Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

ماہ نو

 


ٹوٹ کر خورشيد کی کشتی ہوئی غرقاب نيل
ايک ٹکڑا تيرتا پھرتا ہے روئے آب نيل
طشت گردوں ميں ٹپکتا ہے شفق کا خون ناب
نشتر قدرت نے کيا کھولی ہے فصد آفتاب

چرخ نے بالی چرا لی ہے عروس شام کی
نيل کے پانی ميں يا مچھلی ہے سيم خام کی

قافلہ تيرا رواں بے منت بانگ درا
گوش انساں سن نہيں سکتا تری آواز پا
گھٹنے بڑھنے کا سماں آنکھوں کو دکھلاتا ہے تو
ہے وطن تيرا کدھر ، کس ديس کو جاتا ہے تو
ساتھ اے سيارۂ ثابت نما لے چل مجھے
خار حسرت کی خلش رکھتی ہے اب بے کل مجھے

نور کا طالب ہوں ، گھبراتا ہوں اس بستی ميں ميں
طفلک سيماب پا ہوں مکتب ہستی ميں ميں

 

 

 

-------------

 

 

 

Transliteration

 

 

 

Mah-e-Nau

 

Toot Kar Khursheed Ki Kashti Huwi Gharqab-e-Neel
Aik Tukra Tairta Phirta Hai Rooye Aab-e-Neel


 

Tasht-e-Gardoon Mein Tapakta Hai Shafaq Ka Khoon-e-Naab
Nashtar-e-Qudrat Ne Kya Kholi Hai Fasd-e-Aftab


 

Charakh Ne Bali Chura Li Hai Uroos-e-Shaam Ki
Neel Ke Pani Mein Ya Machli Hai Seem-e-Khaam Ki


 

Qafla Tera Rawan Be-Minnat-e-Bang-e-Dra
Gosh-e-Insaan Sun Nahin Sakta Teri Awaz-e-Pa

 

Ghatne Barhne Ka Saman Ankhon Ko Dikhlata Hai Tu
Hai Watan Tera Kidhar, Kis Dais Ko Jata Hai Tu


 

Sath Ae Sayyara-e-Sabit Numa Le Chal Mujhe
Khar-e-Hasrat Ki Khalish Rakhti Hai Ab Be Kal Mujhe


 

Noor Ka Talib Hun, Ghabrata Hun Iss Basti Mein Main
Tiflak-e-Seemab Pa Hun Maktab-e-Hasti Mein Main

 

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP