Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

ہوا نہ زور سے اس کے کوئی گريباں چاک


ہوا نہ زور سے اس کے کوئی گريباں چاک
اگرچہ مغربيوں کا جنوں بھی تھا چالاک
مئے يقيں سے ضمير حيات ہے پرسوز
نصيب مدرسہ يا رب يہ آب آتش ناک
عروج آدم خاکی کے منتظر ہيں تمام
يہ کہکشاں ، يہ ستارے ، يہ نيلگوں افلاک
يہی زمانہ حاضر کی کائنات ہے کيا
دماغ روشن و دل تيرہ و نگہ بے باک
تو بے بصر ہو تو يہ مانع نگاہ بھی ہے
وگرنہ آگ ہے مومن ، جہاں خس و خاشاک
زمانہ عقل کو سمجھا ہوا ہے مشعل راہ
کسے خبر کہ جنوں بھی ہے صاحب ادراک
جہاں تمام ہے ميراث مرد مومن کی
ميرے کلام پہ حجت ہے نکتہ لولاک

-----------------------

Translitration

Huwa Na Zor Se Uss Ke Koi Greban Chaak
Agarcha Maghribiyon  Ka Junoon Bhi Tha Chalaak

Mai-e-Yaqeen Se Zameer-e-Hayat Hai Pursouz
Naseeb-e-Madrasa Ya Rab Ye Aab-e-Atish Naak

Urooj-e-Adam-e-Khaki Ke Mutazir Hain Tamam
Ye Kehkashan, Ye Sitare, Ye Neelgoon aflaak

Yehi Zamana-e-Hazir Ki Kainat Hai Kya
Damagh Roshan-o-Dil Teerah-o-Nigah Bebaak

Tu Be-Basar Ho To Ye Mana’ay Nigah Bhi Hai
Wagarna Aag Hai Momin, Jahan Khs-o-Khashak

Zamana Aqal Ko Samjha Huwa Hai Mashal-e-Rah
Kise Khabar Ke Junoon Bhi Hai Sahib-e-Idraak

oon Jahan Tamam Hai Meeras Mard-e-Momin Ki
Mere Kalam Pe Hujjat Hai Nukta-e-Loulaak

--------------------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP