Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

ايک مکڑا اور مکھی

 

ماخوذ - بچوں کےلیے

 



اک دن کسی مکّھی سے يہ کہنے لگا مکڑا
اِس راہ سے ہوتا ہے گزر روز تمھارا
ليکن مری کٹيا کی نہ جاگی کبھی قسمت
!بھولے سے کبھی تم نے يہاں پاؤں نہ رکھّا
غيروں سے نہ مليے تو کوئی بات نہيں ہے
اپنوں سے مگر چاہيے يُوں کھنچ کے نہ رہنا
آؤ جو مرے گھر ميں تو عزّت ہے يہ ميری
وہ سامنے سيڑھی ہے جو منظور ہو آنا
مکھی نے سُنی بات جو مکڑے کی تو بولی
!حضرت! کسی نادان کو ديجے گا يہ دھوکا

اس جال ميں مکّھی کبھی آنے کی نہيں ہے
جو آپ کی سيڑھی پہ چڑھا ، پھر نہيں اُترا

مکڑے نے کہا واہ! فريبی مجھے سمجھے
تم سا کوئی نادان زمانے ميں نہ ہو گا
منظور تمھاری مجھے خاطر تھی وگرنہ
کچھ فائدہ اپنا تو مرا اس ميں نہيں تھا
اُڑتی ہوئی آئی ہو خدا جانے کہاں سے
ٹھہرو جو مرے گھر ميں تو ہے اس ميں بُرا کيا؟
اِس گھر ميں کئی تم کو دکھانے کی ہيں چيزيں
باہر سے نظر آتا ہے چھوٹی سی يہ کٹيا
لٹکے ہوئے دروازوں پہ باريک ہيں پردے
ديواروں کو آئينوں سے ہے ميں نے سجايا
مہمانوں کے آرام کو حاضر ہيں بچھونے
ہر شخص کو ساماں يہ ميّسر نہيں ہوتا
مکّھی نے کہا خير ! يہ سب ٹھيک ہے ليکن
!ميں آپ کے گھر آؤں ، يہ اُميد نہ رکھنا

اِن نرم بچھونوں سے خدا مجھ کو بچائے
!سو جائے کوئی اِن پہ تو پھر اُٹھ نہيں سکتا

مکڑے نے کہا دل ميں سُنی بات جو اُس کی
پھانسوں اسے کِس طرح يہ کم بخت ہے دانا
سو کام خوشامد سے نکلتے ہيں جہاں ميں
ديکھو جسے دنيا ميں خوشامد کا ہے بندا
!يہ سوچ کے مکھی سے کہا اس نے بڑی بی 
!اللہ نے بخشا ہے بڑا آپ کو رُتبا
ہوتی ہے اُسے آپ کی صورت سے محبت
ہو جس نے کبھی ايک نظر آپ کو ديکھا
آنکھيں ہيں کہ ہيرے کی چمکتی ہوئی کنياں
سر آپ کا اللہ نے کلغی سے سجايا
!يہ حُسن ، يہ پوشاک ، يہ خوبی ، يہ صفائی
پھر اس پہ قيامت ہے، يہ اُڑتے ہوئے گانا
مکھی نے سُنی جب يہ خوشامد تو پسيجی
بولی کہ نہيں آپ سے مجھ کو کوئی کھٹکا
انکار کی عادت کو سمجھتی ہوں برا ميں
سچ يہ ہے کہ دل توڑنا اچھا نہيں ہوتا
يہ بات کہی اور اُڑی اپنی جگہ سے
پاس آئی تو مکڑے نے اُچھل کر اُسے پکڑا

بھوکا تھا کئی روز سے اب ہاتھ جو آئی
آرام سے گھر بيٹھ کے مکّھی کو اُڑايا

...............

 

مشکل الفاظ کے معنی

 

مکڑا: جالا بن کر اس میں رہنے والا کیڑا، کٹیا: جھونپڑی، قسمت جاگنا: اچھے دن آنا، غیر: اجنبی، کھنچ کے رہنا: دور دور رہنا، منظور ہونا: پسند آنا، چاہنا، نادان: نا سمجھ، کم عقل، جال میں آنا: دھوکے میں آنا، نہیں اترا: مراد نہیں بچا، فریبی: دھوکا دینے والا، خاطر: تواضع، دعوت، میسر ہونا: حاصل ہونا، اٹھ نہیں سکتا: یعنی مارا جاتاہے، پھانسنا: قابو میں لانا، کم بخت: بد نصیب، دانا: عقل سمجھ والی، بڑی بی: عزت کے طوریہ کہا، رتبا: شان، عزت، کنیاں: جمع کنی، باریک کا ٹکڑا، کلغی: تاج، پوشاک: لباس، سجانا: خوبصورت بنانا، پسیجی: نرم پڑگئی، کھٹکا: ڈر، دل توڑنا: مایوس کردینا،

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

TRANLITERATION


Aik Makra Aur Makhi
(Makhooz) - Bachon Ke Liye

Ek Din Kisi Makhi Se Ye Kehne Laga Makra
Iss Rah Se Hota Hai Guzar Roz Tumhara


Lekin Meri Kutiya Ki Na Jagi Kabhi Kismat
Bhoole Se Kabhi Tum Ne Yahan Paun Na Rakha



Ghairon Se Na Miliye To Koi Baat Nahin Hai
Apno Se Magar Chahiye Yun Khinch Ke Na Rehna

Aao Jo Mere Ghar Mein To Izzat Hai Ye Meri
Woh Samne Seerhi Hai Jo Manzoor Ho Ana


Makhi Ne Suni Baat Jo Makre Ki To Boli
Hazrat! Kisi Nadan Ko Dijiye Ga Ye Dhoka


Iss Jaal Mein Makhi Kabhi Aane Ki Nahin Hai
Jo Aap Ki Seerhi Pe Charha, Phir Nahin Utra


Makre Ne Kaha Wah! Farebi Mujhay Samjhe
Tum Sa Koi Nadan Zamane Mein Na Ho Ga

Manzoor Tumhari Mujhe Khatir Thi Wagarna
Kuch Faida Apna To Mera Iss Mein Nahin Tha


Urti Huwi Ayi Ho Khuda Jane Kahan Se
Thehro Jo Mere Ghar Mein To Hai Iss Mein Bura Kya!



Iss Ghar Mein Khai Tum Ko Dikhane Ki Hain Cheezain
Bahir Se Nazar Ata Hai Chotti Si Ye Kutiya


Latke Huay Darwazon Pe Bareek Hain Parde
Diwaron Ko Aaeyno Se Hai Mein Ne Sajaya


Mehmanon Ke Aaram Ko Hazir Hain Bichone
Her Shaks Ko Saman Ye Mayaser Nahin Hota



Makhi Ne Kaha Khair, Ye Sub Theek Hai Lekin
Mein Aap Ke Ghar Aaun, Ye Umeed Na Rakhna


In Naram Bichonon Se Khuda Mujh Ko Bachaye
So Jaye Koi In Pe To Phir Uth Nahin Sakta


Makre Ne Kaha Dil Mein, Suni Baat Jo Uss Ki
Phansun Issay Kis Tarha Ye Kambakhat Hai Dana



So Kaam Khushamad Se Nikalte Hain Jahan Mein
Dekho Jise Duniya Mein Khushamad Ka Hai Banda

Ye Soch Ke Makhi Se Kaha Uss Ne Bari Bee !
Allah Ne Bakhsha Hai Bara Aap Ko Rutba

Hoti Hai Ussay Aap Ki Soorat Se Mohhabat
Ho Jis Ne Kabi Aik Nazar Aap Ko Dekha



Aankhain Hain Ke Heeray Ki Chamakti Huwi Kaniyan
Ser Aap Ka Allah Ne Kalgi Se Sajaya



Ye Husn, Ye Poshak, Ye Khubi, Ye Safai
Phir Iss Pe Qayamat Hai Ye Urte Huay Gana



Makhi Ne Suni Jab Ye Khushamad To Pasiji
Boli Ke Nahin Aap Se Mujh Ko Koi Khatka


Inkar Ki Aadat Ko Samajhti Hun Bura Mein
Sach Ye Hai Ke Dil Torna Acha Nahin Hota


Ye Baat Kahi Aur Uri Apni Jagha Se
Paas Ayi To Makre Ne Uchal Ker Ussay Pakra


Bhooka Tha Kai Roz Se, Ab Hath Jo Aye

Aaram Se Ghar Baith Ke Makhi Ko Uraya

---------------- 

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP