Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

شعور و ہوش و خرد کا معاملہ ہے عجيب


شعور و ہوش و خرد کا معاملہ ہے عجيب
مقام شوق ميں ہيں سب دل و نظر کے رقيب
ميں جانتا ہوں جماعت کا حشر کيا ہو گا
مسائل نظری ميں الجھ گيا ہے خطيب
اگرچہ ميرے نشيمن کا کر رہا ہے طواف
مری نوا ميں نہيں طائر چمن کا نصيب
سنا ہے ميں نے سخن رس ہے ترک عثمانی
سنائے کون اسے اقبال کا يہ شعر غريب
سمجھ رہے ہيں وہ يورپ کو ہم جوار اپنا
ستارے جن کے نشيمن سے ہيں زيادہ قريب

-------------------------


Translitration

Kamal-e-Josh-e-Junoon Mein Raha Main Garam-e-Tawaf
Khuda Ka Shukar, Salamat Raha Haram Ka Ghilaaf

Ye Ittefaq Mubarik Ho Mominon Ke Liye
Ke Yak Zuban Hain Faqeehan-e-Shehar Mere Khilaf

Tarap Raha Hai Falatoon Miyan-e-Ghaib-o-Huzoor
Azal Se Ahl-e-Khirad Ka Maqam Hai Aaraaf

Tere Zameer Pe Jab Tak Na Ho Nazool-e-Kitab
Girah Kusha Hai Na Razi Na Shib-e-Kashaaf

Suroor-o-Souz Mein Na-Paidar Hai, Warna
Mai-e-Farang Ka The Juraa Bhi Nahin Na Saaf

--------------------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP