Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

ميں اورتو

 

نہ سليقہ مجھ ميں کليم کا نہ قرينہ تجھ ميں خليل کا
ميں ہلاک جادوئے سامری، تو قتيل شيوۂ آزری

ميں نوائے سوختہ در گلو ، تو پريدہ رنگ، رميدہ بو
ميں حکايت غم آرزو ، تو حديث ماتم دلبری

مرا عيش غم ،مرا شہد سم ، مری بود ہم نفس عدم
ترا دل حرم، گرو عجم ترا ديں خريدہ کافری

دم زندگی رم زندگی، غم زندگی سم زندگی
غم رم نہ کر، سم غم نہ کھا کہ يہی ہے شان قلندری

تری خاک ميں ہے اگر شرر تو خيال فقر و غنا نہ کر
کہ جہاں ميں نان شعير پر ہے مدار قوت حيدری

کوئی ايسی طرز طواف تو مجھے اے چراغ حرم بتا
کہ ترے پتنگ کو پھر عطا ہو وہی سرشت سمندری

گلۂ جفائے وفا نما کہ حرم کو اہل حرم سے ہے
کسی بت کدے ميں بياں کروں تو کہے صنم بھی 'ہری ہری

نہ ستيزہ گاہ جہاں نئی نہ حريف پنجہ فگن نئے
وہی فطرت اسد اللہی وہی مرحبی، وہی عنتری


کرم اے شہ عرب و عجم کہ کھڑے ہيں منتظر کرم
وہ گدا کہ تو نے عطا کيا ہے جنھيں دماغ سکندری

 

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP