Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

شاعر

 



قوم گويا جسم ہے ، افراد ہيں اعضائے قوم
منزل صنعت کے رہ پيما ہيں دست و پائے قوم
محفل نظم حکومت ، چہرۂ زيبائے قوم
شاعر رنگيں نوا ہے ديدہ بينائے قوم

مبتلائے درد کوئی عضو ہو روتی ہے آنکھ
کس قدر ہمدرد سارے جسم کی ہوتی ہے آنکھ

 

----------

Transliteration

 

Shayar

Qoum Goya Jism Hai, Afrad Hain Azaaye Qoum
Manzil-e-Sanaat Ke Rah Pema Hain Dast-O-Paye Qoum

 

Mehfil-e-Nazam-e-Hukumat, Chehra-e-Zaibaye Qoum
Shayar-e-Rangee Nawa Hai Dida-e-Beenaye Qoum


Mubtalaye Dard Koi Uzoo Ho, Roti Hai Ankh 
Kis Qadar Hamdard Sare Jism Ki Hoti Hai Ankh

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP