Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

انسان اور بزم قد رت

 


صبح خورشيد درخشاں کو جو ديکھا ميں نے
بزم معمورہ ہستی سے يہ پوچھا ميں نے
پر تو مہر کے دم سے ہے اجالا تيرا
سيم سيال ہے پانی ترے دريائوں کا
مہر نے نور کا زيور تجھے پہنايا ہے
تيری محفل کو اسی شمع نے چمکايا ہے
گل و گلزار ترے خلد کی تصويريں ہيں
يہ سبھی سورۂ 'والشمس' کی تفسيريں ہيں
سرخ پوشاک ہے پھولوں کی ، درختوں کی ہری
تيری محفل ميں کوئی سبز ، کوئی لال پری
ہے ترے خيمۂ گردوں کی طلائی جھالر
بدلياں لال سی آتی ہيں افق پر جو نظر
کيا بھلی لگتی ہے آنکھوں کو شفق کی لالی
مے گلرنگ خم شام ميں تو نے ڈالی
رتبہ تيرا ہے بڑا ، شان بڑی ہے تيری
پردہ نور ميں مستور ہے ہر شے تيری
صبح اک گيت سراپا ہے تری سطوت کا
زير خورشيد نشاں تک بھی نہيں ظلمت کا
ميں بھی آباد ہوں اس نور کی بستی ميں مگر
جل گيا پھر مری تقدير کا اختر کيونکر؟

نور سے دور ہوں ظلمت ميں گرفتار ہوں ميں
کيوں سيہ روز ، سيہ بخت ، سيہ کار ہوں ميں؟

ميں يہ کہتا تھا کہ آواز کہيں سے آئی
بام گردوں سے وہ يا صحن زميں سے آئی
ہے ترے نور سے وابستہ مری بود و نبود
باغباں ہے تری ہستی پے گلزار وجود
انجمن حسن کی ہے تو ، تری تصوير ہوں ميں
عشق کا تو ہے صحيفہ ، تری تفسير ہوں ميں
ميرے بگڑے ہوئے کاموں کو بنايا تو نے
بار جو مجھ سے نہ اٹھا وہ اٹھايا تو نے
نور خورشيد کی محتاج ہے ہستی ميری
اور بے منت خورشيد چمک ہے تری
ہو نہ خورشيد تو ويراں ہو گلستاں ميرا
منزل عيش کی جا نام ہو زنداں ميرا
آہ! اے راز عياں کے نہ سمجھنے والے
حلقہ ، دام تمنا ميں الجھنے والے
ہائے غفلت کہ تری آنکھ ہے پابند مجاز
ناز زيبا تھا تجھے ، تو ہے مگر گرم نياز

تو اگر اپنی حقيقت سے خبردار رہے
نہ سيہ روز رہے پھر نہ سيہ کار رہے

 

---------------------------

 

Transliteration

Insan Aur Bazm-e-Qudrat

Subah Khursheed-e-Durakhsan Ko Jo Dekha Main Ne
Bazm-e-Maamoora-e-Hasti Se Ye Pucha Main Ne


Par Tu-e-Mehr Ke Dam Se Hai Ujala Tera
Seem-e-Sayyal Hai Pani Tere Daryaon Ka

Mehr Ne Noor Ka Ziawar Tujhe Pehnaya Hai
Teri Mehfil Ko Issi Shama Ne Chamkaya Hai


Gul-o-Gulzar Tere Khuld Ki Tasveerain Hain
Ye Sabhi Surah-e-‘Wa Shamas’ Ki Tafseerain Hain


Surkh Poshak Hai Phoolon Ki, Darakht Ki Hari
Teri Mehfil Mein Koi Sabz, Koi Laal Pari


Hai Tere Khaima-e-Gardoon Ki Talayi Jhalar
Badliyan Laal Si Ati Hain Ufaq Par Jo Nazar


Kya Bhali Lagti Hai Ankhon Ki Shafaq Ki Laali
Mai-e-Gulrang Khum-e-Shaam Mein Tu Ne Dali


Rutba Tera Hai Bara, Shan Bari Hai Teri
Parda-e-Noor Mein Mastoor Hai Har Shay Teri


Subah Ek Geet Sarapa Hai Teri Sitwat Ka
Zair-e-Khursheed Nishan Tak Bhi Nahin Zulmat Ka


Main Bhi Abad Hun Iss Noor Ki Basti Mein Magar
Jal Gya Phir Meri Taqdeer Ka Akhtar Khunkar?


Noor Se Door Hun Zulmat Mein Griftar Hun Main
Kyun Siyah-e-Roz, Sayah Bakht, Siyah Kar Hun Main?


Main Ye Kehta Tha Ke Awaz Kahin Se Ayi
Baam-e-Gardoon Se Ya Sehan-e-Zameen Se Ayi

Hai Tere Noor Se Wabasta Meri Bood-o-Nabood
Baghban Hai Teri Hasti Bay-e-Gulzar-e-Wujood


Anjuman Husn Ki Hai Tu, Teri Tasveer Hun Main
Ishq Ka Tu Hai Sahifa, Teri Tafseer Hun Main


Mere Bighre Huwe Kamon Ko Banaya Tu Ne
Baar Jo Mujh Se Na Utha Woh Uthaya Tu Ne

Noor-e-Khursheed Ki Mohtaj Hai Hasti Meri
Aur Be Minnat-e-Khursheed Chamak Hai Teri


Ho Na Khursheed To Weeran Ho Gulistan Mera
Manzil-e-Aysh Ki Ja Naam Ho Zindan Mera

Ah! Ae Raaz-e-Ayan Ke Na Samajh Wale!
Halqa-e-Daam-e-Tammana Mein Ulajh Wale


Haye Ghafla Ke Teri Ankh Hai Paband-e-Majaz
Naaz Zaiba Tha Tujhe, Tu Hai Magar Garm-e-Niaz

Tu Agar Apni Haqiqat Se Khabardar Rahe
Na Siyah Roz Rahe Phir Na Siyahkaar Rahe

 

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP