Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

فطرت کو خرد کے روبرو کر


فطرت کو خرد کے روبرو کر
تسخير مقام رنگ و بو کر
تو اپنی خودی کو کھو چکا ہے
کھوئی ہوئی شے کی جستجو کر
تاروں کی فضا ہے بيکرانہ
تو بھی يہ مقام آرزو کر
عرياں ہيں ترے چمن کی حوريں
چاک گل و لالہ کو رفو کر
بے ذوق نہيں اگرچہ فطرت
جو اس سے نہ ہو سکا ، وہ تو کر

---------------------


Translitration

Fitrat Ko Khird Ke Ru-Ba-Ru Kar
Taskheer-e-Maqam-e-Rang-o-Bu Kar

Tu Apni Khudi Ko Kho Chukka Hai
Khoyi Huwi Shay Ki Justuju Kar

Taron Ki Faza Hai Baikarana
Tu Bhi Ye Maqam Arzu Kar

Uryan Hain Tere Chaman Ki Hoorain
Chaak-e-Gul-o-Lala Ko Rafu Kar

Be-Zauq Nahin Agarche Fitrat
Jo Uss Se Na Ho Saka, Woh Tu Kar !


--------------------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP