Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

صدائے درد

جل رہا ہوں کل نہيں پڑتی کسی پہلو مجھے

ہاں ڈبو دے اے محيط آب گنگا تو مجھے

سرزميں اپنی قيامت کی نفاق انگيز ہے

وصل کيسا ، ياں تو اک قرب فراق انگيز ہے

بدلے يک رنگی کے يہ نا آشنائی ہے غضب

ايک ہی خرمن کے دانوں ميں جدائی ہے غضب

جس کے پھولوں ميں اخوت کی ہوا آئی نہيں

اس چمن ميں کوئی لطف نغمہ پيرائی نہيں

 

لذت قرب حقيقی پر مٹا جاتا ہوں ميں

اختلاط موجہ و ساحل سے گھبراتا ہوں ميں

 

دانہ خرمن نما ہے شاعر معجز بياں

ہو نہ خرمن ہی تو اس دانے کی ہستی پھر کہاں

حسن ہو کيا خود نما جب کوئی مائل ہی نہ ہو

شمع کو جلنے سے کيا مطلب جو محفل ہی نہ ہو

ذوق گويائی خموشی سے بدلتا کيوں نہيں

ميرے آئينے سے يہ جوہر نکلتا کيوں نہيں

 

کب زباں کھولی ہماری لذت گفتار نے

پھونک ڈالا جب چمن کو آتش پيکار نے

---------------

کل نہ پڑنا: چین نہ آنا، بیقراری، کسی پہلو: کسی طرح بھی، محیط: دریا کا پاٹ، آب گنگا: دریائے گنگا ہندوؤں کا بہت مقدس دریا، قیامت کی: بیحد، بہت زیادہ، نفاق انگیز: آپس میں پھوٹ/نااتفاقی ڈالنے والی، قرب فراق آمیز: ایسی نزدیکی جس میں دوری شامل ہو،(ہندوؤں اور مسلمانوں میں ناچاقی کی طرف اشارہ ہے)، غضب ہے؛ دکھ کی بات  ہے، خرمن: غلے کا ڈھیر، نغمہ پیرائی: گیت گانا، قرب حقیقی: مراد صحیح معنوں میں دوستی /بھائی چارا، مٹا جانا: کسی چیز/بات سے بیحد لگاؤہونا، اختلاط: باہم ملنا، موجہ و ساحل: لہر اور کنارہ، دانہ خرمن نما: ایسا دانہ جس سے پورے کھلیان کا پتا چل جائے(دانہ مراد شاعراور خرمن مراد قوم) ، شاعرمعجزبیان: معجزے کی سی فصیح شاعری کرنے والا، مائل: توجہ کرنے/دیکھنے والا، خود نما: اپنے حسن کی نمائش کرنےوالا، ذوق گویائی: بولنے کا شوق، جوہر: مراد چمک دمک، زبان کھولنا: بولنا، لذت گفتار: بولنے کا مزہ، پھونک ڈالا: جلا ڈالا، آتشں پیکار: مراد دو قوموں(ہندو، مسلم) کی باہمی دشمنی، 

---------------

 

Transliteration

 

Sadaye Dard

Jal Raha Hun Kal Nahin Parti Kisi Pehlu Mujhe
Haan Dabo De Ae Muheet-e-Aab-e-Ganga Tu Mujhe

Sarzameen Apni Qayamat Ki Nafaq-Angaiz Hai
Wasl Kaisa, Yaan To Ek Qurb-e-Firaq Angaiz Hai

 

Badle Yak Rangi Ke Ye  Nashnayi Hai Ghazab

Aik Hi Khirman Ke Danon Mein Judai Hai Ghazab


Jis Ke Phoolon Mein Akhuwat Ki Hawa Ayi Nahin
Uss Cchaman Mein Koi Lutf-e-Naghma Pairayi Nahin


Lazzat-e-Qurb-e-Haqiqi Par Mita Jata Hun Main
Ikhtilat-e-Mouja-o-Sahil Se Ghabrata Hun Main


Dana-e-Khirman Numa Hai Shayar-e-Maujiz Byan
Ho Na Khirman Hi To Iss Dane Ki Hasti Phir Kahan


Husn Ho Kya Khudnuma Jab Koi Maeel Hi Na Ho
Shama Ko Jalne Se Kya Matlab Jo Mehfil Hi Na Ho


Zauq-e-Goyai Khamoshi Se Badalta Kyun Nahin
Mere Aaeene Se Ye Johar Nikalta Kyun Nahin


Kaab Zuban Kholi Humari Lazzat-e-Guftar Ne!
Phoonk Dala Jab Chaman Ko Aatish-e-Paikar Ne

-------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP