"Nameegar Deed Ko The Rishta’ay Ma’ani Raha Kardam
Hikayat-e-Bood Be Payan, Bakhamoshi Ada Kardam"

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP