Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

خودی ہو علم سے محکم تو غيرت جبريل


خودی ہو علم سے محکم تو غيرت جبريل
اگر ہو عشق سے محکم تو صور اسرافيل
عذاب دانش حاضر سے باخبر ہوں ميں
کہ ميں اس آگ ميں ڈالا گيا ہوں مثل خليل
فريب خوردہ منزل ہے کارواں ورنہ
زيادہ راحت منزل سے ہے نشاط رحيل
نظر نہيں تو مرے حلقہ سخن ميں نہ بيٹھ
کہ نکتہ ہائے خودی ہيں مثال تيغ اصيل
مجھے وہ درس فرنگ آج ياد آتے ہيں
کہاں حضور کی لذت ، کہاں حجاب دليل!
اندھيری شب ہے ، جدا اپنے قافلے سے ہے تو
ترے ليے ہے مرا شعلہ نوا ، قنديل
غريب و سادہ و رنگيں ہے داستان حرم
نہايت اس کی حسين ، ابتدا ہے اسمعيل

------------------------


Translitration

Khudi Ho Ilm Se Muhkam To Ghairat-e-Jibreel
Agar Ho Ishq Se Muhkam To Soor-e-Israfeel

Azab-e-Danish-e-Hazir Se Ba-Khabar Hun Mein
Ke Main Iss Aag Mein Dala Gya Hun Misl-e-Khalil (A.S.)

Faraib Khurdah-e-Manzil Hai Karwan Warna
Zaida Rahat-e-Manzil  Se Hai Nishat-e-Raheel

Nazar Nahin To Mere Halqa-e-Sukhan Mein Na Baith
Ke Nukta Haye Khudi Hain Misaal-e-Taeg-e-Aseel

Mujhe Woh Dars-e-Farang Aaj Yad Ate Hain
Kahan Huzoor Ki Lazzat, Kahan Hijab-e-Daleel !

Andheri Shab Hai, Juda Apne Qafle Se Hai Tu
Tere Liye Hai Mera Shaola-e-Nawa, Qandeel

Ghareeb-o-Sada-o-Rangeen Hai Dastan-e-Haram
Nahayat Iss Ki Hussain (R.A.), Ibtada Hai Ismaeel (A.S.)

--------------------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP