Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

مری نوا سے ہوئے زندہ عارف و عامی


مری نوا سے ہوئے زندہ عارف و عامی
ديا ہے ميں نے انھيں ذوق آتش آشامی
حرم کے پاس کوئی اعجمی ہے زمزمہ سنج
کہ تار تار ہوئے جامہ ہائے احرامی
حقيقت ابدی ہے مقام شبيری
بدلتے رہتے ہيں انداز کوفی و شامی
مجھے يہ ڈر ہے مقامر ہيں پختہ کار بہت
نہ رنگ لائے کہيں تيرے ہاتھ کی خامی
عجب نہيں کہ مسلماں کو پھر عطا کر ديں
شکوہ سنجر و فقر جنيد و بسطامی
قبائے علم و ہنر لطف خاص ہے ، ورنہ
تری نگاہ ميں تھی ميری ناخوش اندامی

-----------------

Translitration

Meri Nawa Se Huwe Zinda Arif-o-Aami
Diya Hai Main Ne Inhain Zauq-e-Atish Ashami

Haram Ke Pas Koi Ajami Hai Zamzama Sanj
Ke Tar Tar Huwe Jama Haye Ahrami

Haqiqat-e-Abdi Hai Maqam-e-Shabiri
Badalte Rehte Hain Andaz-e-Kufi-o-Shami

Mujhe Ye Darr Hai Muqamir Hain Pukhta Kaar Bohat
Na Rang Laye Kahin Tere Hath Ki Khami

Ajab Nahin Ke Musalman Ko Phir Atta Kar Dain
Shikoh-e-Sanjar-o-Faqr-e-Junaid (R.A.)-o-Bastami (R.A.)

Qaba-e-Ilm-o-Hunar Lutf-e-Khaas Hai, Warna
Teri Nigah Mein Thi Meri Na-Khush Andami

--------------------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP