Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

شکوہ

 

کيوں زياں کار بنوں ، سود فراموش رہوں
فکر فردا نہ کروں محو غم دوش رہوں
نالے بلبل کے سنوں اور ہمہ تن گوش رہوں
ہم نوا ميں بھی کوئی گل ہوں کہ خاموش رہوں

جرات آموز مری تاب سخن ہے مجھ کو
شکوہ اللہ سے ، خاکم بدہن ، ہے مجھ کو

ہے بجا شيوۂ تسليم ميں مشہور ہيں ہم
قصہ درد سناتے ہيں کہ مجبور ہيں ہم
ساز خاموش ہيں ، فرياد سے معمور ہيں ہم
نالہ آتا ہے اگر لب پہ تو معذور ہيں ہم

اے خدا! شکوۂ ارباب وفا بھی سن لے
خوگر حمد سے تھوڑا سا گلا بھی سن لے

تھی تو موجود ازل سے ہی تری ذات قديم
پھول تھا زيب چمن پر نہ پريشاں تھی شميم
شرط انصاف ہے اے صاحب الطاف عميم
بوئے گل پھيلتی کس طرح جو ہوتی نہ نسيم

ہم کو جمعيت خاطر يہ پريشانی تھی
ورنہ امت ترے محبوب کی ديوانی تھی؟

ہم سے پہلے تھا عجب تيرے جہاں کا منظر
کہيں مسجود تھے پتھر ، کہيں معبود شجر
خوگر پيکر محسوس تھی انساں کی نظر
مانتا پھر کوئی ان ديکھے خدا کو کيونکر

تجھ کو معلوم ہے ، ليتا تھا کوئی نام ترا؟
قوت بازوئے مسلم نے کيا کام ترا

بس رہے تھے يہيں سلجوق بھی، تورانی بھی
اہل چيں چين ميں ، ايران ميں ساسانی بھی
اسی معمورے ميں آباد تھے يونانی بھی
اسی دنيا ميں يہودی بھی تھے ، نصرانی بھی

پر ترے نام پہ تلوار اٹھائی کس نے
بات جو بگڑی ہوئی تھی ، وہ بنائی کس نے

تھے ہميں ايک ترے معرکہ آراؤں ميں
خشکيوں ميں کبھی لڑتے ، کبھی درياؤں ميں
ديں اذانيں کبھی يورپ کے کليساؤں ميں
کبھی افريقہ کے تپتے ہوئے صحراؤں ميں

شان آنکھوں ميں نہ جچتی تھی جہاں داروں کی
کلمہ پڑھتے تھے ہم چھاؤں ميں تلواروں کی

ہم جو جيتے تھے تو جنگوں کے مصيبت کے ليے
اور مرتے تھے ترے نام کی عظمت کے ليے
تھی نہ کچھ تيغ زنی اپنی حکومت کے ليے
سربکف پھرتے تھے کيا دہر ميں دولت کے ليے؟

قوم اپنی جو زر و مال جہاں پر مرتی
بت فروشی کے عوض بت شکنی کيوں کرتی

ٹل نہ سکتے تھے اگر جنگ ميں اڑ جاتے تھے
پاؤں شيروں کے بھی ميداں سے اکھڑ جاتے تھے
تجھ سے سرکش ہوا کوئی تو بگڑ جاتے تھے
تيغ کيا چيز ہے ، ہم توپ سے لڑ جاتے تھے

نقش توحيد کا ہر دل پہ بٹھايا ہم نے
زير خنجر بھی يہ پيغام سنايا ہم نے

تو ہی کہہ دے کہ اکھاڑا در خيبر کس نے
شہر قيصر کا جو تھا ، اس کو کيا سر کس نے
توڑے مخلوق خداوندوں کے پيکر کس نے
کاٹ کر رکھ ديے کفار کے لشکر کس نے

کس نے ٹھنڈا کيا آتشکدہ ايراں کو؟
کس نے پھر زندہ کيا تذکرہ يزداں کو؟

کون سی قوم فقط تيری طلب گار ہوئی
اور تيرے ليے زحمت کش پيکار ہوئی
کس کی شمشير جہاں گير ، جہاں دار ہوئی
کس کی تکبير سے دنيا تري بيدار ہوئی

کس کی ہيبت سے صنم سہمے ہوئے رہتے تھے
منہ کے بل گر کے 'ھو اللہ احد' کہتے تھے

آ گيا عين لڑائی ميں اگر وقت نماز
قبلہ رو ہو کے زميں بوس ہوئی قوم حجاز
ايک ہی صف ميں کھڑے ہو گئے محمود و اياز
نہ کوئی بندہ رہا اور نہ کوئی بندہ نواز

بندہ و صاحب و محتاج و غني ايک ہوئے
تيری سرکار ميں پہنچے تو سبھی ايک ہوئے

محفل کون و مکاں ميں سحر و شام پھرے
مے توحيد کو لے کر صفت جام پھرے
کوہ ميں ، دشت ميں لے کر ترا پيغام پھرے
اور معلوم ہے تجھ کو ، کبھی ناکام پھرے

دشت تو دشت ہيں ، دريا بھی نہ چھوڑے ہم نے
بحر ظلمات ميں دوڑا دیے گھوڑے ہم نے

صفحہ دہر سے باطل کو مٹايا ہم نے
نوع انساں کو غلامی سے چھڑايا ہم نے
تيرے کعبے کو جبينوں سے بسايا ہم نے
تيرے قرآن کو سينوں سے لگايا ہم نے

پھر بھی ہم سے يہ گلہ ہے کہ وفادار نہيں
ہم وفادار نہيں ، تو بھی تو دلدار نہيں

امتيں اور بھی ہيں ، ان ميں گنہ گار بھی ہيں
عجز والے بھی ہيں ، مست مۓ پندار بھی ہيں
ان ميں کاہل بھی ہيں، غافل بھی ہيں، ہشيار بھی ہيں
سينکڑوں ہيں کہ ترے نام سے بيزار بھی ہيں

رحمتيں ہيں تری اغيار کے کاشانوں پر
برق گرتی ہے تو بيچارے مسلمانوں پر

بت صنم خانوں ميں کہتے ہيں ، مسلمان گئے
ہے خوشی ان کو کہ کعبے کے نگہبان گئے
منزل دہر سے اونٹوں کے حدی خوان گئے
اپنی بغلوں ميں دبائے ہوئے قرآن گئے

خندہ زن کفر ہے ، احساس تجھے ہے کہ نہيں
اپنی توحيد کا کچھ پاس تجھے ہے کہ نہيں

يہ شکايت نہيں ، ہيں ان کے خزانے معمور
نہيں محفل ميں جنھيں بات بھی کرنے کا شعور
قہر تو يہ ہے کہ کافر کو مليں حور و قصور
اور بيچارے مسلماں کو فقط وعدہ حور

اب وہ الطاف نہيں ، ہم پہ عنايات نہيں
بات يہ کيا ہے کہ پہلی سی مدارات نہيں

کيوں مسلمانوں ميں ہے دولت دنيا ناياب
تيری قدرت تو ہے وہ جس کی نہ حد ہے نہ حساب
تو جو چاہے تو اٹھے سينۂ صحرا سے حباب
رہرو دشت ہو سيلی زدۂ موج سراب

طعن اغيار ہے ، رسوائی ہے ، ناداری ہے
کيا ترے نام پہ مرنے کا عوض خواری ہے؟

بنی اغيار کی اب چاہنے والی دنيا
رہ گئی اپنے ليے ايک خيالی دنيا
ہم تو رخصت ہوئے ، اوروں نے سنبھالی دنيا
پھر نہ کہنا ہوئی توحيد سے خالی دنيا

ہم تو جيتے ہيں کہ دنيا ميں ترا نام رہے
کہيں ممکن ہے کہ ساقی نہ رہے ، جام رہے

تيری محفل بھی گئی ، چاہنے والے بھی گئے
شب کے آہيں بھی گئيں ، صبح کے نالے بھی گئے
دل تجھے دے بھی گئے ، اپنا صلا لے بھی گئے
آ کے بيٹھے بھی نہ تھے اور نکالے بھی گئے

آئے عشاق ، گئے وعدۂ فردا لے کر
اب انھيں ڈھونڈ چراغ رخ زيبا لے کر

درد ليلی بھی وہی ، قيس کا پہلو بھی وہی
نجد کے دشت و جبل ميں رم آہو بھی وہی
عشق کا دل بھی وہی ، حسن کا جادو بھی وہی
امت احمد مرسل بھی وہی ، تو بھی وہی

پھر يہ آزردگی غير سبب کيا معنی
اپنے شيداؤں پہ يہ چشم غضب کيا معنی

تجھ کو چھوڑا کہ رسول عربی کو چھوڑا؟
بت گری پيشہ کيا ، بت شکنی کو چھوڑا؟
عشق کو ، عشق کی آشفتہ سری کو چھوڑا؟
رسم سلمان و اويس قرنی کو چھوڑا؟

آگ تکبير کی سينوں ميں دبی رکھتے ہيں
زندگی مثل بلال حبشی رکھتے ہيں

عشق کی خير وہ پہلی سی ادا بھی نہ سہی
جادہ پيمائی تسليم و رضا بھی نہ سہی
مضطرب دل صفت قبلہ نما بھی نہ سہی
اور پابندی آئين وفا بھی نہ سہی

کبھي ہم سے ، کبھی غيروں سے شناسائی ہے
بات کہنے کی نہيں ، تو بھی تو ہرجائی ہے

سر فاراں پہ کيا دين کو کامل تو نے
اک اشارے ميں ہزاروں کے ليے دل تو نے
آتش اندوز کيا عشق کا حاصل تو نے
پھونک دی گرمی رخسار سے محفل تو نے

آج کيوں سينے ہمارے شرر آباد نہيں
ہم وہی سوختہ ساماں ہيں ، تجھے ياد نہيں؟

وادی نجد ميں وہ شور سلاسل نہ رہا
قيس ديوانہ نظارہ محمل نہ رہا
حوصلے وہ نہ رہے ، ہم نہ رہے ، دل نہ رہا
گھر يہ اجڑا ہے کہ تو رونق محفل نہ رہا

اے خوش آں روز کہ آئی و بصد ناز آئی
بے حجابانہ سوئے محفل ما باز آئی

بادہ کش غير ہيں گلشن ميں لب جو بيٹھے
سنتے ہيں جام بکف نغمہ کو کو بيٹھے
دور ہنگامہ گلزار سے يک سو بيٹھے
تيرے ديوانے بھی ہيں منتظر 'ھو' بيٹھے

اپنے پروانوں کو پھر ذوق خود افروزی دے
برق ديرينہ کو فرمان جگر سوزی دے

قوم آوارہ عناں تاب ہے پھر سوئے حجاز
لے اڑا بلبل بے پر کو مذاق پرواز
مضطرب باغ کے ہر غنچے ميں ہے بوئے نياز
تو ذرا چھيڑ تو دے، تشنۂ مضراب ہے ساز

نغمے بے تاب ہيں تاروں سے نکلنے کے ليے
طور مضطر ہے اسی آگ ميں جلنے کے ليے

مشکليں امت مرحوم کی آساں کر دے
مور بے مايہ کو ہمدوش سليماں کر دے
جنس ناياب محبت کو پھر ارزاں کر دے
ہند کے دير نشينوں کو مسلماں کر دے

جوئے خوں می چکد از حسرت ديرينۂ ما
می تپد نالہ بہ نشتر کدہ سينہ ما

بوئے گل لے گئی بيرون چمن راز چمن
کيا قيامت ہے کہ خود پھول ہيں غماز چمن
عہد گل ختم ہوا ٹوٹ گيا ساز چمن
اڑ گئے ڈاليوں سے زمزمہ پرواز چمن

ايک بلبل ہے کہ ہے محو ترنم اب تک
اس کے سينے ميں ہے نغموں کا تلاطم اب تک

قمرياں شاخ صنوبر سے گريزاں بھی ہوئيں
پےتاں پھول کی جھڑ جھڑ کے پريشاں بھی ہوئيں
وہ پرانی روشيں باغ کی ويراں بھی ہوئيں
ڈالياں پيرہن برگ سے عرياں بھی ہوئيں

قيد موسم سے طبيعت رہی آزاد اس کی
کاش گلشن ميں سمجھتا کوئی فرياد اس کی

لطف مرنے ميں ہے باقی ، نہ مزا جينے ميں
کچھ مزا ہے تو يہی خون جگر پينے ميں
کتنے بے تاب ہيں جوہر مرے آئينے ميں
کس قدر جلوے تڑپتے ہيں مرے سينے ميں

اس گلستاں ميں مگر ديکھنے والے ہی نہيں
داغ جو سينے ميں رکھتے ہوں ، وہ لالے ہی نہيں

چاک اس بلبل تنہا کی نوا سے دل ہوں
جاگنے والے اسی بانگ درا سے دل ہوں
يعنی پھر زندہ نئے عہد وفا سے دل ہوں
پھر اسی بادۂ ديرينہ کے پياسے دل ہوں

عجمی خم ہے تو کيا ، مے تو حجازی ہے مری
نغمہ ہندی ہے تو کيا ، لے تو حجازی ہے مری

 

-----------------

 

Transliteration

 

 

Shikwa

 

Kyun Ziyaan Kaar Banun, Sood Framosh Rahun

Fikr-e-Farda Na Karum, Mahw-e-Ghum-e-Dosh Rahun

 

 

Naale Bulbul Ke Sunoon, Aur Hama Tan Gosh Rahun

Humnawa Main Bhi Koi Gul Hun Ke Khamosh Rahun

 

 

Jurrat Aamoz Miri Taab-e-Sakhun Hai Mujh

Ko Shikwa Allah Se Khakam Badahan Hai Mujh Ko

 

Hai Baja Shewa-e-Tasleem Mein Mashoor Hain Hum

Qissa-e-Dard Sunate Hain Ke Majboor Hain Hum

 

 

Saaz-e-Khamosh Hain, Faryad Se Maamoor Hain Hum

Nala Ata Hai Agar Lab Pe To Maazoor Hain Hum

 

 

Ae Khuda Shikwa-e-Arbab-e-Wafa Bhi Sun Le

Khugar-e-Hamd Se Thora Sa Gila Bhi Sun Le

 

 

Thi To Maujood Azal Se Hi Teri Zaat-e-Qadim

Phool Tha Zaib-e-Chaman, Par Na Preshan Thi Shamim

 

 

Shart Insaaf Hai, Ae Sahib-e-Altaf-e-Amim

Boo-e-Gul Phailti Kis Tarah Jo Hoti Na Nasim

 

 

Hum Ko Jamiat-e-Khatir Ye Preshani Thi

Warna Ummat Tere Mehboob (S.A.W.) Ki Diwani Thi

 

 

Hum Se Pehle Tha Ajab Tere Jahan Ka Manzar

Kahin Masjood The Pathar, Kahin Maabood Shajar

 

 

Khugar-e-Paikar-e-Mahsoos Thi Insaan Ki Nazar

Manta Phir Koi Un-Dekhe Khuda Ko Kyunkar

 

 

Tujh Ko Maalum Hai Leta Tha Koi Naam Tera?

Quwwat-e-Baazoo-e-Muslim Ne Kiya Kaam Tera

 

 

Bas Rahe The Yahin Saljuq Bhi, Toorani Bhi

Ahl-e-Chin Cheen Mein, Iran Mein Sasaani Bhi

 

 

Issi Maamoore Mein Aabad The Yoonani Bhi

Issi Dunya Mein Yahudi Bhi The, Nusraani Bhi

 

 

Par Tere Naam Pe Talwar Uthai Kis Ne

Baat Jo Bigri Huwi Thi, Woh Banaai Kis Ne

 

 

The Hameen Ek Tire Maarka Aaraaon Mein!

Khushkion Mein Kabhi Larte, Kabhi Dariyaon Mein,

 

 

Deen Azaanen Kabhi Europe Ke Kaleesaaon Mein

Kabhi Africa Ke Tapte Huwe Sehraaon Mein.

 

 

Shan Ankhon Mein Na Jachti Thi Jahan Daron Ki

Kalima Parhte The Hum Chaon Mein Talwaron Ki

 

 

Hum Jo Jeete The To Jnagon Ki Musibat Ke Liye

Aur Merte The Tere Naam Ki Azmat Ke Liye

 

 

Thi Na Kuch Taeg-Zani Apni Hukumat Ke Liye

Sar-Bakaf Phirte The Kya Dehar Mein Doulat Ke Liye

 

 

Qaum Apni Jo Zar-o-Maal-e-Jahan Par Marti,

But Faroshi Ke Iwaz But Shikni Kyon Karti?

 

 

Tal Na Sakte The Agar Jang Mein Arh Jate The

Paon Sheron Ke Bhi Maidan Se Ukhar Jate The

 

 

Tujh Se Sarkash Huwa Koi To Bighar Jate The

Taeg Kya Cheez Hai, Hum Toup Se Larh Jate The

 

 

Naqsh Tauheed Ka Har Dil Pe Bithaya Hum Ne

Zer-e-Khanjar Bhi Yeh Paigham Sunaya Hum Ne

 

 

Tu Hi Keh De Ke Ukhara Dar-e-Khyber Kis Ne

Sheher Qaiser Ka Jo Tha, Us Ko Kiya Sar Kis Ne

 

 

Tore Makhluq Khudawandon Ke Paikar Kis Ne

Kaat Kar Rakh Diye Kuffaar Ke Lashkar Kis Ne

 

 

Kis Ne Thanda Kiya Atishkuda-e-Iran Ko?

Kis Ne Phir Zinda Kiya Tazkara-e-Yazdaan Ko?

 

 

Kon Si Qoum Faqat Teri Talabgar Huwi

Aur Tere Liye Zehmat Kash-e-Paikaar Huwi

 

 

Kis Ki Shamsheer Jahangeer, Jahandar Huwi

Kis Ki Takbeer Se Dunya Teri Baidar Huwi

 

 

Kis Ki Haibat Se Sanam Sehme Huwe RehteThe

Munh Ke Bal Gir Ke 'HU WA-ALLAH HU AHAD' Kehte The

 

 

Aa Gaya Ain Laraai Mein Agar Waqt-e-Namaz

Qibla Ru Ho Ke Zameen Bos Huwi Qoum-e-Hijaz

 

 

Ek Hi Saf Mein Khare Ho Gaye Mahmood-o-Ayaz,

No Koi Banda Raha Aur Na Koi Banda Nawaz.

 

 

Banda-o-Sahib-o-Mauhtaaj-o-Ghani Aik Huwe

Teri Sarkar Mein Pohanche To Sabhi Aik Huwe

 

 

Mehfil-e-Kon-o-Makan Mein Sehar-o-Sham Phire

Mai-e-Tauheed Ko Lekar Sifat-e-Jam Phire

 

 

Koh Mein, Dasht Mein Le Kar Tera Pegham Phire

Aur Maaloom Hai Tujh Ko, Kabhi Nakaam Phire !

 

 

Dasht To Dasht Hain, Darya Bhi Na Chhore Hum Ne

Bahr-e-Zulmaat Mein Daura Diye Ghore Hum Ne

 

 

Safah-e-Dahar Se Baatil Ko Mitaya Hum Ne

Nau-e-Insaan Ko Ghulami Se Chhuraya Hum Ne

 

 

Tere Kaabe Ko Jabeenon Se Basaya Hum Ne

Tere Quran Ko Seenon Se Lagaya Hum Ne

 

 

Phir Bhi Hum Se Yeh Gila Hai Ke Wafadar Nahin

Hum Wafadar Nahin, Tu Bhi To Dildar Nahin!

 

 

Ummatain Aur Bhi Hain, In Mein Gunahgar Bhi Hain

Ejz Wale Bhi Hain, Mast-e-Mai-e-Pindar Bhi Hain

 

 

In Mein Kahil Bhi Hain, Ghafil Bhi Hain, Hushyar Bhi Hain

Saikron Hain Ke Tere Naam Se Baizar Bhi Hain

 

 

Rehmatain Hain Teri Aghiyar Ke Kashaanon Par

Barq Girti Hai To Bechare Musalmanon Par

 

 

Boott Sanam Khanon Mein Kehte Hain, Musalman Gye

Hai Khushi In Ko Ke Kaabe Ke Nigehban Gye

 

 

Manzil-e-dehr Se Unthon Ke Hudi Khawan Gye

Apni Baghlon Mein Dabaye Huwe Quran Gye

 

 

Khandah Zan Kufr Hai, Ehsas Tujhe Hai Ke Nahin

Apni Touheed Ka Kuch Paas Tujhe Hai Ke Nahin

 

 

Ye Shikayatt Nahin, Hain Un Ke Khazane Maamur

Nahin Mehfil Mein Jinhain Baat Bhi Karne Ka Shaur

 

 

Qehar To Ye Hai Ke Kafir Ko Milain Hoor-o-Qasoor

Aur Bechare Musalman Ko Faqat Wada-e-Hoor

 

 

Ab Woh Altaf Nahin, Hum Pe Anayat Nahin Baat

Ye Kya Hai Ke Pehli Si Madarat Nahin

 

 

Kyun Musalmanon Mein Hai Doulat-e-Dunya Nayaab

Teri Qudrat To Hai Woh Jis Ki Na Had Hai Na Hisab

 

 

Tu Jo Chahe To Uthe Seena-e-Sehra Se Habab

Rahroo-e-Dasht Ho Seeli Zada Mouj-e-Saraab

Taan-e-Aghiyaar Hai, Ruswai Hai, Nadaari Hai,

Kya tere Nam Pe Marne Ka Iwaz Khwari Hai?

 

 

Bani Aghyar Ki Ab Chahne Wali Dunya

Reh Gyi Apne Liye Aik Khiyali Dunya

 

 

Hum To Rukhsat Huwe, Auron Ne Sanbhali Dunya

Phir Na Kehna Huwi Touheed Se Khali Dunya

 

 

Hum Tau Jeete Hain Ke Duniya Mein Tira Naam Rahe,

Kahin Mumkin Hai Saqi Na Rahe, Jaam Rahe?

 

 

Teri Mehfil Bhi Gai, Chahne Walw Bhi Gaye,

Shab Ki Aahen Bhi Gaien, Subah Ke Nale Bhi Gaye,

 

 

Dil Tujhe Debhi Gaye, Apna Sila Le Bhi Gaye,

Aa Ke Baithe Bhi Na The, Ke Nikaale Bhi Gaye.

 

 

Aae Ushaaq, Gaye Waada-e-Farda Lekar,

Ab Unhen Dhoond Charag-e-Rukh-e-Zeba Lekar!

 

 

Dard-e-Laila Bhi Wohi, Qais Ka Pahlu Bhi Wohi,

Nejd Ke Dasht-o-Jabal Mein Ram-e-Aahoo Bhi Wohi,

 

 

Ishq Ka Dil Bhi Wohi, Husn Ka Jaadoo Bhi Wohi,

Ummat-e-Ahmed-e-Mursil Bhi Wohi, Tu Bhi Wohi,

 

 

Phir Yeh Aazurdagi-e-Ghair-Sabab Kya Maani,

Apne Shaidaaon Pe Yeh Chashm-e-Ghazab Kya Maani?

 

 

Tujh Ko Chora Ke Rasool-e-Arabi (S.A.W.) Ko Chora?

Boutgari Paisha Kiya, Bout Shikani Ko Chora?

 

 

Ishq Ko, Ishq Ki Ashuftah-Sari Ko Chora?

Rasm-e-Salman (R.A.)-o-Awais-e-Qarani (R.A.) Ko Chora?

 

 

Aag Takbeer Ki Seenon Mein Dabi Rakhte Hain

Zindagi Misl-e-Bilal-e-Habshi (R.A.) Rakhte Hain

 

 

Ishq Ki Khair, Who Pehli Si Ada Bhi Na Sahi,

Jaada Paimaai Taslim-o-Raza Bhi Na Sahi,

 

 

Muztarib Dil Sifat-e-Qibla Nama Bhi Na Sahi

Aur Pabandi-e-Aaeen-e-Wafa Bhi Na Sahi

 

 

Kabhi Hum Se, Kabhi Ghairon Se Shanasaai Hai

Baat Kehne Ki Nahin, Tu Bhi To Harjaai Hai

 

 

Sar-e-Faran Pe Kiya Deen Ko Kamil Tu Ne

Ek Ishare Mein Hazaron Ke Liye Dil Tu Ne

 

 

Atish Andoz Kiya Ishq Ka Hasil Tu Ne

Phoonk Di Garmi-e-Rukhsar Se Mehfil Tu Ne

 

 

Aaj Kyun Seene Humare Sharar Abad Nahin

Hum Wohi Sokhta Saman Hain, Tuhe Yaad Nahin?

 

 

Wadi-e-Najd Mein Woh Shor-e-Silasil Na Raha

Qais Diwana-e-Nazara Mehmil Na Raha

 

 

Hosle Woh Na Rahe, Hum Na Rahe, Dil Na Raha

Ghar Ye Ujhra Hai Ke Tu Ronaq-e-Mehfil Na Raha

 

 

Ae Khush Aan Roz Ke Ayi-o-Bsad Naz Ayi

Be-Hijabana Soo'ay Mehfil-e-Ma Baaz Ayi

 

 

Badahkash Gair Hain Gulshan Mein Lab-e-Joo Baithe

Sunte Hain Jaam Bakaf Naghma-e-Kuku Baithe

 

 

Door Hungama-e-Gulzar Se Yak Soo Baithe

Tere Diwane Bhi Hain Muntazir 'Hoo' Baithe

 

 

Apne Parwanon Ko Phir Zauq-e-Khud Afrozi De

Barq-e-Dairina Ko Farman-e-Jigar Sozi De

 

 

Qoum-e-Awara Anaa Taab Hai Phir Soo'ay Hijaz

Le Ura Bulbul-e-Be Par Ko Mazak-e-Parwaz

 

 

Muztarib Bagh Ke Har Ghunche Mein Hai Boo'ay Niaz

Tu Zara Chair To De, Tashna-e-Mizrab Hai Saaz

 

 

Naghme Betaab Hain Taron Se Niklne Ke Liye

Toor Muztar Hai Ussi Aag Mein Jalne Ke Liye

 

 

Mushkalain Ummat-e-Marhoom Ki Asan Kar

De Moor-e-Bemaya Ko Humdosh-e-Suleman Kar De

 

 

Jins-e-Nayaab-e-Mohabbat Ko Phir Arzaan Kar De

Hind Ke Dair Nasheenon Ko Musalman Kar De

 

 

Joo'ay Khoon Mee Chakad Az Hasrat-e-Dairina-e-Maa

Mee Tapd Nala Ba Nashtar Kadah-e-Seena-e-Maa

 

 

Boo-e-Gul Le Gyi Bairun-e-Chaman Raaz-e-Chaman

Kya Qayamat Hai Ke Khud Phool Hain Ghammaz-e-Chaman !

 

 

Ahd-e-Gul Khatam Hua, Tut Gaya Saaz-e-Chaman,

Ur Gaye Dalion Se Zamzama Pardaaz-e-Chaman.

 

 

Ek Bulbul Hai Ke Hai Mahw-e-Tarannum Ab Tak,

Us Ke Seene Mein Hai Naghmon Ka Talatam Ab Tak.

 

 

Qumrian Shaakh-e-Sanober Se Gurezaan Bhi Huin,

Pattian Phool Ki Jhar Jhar Ke Pareshan Bhi Huin;

 

 

Who Purani Ravishen Bagh Ki Weeran Bhi Huin,

Daalian Parahan-e-Barg Se Uriaan Bhi Huin.

 

 

Qaid-e-Mausim Se Tabiat Rahi Aazad Uski,

Kaash Gulshan Mein Samjhta Koi Faryaad Uski.

 

 

Lutf Merne Main Hai Baqi, Na Maza Jeene Mein

Kuch Maza Hai To Yehi Khoon-e-Jigar Peene Mein

 

 

Kitne Betaab Hain Jouhar Mere Aaeene Mein

Kis Qadar Jalwe Tarapte Hain Mere Seene Mein

 

 

Iss Gulistan Mein Magar Dekhne Wale Hi Nahin

Dagh Jo Seene Mein Rakhte Hun, Woh Lale Hi Nahin

 

 

Chaak Iss Bulbul-e-Tanha Ki Nawa Se Dil Hon

Jaagne Wale Issi Bang-e-Dara Se Dil Hon

 

 

Yani Phir Zinda Naye Ehd-e-Wafa Se Dil Hon

Phir Issi Bada-e-Deerina Ke Pyaase Dil Hon

 

 

Ajami Khum Hai To Kya, Mai To Hijazi Hai Meri

Naghma Hindi Hai To Kya, Lai To Hijazi Hai Meri

 

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP