Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

تازہ پھر دانش حاضر نے کيا سحر قديم


تازہ پھر دانش حاضر نے کيا سحر قديم
گزر اس عہد ميں ممکن نہيں بے چوب کليم
عقل عيار ہے ، سو بھيس بنا ليتی ہے
عشق بے چارہ نہ ملا ہے نہ زاہد نہ حکيم
عيش منزل ہے غريبان محبت پہ حرام
سب مسافر ہيں ، بظاہر نظر آتے ہيں مقيم
ہے گراں سير غم راحلہ و زاد سے تو
کوہ و دريا سے گزر سکتے ہيں مانند نسيم
مرد درويش کا سرمايہ ہے آزادی و مرگ
ہے کسی اور کی خاطر يہ نصاب زر و سيم

---------------------------


Translitration

Taza Phir Danish-e-Hazir Ne Kiya Sahar-e-Qadeem
Guzar Iss Ehad Mein Mumkin Nahin Be-Chob-e-Kaleem

Aqal Ayyar Hai, Sau Bhais Bana Leti Hai
Ishq Bechara Na Mullah Hai Na Zahid Na Hakeem!

Aysh-e-Manzil Hai Ghareeban-e-Mohabbat Pe Haram
Sub Musafir Hain, Bazahir Nazar Ate Hain Maqeem


Hai Garan Sair Gham-e-Rahla-o-Zaad Se Tu
Koh-o-Darya Se Guzar Sakte Hain Manind-e-Naseem

Mard-e-Darvaish Ka Sarmaya Hai Azadi-o-Marg
Hai Kisi Aur Ki Khatir Ye Nasaab-e-Zer-o-Seem

--------------------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP